ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ہندستان کے پانی کے فوائد کا بہترین استعمال کیسے کریں

ہندستان کا تازہ ترین آبی بحران اس حقیقت کو جھٹلاتا ہے کہ اس ملک میں صاف پانی کے بہت سارے اور متنوع وسائل موجود ہیں ۔ دنیا کے 4 فیصد صاف پانی کے ذخیرے کے ساتھ ہندوستان کے پاس کافی صاف پانی ہے جس کا تحفظ کرنا ضروری ہے۔

  • Share this:
ہندستان کے پانی کے فوائد کا بہترین استعمال کیسے کریں
ہندستان کے پانی کے فوائد کا بہترین استعمال کیسے کریں

ہندستان کا تازہ ترین آبی بحران اس حقیقت کو جھٹلاتا ہے کہ اس ملک میں صاف پانی کے بہت سارے اور متنوع وسائل موجود ہیں ۔ دنیا کے 4 فیصد صاف پانی کے ذخیرے کے ساتھ ہندوستان کے پاس کافی صاف پانی ہے جس کا تحفظ کرنا ضروری ہے۔ ان میں 10،360 دریا شامل ہیں جو پورے ملک میں بہتے ہیں اور ایک ایسا بہاؤ پیدا کرتے ہیں جو ایک تخمینہ کے مطابق لگ بھگ 1،869 مکعب کلومیٹر ہے۔ ساختی عدم استحکام کی وجہ سے ان سب تک رسائی حاصل نہیں کی جاسکتی ہے۔ لیکن اگر ان کا بہتر بندوبست کیا جاتا تو یہ ہمارے آبی وسائل کے بحران کو دور کرنے کی صلاحیت کو ظاہر کرتا ہے۔


ہندوستان میں دریاؤں کی بہتات ایک ایسے موقع کی نمائندگی کرتی ہے جس کا استعمال نہیں کیا گیا ہے۔ اگرچہ گنگا، جمنا اور برہم پتر جیسی ندیوں کا مقامی برادریوں میں بہت زیادہ احترام ہے ، لیکن ابھی تک ان کی صحت اور حفاظت کو بچانے کے لئے بہت کم کوششیں کی گئیں۔ انسانی فضلہ اور صنعتی کثرت سے ان لوگوں پر منفی اثر پڑا ہے جو اپنی روزی روٹی کے لئے ان دریاؤں پر انحصار کرتے ہیں۔ اس کے برعکس ان ندیوں کا بہتر بندوبست اور دیکھ بھال ان کے آس پاس کے رہنے والوں کی زندگیوں میں بہتری لائے گا۔


اگرچہ ہندوستان کے آبی بحران کا مسئلہ کافی نازک ہوگیا ہے، لیکن اس کے آبی وسائل کی ایک معروضی تشخیص سے پتہ چلتا ہے کہ اسے انفرادی اقدام اور مناسب ریگولیٹری انتظامیہ کے ذریعے حل کیا جاسکتا ہے۔ ہوسکتا ہے کہ پانی کے تحفظ کے لئے ان روشن خیالات کو عملی جامہ پہنانے کا یہ صحیح وقت ہو۔


مشن پانی ، سی این این۔ نیوز 18 اور ہارپک انڈیا کی پہل ہے جو پانی کی قلت اور صفائی ستھرائی کے مسئلے کو حل کرنے کے لئے کام کر رہا ہے ، تاکہ ہر ہندوستانی شہری کو دونوں تک یکساں رسائی حاصل ہو۔ اس تاریخی تبدیلی کا حصہ بنیں ، اور پانی کی بچت اور حفظان صحت کو فروغ دینے کے لئے ایک جل پریگیہ لیں۔ www.news18.com/mission-pani ملاحظہ کریں۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Jan 21, 2021 11:15 PM IST