உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Blocks 8 YouTube: حکومت نے 8 یوٹیوب چینلز کو کیا بلاک! فرقہ وارنہ ہم آہنگی اور امن عامہ کے تحت ہوئی کارروائی

    22 YouTube چینل حکومت نے کئے بلاک، ملک مخالف کنٹنٹ کو لےکرپاکستانی چینل پربھی پابندی

    22 YouTube چینل حکومت نے کئے بلاک، ملک مخالف کنٹنٹ کو لےکرپاکستانی چینل پربھی پابندی

    وزارت کی طرف سے بلاک کیے گئے تمام یوٹیوب چینلز اپنی ویڈیوز پر اشتہارات دکھا رہے تھے۔ اس کارروائی کے ساتھ دسمبر 2021 سے وزارت نے 102 یوٹیوب پر مبنی نیوز چینلز اور کئی دوسرے سوشل میڈیا اکاؤنٹس کو بلاک کرنے کی ہدایات جاری کی ہیں۔

    • Share this:
      وزارت اطلاعات و نشریات (Ministry of Information & Broadcasting) نے آئی ٹی رولز 2021 کے تحت اپنے ہنگامی اختیارات کا استعمال کرتے ہوئے آٹھ یوٹیوب پر مبنی نیوز چینلز، ایک فیس بک اکاؤنٹ اور دو فیس بک پوسٹس کو بلاک کرنے کے احکامات جاری کیے ہیں۔ بلاک شدہ یوٹیوب چینلز کافی مقبول تھے اور ان کے مجموعی ویورز کی تعداد 114 کروڑ سے زیادہ تھی اور اسے 85 لاکھ سے زیادہ صارفین نے سبسکرائب کیے تھے۔

      حکومت نے کہا کہ آئی ٹی رولز 2021 (IT Rules) کے تحت 7 ہندوستان اور 1 پاکستان کے یوٹیوب نیوز چینلز کو بلاک کر دیا گیا ہے۔ حکومت کے ایک بیان کے مطابق ان میں سے کچھ یوٹیوب چینلز کے ذریعے شائع کیے گئے مواد کا مقصد ہندوستان میں مذہبی برادریوں کے درمیان نفرت پھیلانا تھا۔ بلاک کیے گئے یوٹیوب چینلز کی مختلف ویڈیوز میں جھوٹے دعوے کیے گئے۔

      وزارت آئی ٹی نے کہا کہ ان میں جعلی خبریں پیش کی جاتی ہیں جیسے کہ حکومت ہند نے مذہبی ڈھانچے کو مسمار کرنے کا حکم دیا ہے۔ حکومت ہند نے مذہبی تہواروں کو منانے، ہندوستان میں مذہبی جنگ کے اعلان وغیرہ پر پابندی لگا دی ہے۔ اس طرح کے مواد میں فرقہ وارانہ انتشار پیدا کرنے اور ملک میں امن عامہ کو خراب کرنے کی کوشش کی جاتی ہے۔

      اس میں کہا گیا ہے کہ یو ٹیوب چینلز کو مختلف موضوعات پر جعلی خبریں پوسٹ کرنے کے لیے بھی استعمال کیا گیا جیسے کہ ہندوستانی مسلح افواج، جموں و کشمیر وغیرہ۔ قومی سلامتی اور ہندوستان کے غیر ملکی ریاستوں کے ساتھ دوستانہ تعلقات کے نقطہ نظر سے مواد کو مکمل طور پر غلط اور حساس دیکھا گیا ہے۔

      اس کے مطابق مواد کو انفارمیشن ٹیکنالوجی ایکٹ 2000 کے سیکشن 69اے کے دائرہ کار میں شامل کیا گیا۔ حکومت نے کہا کہ مسدود ہندوستانی یوٹیوب چینلز کو دیکھا گیا کہ وہ جعلی اور سنسنی خیز تھمب نیلز، نیوز اینکرز کی تصاویر اور کچھ ٹی وی نیوز چینلز کے لوگو کا استعمال کرتے ہوئے ناظرین کو یہ یقین دلانے کے لیے گمراہ کر رہے ہیں کہ خبریں مستند ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      وزارت کی طرف سے بلاک کیے گئے تمام یوٹیوب چینلز اپنی ویڈیوز پر اشتہارات دکھا رہے تھے۔ اس کارروائی کے ساتھ دسمبر 2021 سے وزارت نے 102 یوٹیوب پر مبنی نیوز چینلز اور کئی دوسرے سوشل میڈیا اکاؤنٹس کو بلاک کرنے کی ہدایات جاری کی ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: