உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کانوینٹ اسکول سےتہاڑجیل تک کی کہانی! Lawrence Bishnoi نےکسطرح منظم بھتہ خوری میں کمایانام؟

    پچھلے کچھ سال میں اس طرح کے خطرات میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔

    پچھلے کچھ سال میں اس طرح کے خطرات میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔

    یہ گینگ لوگ کیسے بھرتی کرتے ہیں؟ دی ٹریبیون کی رپورٹ کے مطابق بشنوئی نے ایک بار ایک پولیس اہلکار کو بتایا کہ سوشل میڈیا ان کی بھرتی کی جگہ ہے۔ بظاہر بے روزگار نوجوان یا برین واش کیے جانے والے نوجوان اس سے مرعوب ہوتے ہیں

    • Share this:
      پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ موس والا (Moose Wala) کے قتل کی تحقیقات کی جا رہی ہیں تاہم اس وحشیانہ قتل نے یقینی طور پر بشنوئی اور اس جیسے لوگوں کے ذریعے مزید بھتہ وصولی تک آسان رسائی پیدا کر دی ہے۔ ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ پچھلے کچھ سال میں اس طرح کے خطرات میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔

      سابق ڈپٹی سی ایم او پی سونی، سابق ایم ایل اے ہرپرتاپ سنگھ اجنالہ اور سابق ایم ایل اے امرپال سنگھ بونی اجنالہ کو بشنوئی کے نام سے دھمکیاں ملنے والے تازہ ترین پیش رفت یہ ہیں۔

      گینگسٹرز کی حرکتیں:

      یہ گینگ لوگ کیسے بھرتی کرتے ہیں؟ دی ٹریبیون کی رپورٹ کے مطابق بشنوئی نے ایک بار ایک پولیس اہلکار کو بتایا کہ سوشل میڈیا ان کی بھرتی کی جگہ ہے۔ بظاہر بے روزگار نوجوان یا برین واش کیے جانے والے نوجوان اس سے مرعوب ہوتے ہیں اور بھرتی ہونے کے لیے کہتے ہیں اور اس طرح بشنوئی سے اپنی وفاداری کا اظہار کرتے ہیں۔

      نیوز 18 نے بشنوئی کے نام کا استعمال کرتے ہوئے بنائے گئے کئی سوشل میڈیا اکاؤنٹس کی جانچ پڑتال کی جو اس کی تعریف کرتے ہیں، اس کی ہتھکڑیوں میں اس کے ویڈیوز دکھاتے ہیں، اس کی مونچھیں مارتے ہیں اور جیل کے اندر سے مبینہ ویڈیو کال کرتے ہیں۔

      پوسٹس پر سینکڑوں لائکس:

      اس سوال پر کہ کیا بشنوئی کا کئی سو مجرموں سے تعلق ہے، دہلی پولیس کے اسپیشل سیل کے سی پی، ایچ جی ایس دھالیوال نے نیوز 18 کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ’’بشنوئی تقریباً 400 مختلف لوگوں کے ساتھ مختلف معاملات میں ملزم ہے۔‘‘ انہوں نے پچھلے 10 سال میں کئی جیلوں میں اپنے شفٹ ہونے کی طرف بھی اشارہ کیا۔

      مزید پڑھیں: Amarnath Yatra 2022: پہلگام میں روٹ پلان مرتب، ڈی سی اننت ناگ نے جاری کئے احکامات

      بشنوئی کے بہت سے سابقہ ​​جاننے والوں کا خیال ہے کہ اس نے اسے دوسرے گروہوں کے ساتھ رابطے بڑھانے میں مدد کی ہے۔ ایک سابق طالب علم رہنما جس نے بشنوئی کے ساتھ ہی جیل میں وقت گزارا۔ انھوں نے کہا کہ وہ ہمیشہ قیدیوں کے ساتھ بہت اچھے تھے چاہے وہ مخالف گروہوں سے ہی کیوں نہ ہوں۔

      مزید پڑھیں: Amarnath Yatra 2022:نجی گاڑیوں سے امرناتھ یاترا جانے والوں کے لئے گائیڈلائنس جاری، راجستھان کے مسافر توجہ دیں

      جرم کا راستہ:

      انھوں نے کانونٹ اسکول سے تعلیم حاصل کی، پھر چندی گڑھ کے ایک اسکول میں اور ڈی اے وی کالج، چندی گڑھ سے تعلیم چھوڑنے والے تھے۔ ایک پولیس کانسٹیبل کے بیٹے بشنوئی نے بہت جلد جرائم کا راستہ اختیار کیا، پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ ان ابتدائی سال میں جو لوگ اسے جانتے تھے ان کا کہنا ہے کہ وہ لڑائیوں (ایک اصول کے لیے سوچا جاتا تھا) اور 2012 میں پولیس مقابلے میں مارے جانے والے گینگسٹر شیرا خبن کی پسند کی ’مقبولیت‘ سے متاثر تھا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: