உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہندستان۔ چین تنازعہ: فوج کو مئی میں مل گئی تھی ایل اے سی کے پاس '6-7 جہگوں' پر قبضہ کرنے کی ہری جھنڈی: رپورٹ

    فوج کو مئی میں مل گئی تھی ایل اے سی کی '6-7 جہگوں' پر قبضہ کرنے کی ہری جھنڈی: رپورٹ

    فوج کو مئی میں مل گئی تھی ایل اے سی کی '6-7 جہگوں' پر قبضہ کرنے کی ہری جھنڈی: رپورٹ

    آفیسر نے کہا کہ سیاسی قیادت نے مئی میں ہی ان چھ سے سات جگہوں کی پہچان کرنے کی ہدایت دی تھی جہاں ہم جا سکتے تھے۔ ان پوسٹس کی اہمیت کے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے آفیسر نے کہا کہ ان میں سے کئی ایل اے سی سے آگے ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی۔ ہندستان اور چین سرحد (India China Dispute) پر جاری تعطل کے دوران مئی میں سیاسی حلقوں کی طرف سے فوج کو لائن آف ایکچول کنٹرول (LAC) پر '6۔7 جگہوں کو پہچان کر قبضہ کرنے کا' حکم ملا تھا۔ انگریزی اخبار دی انڈین ایکسپریس کے مطابق، ایک سرکاری آفیسر نے یہ جانکاری دی۔ رپورٹ میں آفیسر کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ ہدایات کے بعد فوج نے منصوبے بنائے اور اگست کے آخر میں چینی فوجیوں کو مات دے کر مکھپری، ریزانگ لا، روچن لا اور گرنگ ہل اور سب سیکٹر میں پینگانگ تسو کے جنوبی کنارے کے خطے پر قبضہ کر لیا۔

      آفیسر نے کہا کہ سیاسی قیادت نے مئی میں ہی ان چھ سے سات جگہوں کی پہچان کرنے کی ہدایت دی تھی جہاں ہم جا سکتے تھے۔ ان پوسٹس کی اہمیت کے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے آفیسر نے کہا کہ ان میں سے کئی ایل اے سی سے آگے ہیں۔ آفیسر نے کہا ' اس نے ہندستان کو چین سے بات کرنے کے لئے کچھ دیا ہے'۔

      رپورٹ کے مطابق، آفیسر نے کہا کہ ہندستان، چین سے نویں دور کی بات چیت کے لئے جواب کا انتظار کر رہا ہے۔ 6 نومبر کو دونوں ملکوں کے درمیان 8ویں دور کی بات چیت ہوئی تھی۔ آفیسر کے مطابق، چین نے پہلے پینگونگ تسو کے شمالی ساحل پر فنگر 4 سے فنگر 8 تک اپنے فوجیوں کو ہٹانے کی خواہش ظاہر کی تھی، لیکن اب وہ ایسا نہیں چاہتا۔ ایسا لگتا ہے کہ ان کی اعلیٰ قیادت اس بات کو لے کر راضی نہیں ہے۔

      آفیسر نے کہا کہ چین ستمبر سے یہی مانگ کر رہا ہے کہ ہندستانی فوجیوں کو چشول سب سیکٹر اور پینگونگ تسو کے جنوبی علاقے کی اونچائیوں سے واپس جانا چاہئے۔ آفیسر نے کہا ' چین چاہتا ہے کہ ہم جنوبی (بینک) سے جائیں۔ ہم نے چین سے کہا کہ حل ایک ہونا چاہئے تاکہ سبھی تعطل والی جگہوں پر تبادلہ خیال ہو۔ جنوبی بینک کو پہلے خالی کرنے کا کوئی سوال ہی نہیں اٹھتا'۔
      رپورٹ کے مطابق، آفیسر نے کہا کہ بات چیت میں وقت لگ سکتا ہے اور حکومت انتظار کرنے کو تیار ہے۔ آفیسر نے کہا کہ اگر کوئی حل تلاش نہیں کیا گیا تو حکومت اور فوج طویل انتظار کے لئے تیار ہیں۔
      Published by:Nadeem Ahmad
      First published: