உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مسلم راشٹریہ منچ کی طرف سے افطار پارٹی ، جامعہ ملیہ اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے وائس چانسلر ہوئے شریک

    نئی دہلی : گزشتہ کئی دنوں سے موضوع بحث راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کی ذیلی تنظیم راشٹریہ مسلم منچ  کی افطار پارٹی بالاخر آج پارلیامنٹ ہاؤس کی انکسی میں منعقد کی گئی ، جس میں متعدد سرکردہ شخصیات نے شرکت کی۔

    نئی دہلی : گزشتہ کئی دنوں سے موضوع بحث راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کی ذیلی تنظیم راشٹریہ مسلم منچ کی افطار پارٹی بالاخر آج پارلیامنٹ ہاؤس کی انکسی میں منعقد کی گئی ، جس میں متعدد سرکردہ شخصیات نے شرکت کی۔

    نئی دہلی : گزشتہ کئی دنوں سے موضوع بحث راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کی ذیلی تنظیم راشٹریہ مسلم منچ کی افطار پارٹی بالاخر آج پارلیامنٹ ہاؤس کی انکسی میں منعقد کی گئی ، جس میں متعدد سرکردہ شخصیات نے شرکت کی۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی : گزشتہ کئی دنوں سے موضوع بحث راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کی ذیلی تنظیم راشٹریہ مسلم منچ  کی افطار پارٹی بالاخر آج پارلیامنٹ ہاؤس کی انکسی میں منعقد کی گئی ، جس میں متعدد سرکردہ شخصیات نے شرکت کی۔خیال رہے کہ ایسا پہلی مرتبہ ہوا ہے جب آرایس ایس کی کسی ذیلی تنظیم نے افطار پارٹی کا اہتمام کیا ہو۔

      افطار پارٹی کا اہتمام ایم آر ایم اور سنگھ پرچارک اندریش کمار نے کیا ۔ افطار پارٹی میں 140 ممالک کے سفیروں کو مدعو کیا گیا تھا ، لیکن ہنگامہ آرائی کے بعد پاکستان کے ہائی کمشنر کو بھیجا گیا دعوت نامہ واپس کرلیا گیا تھا ۔ خبروں کے مطابق افطار پارٹی میں 9 ممالک کے سفیروں نے شرکت کی۔ علاوہ ازیں جامعہ ملیہ اسلامی یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر طلعت احمد، دہلی یونیورسٹی کے وائس چانسلر یوگیش تیاگی اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے وائس چانسلر ضمیر الدین شاہ بھی افطار پارٹی میں شرکت کرنے کیلئے پہنچے تھے ۔

      ایم آر ایم کے ذریعہ منعقدہ اس افطار پارٹی میں مرکزی وزرا بھی شریک رہے ، جن میں خاص طور سے نہال چند، مختار عباس نقوی شامل ہیں ۔ بی جے پی لیڈر شاہنواز حسین بھی پارٹی میں شریک ہوئے ۔ ایم آر ایم چیف محمد افضال کے مطابق اس افطار پارٹی کے انعقاد کا مقصد پوری دنیا کو یہ پیغام دینا تھا کہ ہندوستان ایک ایسا ملک ہے ، جہاں کثرت میں وحدت ہے۔ یہاں کے عوام اپنے مختلف عقائد و نظریات کے باوجود ایک چھت کے نیچے امن و امان کے ساتھ رہ رہے ہیں۔ ساتھ ہی ساتھ افضال نے اس بات کی بھی وضاحت کی کہ یہ افطار پارٹی ایم آر ایم کی جانب سے ہے اور آر ایس ایس کا اس سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔
      First published: