ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ہندستان۔ چین تنازعہ: منموہن سنگھ نے حکومت کو کیا آگاہ، کہا۔ گمراہ کن تشہیر مضبوط قیادت کا متبادل نہیں ہو سکتی

منموہن سنگھ نے کہا ’ ہم نہ تو چین کی دھمکیوں اور دباو کے سامنے جھکیں گے۔ نہ ہی اپنی علاقائی سالمیت سے کوئی سمجھوتہ قبول کریں گے۔

  • Share this:
ہندستان۔ چین تنازعہ: منموہن سنگھ نے حکومت کو کیا آگاہ، کہا۔ گمراہ کن تشہیر مضبوط قیادت کا متبادل نہیں ہو سکتی
سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ کی فائل فوٹو

نئی دہلی۔ مشرقی لداخ کی گلوان وادی Ladakh Galwan Valley) میں ایل اے سی پر ہوئے پرتشدد جھڑپ کے بعد ہندستان۔ چین کے درمیان کشیدگی جاری ہے۔ اس بیچ سابق وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ  (Dr. Manmohan Singh) نے مودی حکومت سے چین کو جواب دینے کی اپیل کی ہے۔ لداخ سرحدی تنازعہ میں شہید ہوئے جوانوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے منموہن سنگھ نے کہا ’ جوانوں کی قربانی بیکار نہیں جانی چاہئے۔ حکومت کو چین کی دھمکیوں اور بیانوں سے کمزور نہیں پڑنا چاہئے۔ یہی وقت ہے جب پورے ملک کو متحد ہونا ہے اور منظم ہو کر اس کا جواب دینا ہو گا‘۔


سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ نے چین کے ساتھ جاری کشیدگی پر ایک بیان جاری کر کہا ’ ہم حکومت کو آگاہ کریں کے کہ گمراہ کن تشہیر کبھی بھی سفارت کاری اور مضبوط قیادت کا متبادل نہیں ہو سکتی‘۔ انہوں نے کہا ’ آج ہم تاریخ کے نازک موڑ پر کھڑے ہین۔ ہماری حکومت کے فیصلے اور حکومت کے قدم طئے کریں گے کہ مستقبل کی نسلیں ہمارا تخمینہ کیسے کریں۔ جو ملک کی قیادت کر رہے ہیں، ان کے کندھوں پر فریضہ کی گہری ذمہ داری ہے۔ ہماری جمہوریت میں یہ فریضہ وزیر اعظم کا ہے‘۔


سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ نے کہا ’ چین نے اپریل سے لے کر آج تک گلوان وادی اور پینگانگ تسو لیک میں کئی بار دراندازی کی ہے۔ ہندستان کے علاقوں پر جبرا دعویٰ پیش کیا ہے۔ ایسے میں وزیر اعظم کو اپنے لفظوں اور اعلانات کے ذریعہ ملک کی سیکورٹی اور علاقائی مفادات پر پڑنے والے اثر کے تئیں ہمیشہ بیحد محتاط ہونا چاہئے‘۔


منموہن سنگھ نے کہا ’ ہم نہ تو چین کی دھمکیوں اور دباو کے سامنے جھکیں گے۔ نہ ہی اپنی علاقائی سالمیت سے کوئی سمجھوتہ قبول کریں گے۔ وزیر اعظم کو اپنے بیان سے ان کے سازشی روئیے کو طاقت نہیں دینی چاہئے۔
First published: Jun 22, 2020 10:58 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading