உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Gyanvapi mosque: گیانواپی مسجد کا دوسرے دن بھی سروے جاری، سیکورٹی بڑھا دی گئی

    گیان واپی مسجد۔ (فائل فوٹو)

    گیان واپی مسجد۔ (فائل فوٹو)

    تاہم ضلعی عدالت نے درخواست کو مسترد کر دیا اور 17 مئی تک کام کو مکمل کرنے کا حکم دیا۔ سول جج (سینئر ڈویژن) روی کمار دیواکر نے بھی سروے کے لیے مسجد کمپلیکس میں دو بند تہہ خانوں کو کھولنے پر اعتراضات کو مسترد کر دیا۔

    • Share this:
      گیانواپی مسجد کمپلیکس (Gyanvapi mosque complex) کے ارد گرد سیکورٹی بڑھا دی گئی ہے کیونکہ عدالت کی طرف سے مقرر کردہ کمیٹی نے مسلسل دوسرے دن سروے شروع کیا ہے۔ وکلاء اور ہندوؤں کے نمائندے بھی جائے وقوعہ پر پہنچ گئے ہیں۔

      وکلاء ہری شنکر جین اور وشنو جین کے مطابق آج مسجد کے ان علاقوں میں سروے کیا جائے گا جو ان کے مطابق مندر کا حصہ ہوا کرتے تھے۔ گیانواپی کمپلیکس کی مغربی دیوار کا سروے کیا جائے گا۔ اس کے بارے میں مبینہ طور پر دعویٰ کیا جاتا ہے کہ یہاں آج بھی ہندو مندر کے انہدام کی باقیات نظر آتی ہیں۔ اس کے لیے آج چوتھا تالا کھولا گیا جبکہ پہلے تین کمروں کو گزشتہ روز سروے کے دوران کھولا گیا۔

      اس دوران کورٹ کمشنر وشال سنگھ (Court Commissioner Vishal Singh) نے کہا کہ سروے پرامن طریقے سے کیا جا رہا ہے۔ سروے آج ختم ہونے کا امکان ہے۔ ہندو فریق کی نمائندگی کرنے والے وکلا کے مطابق گزشتہ روز ہونے والے سروے میں کئی ایسی باتیں سامنے آئیں جن کے بارے میں آج تک لوگوں کو معلوم نہیں ہے۔

      پچھلے ہفتے سروے مسجد کمیٹی کے اعتراضات کے درمیان رک گیا تھا، جس میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ عدالت کے ذریعہ مقرر کردہ ایڈوکیٹ کمشنر کے پاس احاطے کے اندر فلم بنانے کا اختیار نہیں ہے۔ کمیٹی نے ان پر تعصب کا الزام لگایا اور ان کی تبدیلی کی درخواست دائر کی۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Green Hydrogen Mission:مستقبل کے ایندھن ہائیڈروجن سے ہندوستان کی ہوگی اونچی پرواز

      تاہم ضلعی عدالت نے درخواست کو مسترد کر دیا اور 17 مئی تک کام کو مکمل کرنے کا حکم دیا۔ سول جج (سینئر ڈویژن) روی کمار دیواکر نے بھی سروے کے لیے مسجد کمپلیکس میں دو بند تہہ خانوں کو کھولنے پر اعتراضات کو مسترد کر دیا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      شیوسینا کی ریلی میں Uddhav Thackerayکی للکار،کہا-بی جے پی داود کو بھی لڑواسکتی ہے الیکشن

      گیانواپی مسجد مشہور کاشی وشواناتھ مندر کے قریب واقع ہے۔ مقامی عدالت دہلی میں قائم خواتین کے ایک گروپ کی طرف سے اس کی بیرونی دیواروں پر ہندو دیوتاؤں کے بتوں کے سامنے روزانہ پوجا ادا کرنے کی اجازت مانگنے کی درخواست کی سماعت کر رہی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: