ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ہاتھرس معاملے پر اروند کیجریوال کا بڑا بیان: جمہوریت میں حکومت سیوک ہوتی ہے مالک نہیں: ویڈیو

ہاتھرس معاملے پر دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجری وال نے اترپردیش حکومت کے طرز عمل کی نکتہ چینی کی ہے۔انھوں نے کہا کہ ہم جمہوری ملک میں رہ رہے ہیں جہاں عوام سب کچھ ہوتے ہیں۔ارباب اقتدار کو یہ قطعی نہیں بھولنا چاہیے کہ وہ سیوک ہیں مالک نہیں۔

  • Share this:
ہاتھرس معاملے پر اروند کیجریوال کا بڑا بیان: جمہوریت میں حکومت سیوک ہوتی ہے مالک نہیں: ویڈیو
ہاتھرس کیس میں اروند کیجریوال نے اترپردیش حکومت کے طرز عمل کی نکتہ چینی کی ہے۔

ہاتھرس معاملے پر دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے اترپردیش حکومت کے طرز عمل کی نکتہ چینی کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم جمہوری ملک میں رہ رہے ہیں جہاں عوام سب کچھ ہوتے ہیں۔ ارباب اقتدار کو یہ قطعی نہیں بھولنا چاہیے کہ وہ سیوک ہیں مالک نہیں۔ کیجریوال نے کہا ہاتھرس متاثرہ کے اہل خانہ سے حکومت کا برتاؤ غلط ہے۔ غور طلب ہے کہ پولیس نے ہاتھرس گینگ ریپ متاثرہ کے گاؤں کو ایک کیمپ بنا دیا ہے۔ ضلع میں دفعہ 144 کے نفاذ کے ساتھ ، متاثرہ کے گاؤں میں ناکہ بندی ہے۔ شناخت کارڈ دکھانے کے بعد ہی گاؤں کے لوگوں کو انٹری دی جارہی ہے۔ انتظامیہ کے اس طرز عمل سے لوگ ناراض ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ ہمارے ہی گاؤں میں ہمارے ساتھ مجرموں جیسا سلوک کیا جارہا ہے۔

ہاتھرس معاملے کی جانچ میں ایس آئی ٹی مصروف ہے۔ ذرائع کے مطابق ابتدائی جانچ میں افسروں کی لاپرواہی کی بات سامنے آئی ہے۔ اس معاملے کی ایس آئی ٹی، ریپ اورآنر کلنگ کے اینگل سے بھی جانچ کرے گی۔ ٹیم اس سلسلے میں گاؤں والوں سے بھی پوچھ تاچھ کرسکتی ہے۔ اس بیچ ہاتھرس میں سکیورٹی کے سخت بندوبست کیے گئے ہیں۔گاؤں کے ہرطراستے پر پولیس بھاری تعداد میں تعینات ہے۔ حتیٰ کہ میڈیا کو بھی اندر جانے اور متاثرین سے ملنے سے روک دیا گیا ہے۔


قابل غور ہے کہ یوپی کے ہاتھرس کیس کو لیکر سیاست اور ہنگامہ جاری ہے۔ ہاتھرس کے ڈی ایم کا ایک ویڈیو سامنے آیا ہے۔ جس میں وہ متاثرہ کے کنبے کو دھمکی دیتے ہوئے نظر آرہے ہیں۔ کئی اپوزیشن پارٹیاں معاملے میں یوپی کی حکومت اور یوپی پولیس کے رویے کو لیکر سوال اٹھا رہی ہیں۔ اسی درمیان متاثرہ کے کنبے سے ملنے جارہے ترنمول کے کچھ اراکین پارلیمنٹ کو یوپی پولیس کے ذریعے روک دیا گیا۔ پارٹی نے بتایا ہے کہ یہ ارکان پارلیمنٹ الگ۔الگ سفر کر رہے تھے۔



ہاتھرس جانے سے پولیس کے روکے جانے اور دھکا۔مکی کے بعد ٹی ایم سی رکن پارلیمنٹ ڈیرک اوبرائن کی سربراہی میں باقی ممبران اسمبلی دھرنے پر بیٹھے ہیں۔ اس درمیان پولیس نے گاؤں کے باہر پہرے کو اور سخت کر دیا ہے۔ متاثرہ کے گاؤں میں اپوزیشن لیڈران سمیت میڈیا کیلئے نو انٹری ہے۔ ہاتھرس کیس کے سلسلے میں مرکزی وزیر رام داس اٹھاولے 3 اکتوبر کو وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ سے ملاقات کریں گے۔ اس دوران وہ اس کیس کو فاسٹ ٹریک عدالت میں چلانے کا مطالبہ کریں گے۔ کانگریس کی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا بھی متاثرہ کنبے کے لئے بالمیکی مندر میں دعائیہ میٹنگ کریں گی
Published by: sana Naeem
First published: Oct 02, 2020 03:12 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading