ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

برہان وانی کی موت کے بعد مزید حملوں کا خدشہ ، راجناتھ نے بلائی اعلی سطحی میٹنگ ، اسپتالوں میں ایمرجنسی کا اعلان

سری نگر : حزب المجاہدین (ایچ ایم) کے اعلیٰ ترین کمانڈر برہان وانی کی سیکورٹی فورسز کے ساتھ جھرپ میں مارے جانے کے بعد وادی کشمیر میں امن وامان کی صورتحال بدستور انتہائی کشیدہ بنی ہوئی ہے۔

  • Agencies
  • Last Updated: Jul 10, 2016 02:44 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
برہان وانی کی موت کے بعد مزید حملوں کا خدشہ ، راجناتھ نے بلائی اعلی سطحی میٹنگ ، اسپتالوں میں ایمرجنسی کا اعلان
سری نگر : حزب المجاہدین (ایچ ایم) کے اعلیٰ ترین کمانڈر برہان وانی کی سیکورٹی فورسز کے ساتھ جھرپ میں مارے جانے کے بعد وادی کشمیر میں امن وامان کی صورتحال بدستور انتہائی کشیدہ بنی ہوئی ہے۔

سری نگر: حزب المجاہدین (ایچ ایم) کے اعلیٰ ترین کمانڈر برہان وانی کی سیکورٹی فورسز کے ساتھ جھرپ میں مارے جانے کے بعد وادی کشمیر میں امن وامان کی صورتحال بدستور انتہائی کشیدہ بنی ہوئی ہے۔پرتشدد جھڑپوں کے دوران سیکورٹی فورسز کی کاروائی میں مرنے والے نوجوانوں کی تعداد بڑھ کر 16 ہوگئی ہے۔ یہ سبھی ہلاکتیں جنوبی کشمیر میں ہوئی ہیں۔ ذرائع نے بتایا کہ جھڑپوں میں 16 ہلاکتوں کے علاوہ تاحال 200 سے زائد عام شہری و سیکورٹی فورس اور ریاستی پولیس کے اہلکار زخمی ہوگئے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ قریب 50 شہریوں کو گولیوں کے زخم آئے ہیں جبکہ قریب ایک درجن افراد کو پیلٹ گن کے زخم لگے ہیں۔ ایک رپورٹ کے مطابق کشمیرکے اسپتالوں میں میڈیکل ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے اور طبی عملے کی چھٹیاں منسوخ کی گئی ہیں۔ اس دوران ریاستی انتظامیہ نے وادی بھر میں کرفیو نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ ڈویژنل کمشنر کشمیر ڈاکٹر اصغر سامون نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ وادی میں امن وامان کی صورتحال کو بنانے رکھنے کے لئے کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔ انہوں نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ امن وامان کی بحالی میں تعاون کرے۔

جنوبی کشمیر سے موصولہ ایک رپورٹ کے مطابق سیکورٹی فورسز نے اتوار کی صبح ضلع پلوامہ کے مران چوک میں مشتعل مظاہرین پر مبینہ طور پر براہ راست فائرنگ کی جس کے نتیجے میں عرفان احمد ملک نامی ایک نوجوان شدید زخمی ہوگیا۔ انہوں نے بتایا کہ اگرچہ عرفان کو فوری طور پر نذدیکی اسپتال منتقل کیا گیا تاہم وہ جانبر نہ ہوسکا۔

دریں اثنا وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے جموں و کشمیر میں مظاہروں کے دوران لاء اینڈ آرڈر کے حالات کا جائزہ لینے کے لئے ایک اعلی سطحیمیٹنگ بلائی ۔ داخلہ سکریٹری، جوائنٹ سکریٹری (کشمیر ڈویژن)، آئی بی چیف اور وزارت داخلہ کے سینئر افسر ان راج ناتھ سنگھ کی رہائش گاہ پر منعقدہ اس میٹنگ میں شریک ہوئے ۔ ادھر آج راج ناتھ سنگھ کی سالگرہ بھی ہے ، لیکن بتایا جاتا ہے کہ کشمیر میں اموات کے بعد انہوں نے اسے نہیں منانے کا فیصلہ کیا ہے۔

اسی درمیان ذرائع کے مطابق یہ خبر بھی آ رہی ہے کہ لشکر نے برہان کی موت کا بدلہ لینے کے لئے پلوامہ میں چھپے اپنے دہشت گرد کمانڈر کو سری نگر کے ایس او جی کیمپ پر حملہ کی ہدایت دی ہے ۔ جبکہ پنجاب پولیس کے انٹیلی جنس محکمہ نے خط لکھ کر سرحد سے متصل علاقوں میں دہشت گردوں کی دراندازی کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔

ادھر ڈویژنل کمشنر کشمیر ڈاکٹر اصغر سامون نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ وادی میں امن وامان کی صورتحال کو بنانے رکھنے کے لئے کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔ انہوں نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ امن وامان کی بحالی میں تعاون کرے۔ جنوبی کشمیر سے موصولہ ایک رپورٹ کے مطابق سیکورٹی فورسز نے اتوار کی صبح ضلع پلوامہ کے مران چوک میں مشتعل مظاہرین پر مبینہ طور پر براہ راست فائرنگ کی جس کے نتیجے میں عرفان احمد ملک نامی ایک نوجوان شدید زخمی ہوگیا۔ انہوں نے بتایا کہ اگرچہ عرفان کو فوری طور پر نذدیکی اسپتال منتقل کیا گیا تاہم وہ جانبر نہ ہوسکا۔
رپورٹوں کے مطابق دو شدید زخمی نوجوان ہفتہ اور اتوار کی درمیانی رات اسپتالوں میں زخموں کی تاب نہ لاکر دم توڑ بیٹھے۔ ایک مقامی انگریزی روزنامے نے مہلوکین کی شناخت ساقت منظور میر ساکنہ کھنڈرو اچھہ بل، خورشید احمد ساکنہ ہاروٹ کولگام، سفیر احمد بٹ ساکنہ چرارگام، عادل بشیر ساکنہ ڈورو، عبدالحمید موچی ساکنہ ارونی، دانش ایوب شاہ ساکنہ اچھہ بل، جہانگیر احمد گنائی ساکنہ حسن پورہ بج بہاڑہ، آزاد حسین ساکنہ شوپیان، اعجاز ٹھوکر ساکنہ سل گام اننت ناگ، محمد اشرف ڈار ساکنہ ہل پورہ کوکر ناگ، شوکت احمد میر ساکنہ حسن پورہ بج بہاڑہ، حسیب احمد گنائی ساکنہ بٹہ پورہ کھنہ بل اور زبیر احمد ساکنہ کھنہ مو کی حیثیت سے ظاہر کی ہے۔
حریت کانفرنس کے دونوں دھڑوں کے سربراہان سید علی گیلانی و میرواعظ مولوی عمر فاروق اور جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ (جے کے ایل ایف) کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے برہان وانی کی ہلاکت کے خلاف احتجاجی مظاہروں میں سیکورٹی فورسز کی فائرنگ سے عام شہریوں کی ہلاکت کے خلاف ہڑتال میں 11 جولائی تک توسیع کا اعلان کر رکھا ہے۔
وادی میں جہاں بیشتر علیحدگی لیڈران بشمول مسٹر گیلانی اور میرواعظ کو نظر بند جبکہ یاسین ملک کو پولیس تھانہ کوٹھی باغ میں مقید رکھا گیا ہے۔ سیکورٹی وجوہات کی بناء پر 300 کلو میٹر طویل سری نگر جموں قومی شاہراہ اور تاریخی مغل روڑ کو گاڑیوں کی آمدورفت کے لئے بند کردیا گیا ہے۔
سرکاری ذرائع نے یو این آئی کو بتایا کہ شاہراہ پر کل مختلف مقامات خاص طور پر جنوبی کشمیر اور بانہال میں پر تشدد احتجاجی مظاہروں کے بعد آج اس شاہراہ پر گاڑیوں کی آمدورفت معطل کردی گئی۔
انہوں نے بتایا کہ کسی بھی مسافر یا مال بردار گاڑی کو آج سری نگر سے جموں یا جموں سے سری نگر کی طرف جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔ جنوبی کشمیر کے اضلاع میں کل برہان وانی کی ہلاکت کے خلاف برے پیمانے پر احتجاجی مظاہرے بھڑک اٹھے تھے۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ صورتحال میں بہتری کے ساتھ ہی شاہراہ پر گاڑیوں کی آمدورفت بحال کردی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ جنوبی کشمیر کے ضلع شوپیان کو جموں خطہ کے راجوری اور پونچھ اضلاع سے جوڑنے والے تاریخی مغل روڑ کو بھی گاڑیوں کی آمد ورفت کے لئے بند کردیا گیا ہے۔
کشمیر کی کشیدہ صورتحال کی وجہ سے مال بردار گاڑیوں کی ایک بڑی تعداد سری نگر جموں قومی شاہراہ پر درماندہ ہوکر رہ گئی ہیں۔ وادی کشمیر اور جموں خطے میں اتوار کو دوسرے روز بھی موبائیل انٹرنیٹ خدمات معطل رہیں۔ وادی میں یہ خدمات 8 اور 9 جولائی کی درمیانی رات جبکہ جموں میں 9 جولائی کی شام کو معطل کردی گئیں۔ موبائیل انٹرنیٹ خدمات فراہم کرنے والی ایک کمپنی کے عہدیدار نے بتایا کہ انہیں سیکورٹی انتظامیہ کی جانب سے موبائیل انٹرنیٹ خدمات تاحکم ثانی بند رکھنے کی ہدایات ملی ہیں۔ تاہم انہوں نے بتایا کہ انہیں خدمات بند رکھنے کی وجہ نہیں بتائی گئی ہے۔
سرکاری ذرائع نے بتایا کہ یہ اقدام کسی بھی طرح کی افواہوں کو روکنے کی غرض سے اٹھایا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ صورتحال میں بہتری آنے کے ساتھ ہی انٹرنیٹ خدمات بحال کردی جائیں گی۔ ڈویژنل کمشنر جموں ڈاکٹر پون کوتوال نے یو این آئی کو بتایا ’وادی کشمیر کی کشیدہ صورتحال کے پیش نظر جموں ضلع میں موبائیل انٹرنیٹ خدمات عارضی طور پر معطل رکھنے کا فیصلہ لیا گیا ہے۔ یہ ایک احتیاطی قدم ہے‘۔
ڈاکٹر کوتوال نے کہا کہ سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر کسی بھی طرح کی افواہ بازی کو روکنے کے لئے انٹرنیٹ خدمات کو معطل کردیا گیا ہے۔ دوسری جانب شمالی کشمیر کے بارہمولہ اور جموں خطہ کے بانہال کے درمیان چلنے والی ریل سروس بھی آج دوسرے دن بھی معطل رہی۔ ریلوے ایک افسر نے بتایا کہ وادی میں ریل سروس سیکورٹی وجوہات کی بناء پر آج دوسرے دن بھی معطل رہے گی۔ انہوں نے بتایا کہ شمالی کشمیر کے بارہمولہ اور جموں خطہ کے بانہال کے درمیان چلنے والی ریل گاڑیاں آج بھی پٹری پر نہیں دوڑیں گی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ ماضی میں ہڑتالوں کے دوران ریلوے املاک کو بڑے پیمانے پر نقصان پہنچایا گیا، اور اس کو مد نظر رکھتے ہوئے ریل سروس کو معطل رکھنے کا فیصلہ لیا گیا ہے۔
مذکورہ افسر نے بتایا کہ ریل سروس کو بحال کرنے کا دارومداد صورتحال میں بہتری پر ہے۔ وادی میں پیدا شدہ کشیدہ صورتحال کے مدنظر اتوار کو لئے جانے والے پبلک سروس کمیشن (پی ایس سی) اور قومی اہلیتی داخلہ امتحان (نیٹ) امتحانات ملتوی کردیے گئے ہیں۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ قومی اہلیتی داخلہ امتحان جو آج ملک بھر میں لیا جارہا ہے، وادی کی موجودہ صورتحال کے پیش نظر یہاں ملتوی کیا گیا ہے۔ تاہم جموں میں یہ امتحان شیڈول کے مطابق لیا جائے گا۔
پی ایس سی نے بھی محکمہ ہیلتھ میں بھرتی کے لئے آج لیا جانے والا تحریری امتحان ملتوی کردیا ہے۔ اس کے علاوہ کشمیر یونیورسٹی نے 11 جولائی کو لئے جانے والے تمام امتحانات بشمول بی ایڈ امتحانات ملتوی کردیے ہیں۔ یونیورسٹی کے ایک ترجمان نے بتایا کہ نئی تاریخوں کا اعلان بعد میں کیا جائے گا۔
برہان اور اُس کے دو دیگر ساتھیوں کو جمعہ کی شام ضلع اننت ناگ کے ڈورو کوکرناگ میں سیکورٹی فورسز کے ساتھ ایک شدید جھرپ میں ہلاک کیا گیا۔ 21 سالہ برہان وانی کشمیر میں جنگجوؤں کی نئی نسل کا چہرہ اور پوسٹر بوائے کہلاتا تھا۔ وہ سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر جنگجوؤں کی ویڈیوز، اپنے ویڈیو بیانات اور گروپ تصاویر پوسٹ کرنے کی بناء پر مشہور تھا۔
انہوں نے اپنے حالیہ ویڈیو بیان میں سیکورٹی فورسز اور جموں وکشمیر پولیس پر حملے کرنے کی دھمکی جبکہ کشمیر آنے والے امرناتھ یاتریوں کو کسی بھی صورت میں نقصان نہ پہنچانے کا اعلان کیا تھا۔ سیکورٹی ایجنسیوں نے برہان کا پتہ بتانے والے کے لئے نقدی دس لاکھ روپے کا انعام مقرر کر رکھا تھا۔
First published: Jul 10, 2016 12:54 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading