உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ’یو این ایس سی میں ہندوستان بھی بن سکتا ہے مستقل رکن؟ کثیرآبادی والے ملک کا رکن نہ بننا خود UNSC کیلئے اچھا نہیں‘

    وزیر خارجہ ایس جے شنکر

    وزیر خارجہ ایس جے شنکر

    وزیر خارجہ ایس جے شنکر (S Jaishankar) نے کہا کہ چند سال میں ہندوستان دنیا کی تیسری سب سے بڑی معیشت بن جائے گا، یہ دنیا کا سب سے زیادہ آبادی والا معاشرہ ہوگا۔ ایسے ملک کا کلیدی عالمی کونسلوں میں نہ ہونا ظاہر ہے، یہ نہ صرف ہمارے لیے اچھا نہیں ہے، لیکن میں یہ بھی کہوں گا کہ یہ عالمی کونسل کے لیے بھی اچھا نہیں ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jammu and Kashmir | Hyderabad | Mumbai | Gujarat | Lucknow
    • Share this:
      وزیر خارجہ ایس جے شنکر (S Jaishankar) نے کہا کہ ہندوستان کا اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مستقل رکن کے طور پر نہ بیٹھنا صرف ہمارے لئے اچھا نہیں ہے بلکہ عالمی ادارے کے لئے بھی اچھا نہیں ہے۔ میں سنجیدہ ہوں۔ اسی لیے جب میں نے کہا کہ میں اس پر کام کر رہا ہوں۔ وہ اس سوال کا جواب دے رہے تھے کہ ہندوستان کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا مستقل رکن بننے میں کتنا وقت لگے گا؟ جے شنکر کولمبیا یونیورسٹی کے پروفیسر اور نیتی آیوگ کے سابق وائس چیئرمین اروند پناگریہ کے ساتھ کولمبیا یونیورسٹی کے اسکول آف انٹرنیشنل اینڈ پبلک افیئرز کے راج سینٹر میں اس ضمن میں گفتگو کر رہے تھے۔

      جے شنکر نے کہا کہ یہ واضح طور پر ایک بہت مشکل کام ہے۔ اگر آپ یہ کہیں کہ ہمارے عالمی نظام کی تعریف کیا ہے۔ پانچ مستقل ممبران اس بات کی بہت اہم تعریف ہیں کہ عالمی نظام کیا ہے۔ تو یہ ایک بہت ہی بنیادی، بہت گہری تبدیلی ہے جس کی ہم تلاش کر رہے ہیں۔ ہم سمجھتے ہیں کہ یہ تبدیلی ابھی التوا میں ہے، کیونکہ اقوام متحدہ ایک ایسی مصنوع ہے جو اسّی سال پہلے وضع کی گئی تھی۔ یہ انسانی تخلیقی صلاحیتوں کے کسی بھی معیار سے 80 سال پہلے کی بات ہے۔ اس عرصے میں آزاد ممالک کی تعداد چار گنا بڑھ گئی ہے، انہوں نے مزید کہا کہ دنیا کے بڑے حصے ایسے ہیں جو اب آزاد ہوچکے ہیں، جب کی اپنی آزاد خارجہ پالیسی ہے۔

      انہوں نے کہا کہ چند سال میں ہندوستان دنیا کی تیسری سب سے بڑی معیشت بن جائے گا، یہ دنیا کا سب سے زیادہ آبادی والا معاشرہ ہوگا۔ جے شنکر نے کہا کہ ایسے ملک کا کلیدی عالمی کونسلوں میں نہ ہونا ظاہر ہے، یہ نہ صرف ہمارے لیے اچھا نہیں ہے، لیکن میں یہ بھی کہوں گا کہ یہ عالمی کونسل کے لیے بھی اچھا نہیں ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      مجھے یقین ہے کہ ہر گزرتے سال کے ساتھ میں دنیا میں ہندوستان کے لیے زیادہ سے زیادہ حمایت کا احساس کر رہا ہوں کیونکہ ہم آج دنیا کے بہت بڑے حصوں کے اعتماد اور بھروسے کو حاصل کررہے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ میں کم از کم یہ کہوں گا کہ بہت سے ممالک شاید یہ سوچتے ہیں کہ ہم ان کے لیے انتہائی ہمدردی اور مدد کی نیت سے بات کرتے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: