உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بی جے پی رکن اسمبلی نند کشور گرجر کا گورنر کو خط- ہاتھرس معاملے میں ڈی جی پی، ڈی ایم اور ایس ایس پی پر ہو قتل کا مقدمہ

    بی جے پی رکن اسمبلی نند کشور گرجر کا گورنر کو خط- ہاتھرس معاملے میں ڈی جی پی، ڈی ایم اور ایس ایس پی پر ہو قتل کا مقدمہ

    بی جے پی رکن اسمبلی نند کشور گرجر کا گورنر کو خط- ہاتھرس معاملے میں ڈی جی پی، ڈی ایم اور ایس ایس پی پر ہو قتل کا مقدمہ

    بی جے پی رکن اسمبلی نند کشور گرجر نے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کو یہ خط نہ لکھ کر سیدھے گورنر آنندی بین پٹیل کو لکھا ہے۔ وہیں انہوں نے اس خط کی کاپی وزیر اعظم نریندر مودی، بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈا اور ریاستی صدر سوتنتر دیو سنگھ کو بھیجی ہے۔

    • Share this:
      غازی آباد: اترپردیش کے غازی آباد (Ghaziabad) کی لونی اسمبلی حلقہ سے بی جے پی رکن اسمبلی نند کشور گرجر (Nand Kishore Gurjar) ایک بار پھر سرخیوں میں ہیں۔ ہاتھرس معاملے میں ایک طرف یوگی حکومت چوطرفہ حملہ جھیل رہی ہے، وہیں اب بی جے پی رکن اسمبلی نے بھی محاذ سنبھالتے ہوئے معاملے میں گورنر کو خط لکھ دیا ہے۔ بی جے پی رکن اسمبلی نے اپنے خط میں ہاتھرس میں ہوئے حادثہ کو لے کر یوپی کے ڈی جی پی سمیت ہاتھرس کے ڈی ایم اور ایس ایس پی پر 302 کی دفعہ میں مقدمہ درج کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

      وزیر اعلیٰ نہیں لکھا خط

      بی جے پی رکن اسمبلی نند کشور گرجر نے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کو یہ خط نہ لکھ کر سیدھے گورنر آنندی بین پٹیل کو لکھا ہے۔ وہیں انہوں نے اس خط کی کاپی وزیر اعظم نریندر مودی، بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈا اور ریاستی صدر سوتنتر دیو سنگھ کو بھیجی ہے۔ خط میں رکن اسمبلی نند کشور گرجر نے لکھا ہے کہ ملک کی آزادی کے بعد یہ پہلا حادثہ ہے، جس میں پولیس انتظامیہ نے اعلیٰ افسران کے اشارے پر ایک مبینہ آبروریزی اور نفرت آمیز طریقے سے کئے گئے قتل معاملے میں اہل خانہ کو اعتماد میں لئے بغیر ان کے بنیادی حقوق کو چھینتے ہوئے انہیں ارتھی کو کندھا دینے اور مکھیہ اگنی تک نہیں دینے دیا۔

      بی جے پی رکن اسمبلی نند کشور گرجر نے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کو یہ خط نہ لکھ کر سیدھے گورنر آنندی بین پٹیل کو لکھا ہے۔
      بی جے پی رکن اسمبلی نند کشور گرجر نے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کو یہ خط نہ لکھ کر سیدھے گورنر آنندی بین پٹیل کو لکھا ہے۔


      افسران اور لیڈروں کا چل رہا ہے سنڈیکیٹ: رکن اسمبلی

      رکن اسمبلی نے کہا کہ کورونا کے دور میں بی جے پی کارکنان کے ذریعہ خدمت کرنے کے جذبے کی مثال پیش کرنا عوام کے دل میں جو مقام بنایا تھا، اسے لکھنو انتظامیہ میں بیٹھے اعلیٰ افسران اور سیاسی جماعتوں کے لیڈروں کے سنڈیکیٹ نے گہری سازش کرکے نقصان پہنچا کر اس کی شبیہ خراب کرنے کی گھناونی کوشش کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سنڈیکیٹ کے ذریعہ بی جے پی کی دلت مخالف شبیہ بنانے کی کوشش بھی اس معاملے کی تہہ میں ہے۔ بلرام پور وغیرہ مقامات میں پیش آئے سانحہ میں بھی افسران کی بے حسی اور غیر ذمہ دارانہ رویہ بھی اس سازش کا حصہ ہے۔ رکن اسمبلی نے لکھا ہے کہ اس سنڈیکیٹ کے موضوع پر انہوں نے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ کو ثبوت کے ساتھ خط لکھ کر روبرو بھی کرایا تھا، لیکن بجائے ان افسران پر کارروائی کرنے کے انہیں ترقی (پروموشن) دی گئی، جس سے ان کا حوصلہ بڑھتا گیا اور ہاتھرس سانحہ سامنے ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: