உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آئینی حقوق کی پامالیوں کے خلاف ہائی کورٹ کے وکلاء کا سڑکوں پر احتجاج

    
 اب اس معاملے کو سماج وادی پارٹی نے یو پی میں اسمبلی چناؤ میں اپنا اہم سیاسی ایشو بنانے کا فیصلہ کیا ہے ۔

    اب اس معاملے کو سماج وادی پارٹی نے یو پی میں اسمبلی چناؤ میں اپنا اہم سیاسی ایشو بنانے کا فیصلہ کیا ہے ۔

    اب اس معاملے کو سماج وادی پارٹی نے یو پی میں اسمبلی چناؤ میں اپنا اہم سیاسی ایشو بنانے کا فیصلہ کیا ہے ۔

    • Share this:
    الہ آباد: ملک کے آئین میں شہریوں اور اقلیتی فرقوں کے بنیادی حقوق کے تحفظ کی گارنٹی دی گئی ہے ۔ لیکن گذشتہ چند برسوں کے دوران ملک کی مخلتف ریاستوں میں آئینی حقوق کی خلاف ورزیوں کے سنگین معاملوں نے ایک بڑے طبقے میں تشویش کی لہر پیدا کر دی ہے ۔ اب اس معاملے کو سماج وادی پارٹی نے یو پی میں اسمبلی چناؤ میں اپنا اہم سیاسی ایشو بنانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ سماج وادی پارٹی سے تعلق رکھنے والی وکلاء کی شاخ نے آئینی حقوق کے تعلق سے عوامی بیداری مہم شروع کر دی ہے ۔ آئین میں دیئے گئے جمہوری حقوق کی پامالی کے خلاف الہ آباد میں وکلا نے ، آئین بچاؤ یاترا ، شروع کی ہے ۔ سماج وادی پارٹی سے وابستہ وکلا نے ریاست گیر پیمانے پر آئین بچاؤ مہم کی شروعات کی ہے ۔

    الہ آباد ہائی کورٹ کے سامنے سے شروع ہونے والی آئین بچاؤ یاترا میں بڑی تعداد میں وکلاء نے شرکت کی ۔ یاتراشروع کرنے سے پہلے سماج وادی پارٹی کارکنان نے ایک احتجاجی جلسے کا بھی انعقاد کیا۔ جلسے میں مرکزی اور ریاستی حکومتوں پر الزام لگایا گیا کہ ملک کے دستور میں دئیے گئے جمہوری حقوق کی کھلے عام دھجیاں اڑائی جا رہی ہیں ۔

    سپا کارکنان کا کہنا تھا کہ سماج وادی پارٹی ریاست بھر میں آئین بچاؤ مہم جاری رکھے ہوئے ہے۔ آئین بچاؤ مہم کے انچارج یوگیش چندر یادؤ کا کہنا ہے کہ بی جے پی کے دور حکومت میں آئینی حقوق کی خلاف ورزیوں میں اضافہ ہوا ہے ۔

    یوگیش یادؤ کا کہنا ہے کہ پورے ملک میں جمہوری آوازوں کو دبانے کی کوشش کی جا رہی ہے ۔ ان کا کہنا ہے کہ ملک کے آئین میں اقلیتوں اور کمزروں کوخصوصی تحفظ دیا گیا ہے ۔لیکن جس طرح سے اقلیتوں اور دلتوں کے خلاف پر تشدد واقعات بڑھ رہے ہیں اس سے جمہوری قدروں کو سخت خطرہ لاحق ہوا ہے ۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: