உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کورونا ویکسین ایکسپورٹ شروع! چار ممالک کیلئے 10 ۔ 10 لاکھ ڈوز کو ملی منظوری : ذرائع

    ویکسین ایکسپورٹ شروع! چار ممالک کیلئے 10 ۔ 10 لاکھ ڈوز کو ملی منظوری : ذرائع ۔ علامتی تصویر ۔ AP

    ویکسین ایکسپورٹ شروع! چار ممالک کیلئے 10 ۔ 10 لاکھ ڈوز کو ملی منظوری : ذرائع ۔ علامتی تصویر ۔ AP

    سرکاری ذرائع نے جانکاری دی ہے کہ مرکزی حکومت نے سیرم انسٹی ٹیوٹ کو 'ویکسین میتری' کے تحت نیپال ، میانمار اور بنگلہ دیش کو 10 ۔ 10 لاکھ کووی شیلڈ ڈوز بھیجنے کی اجازت دی ہے ۔ اس کے علاوہ بھارت بایوٹیک کی کوویکسین کے دس لاکھ ڈوز ایران کیلئے فائنل کردئے گئے ہیں ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : ملک میں اب کورونا ویکسین کا کافی پروڈکشن شروع ہونے کے بعد مرکزی حکومت ویکسین ایکسپورٹ دوبارہ شروع کررہی ہے ۔ سرکاری ذرائع نے جانکاری دی ہے کہ مرکزی حکومت نے سیرم انسٹی ٹیوٹ کو 'ویکسین میتری' کے تحت نیپال ، میانمار اور بنگلہ دیش کو 10 ۔ 10 لاکھ کووی شیلڈ ڈوز بھیجنے کی اجازت دی ہے ۔ اس کے علاوہ بھارت بایوٹیک کی کوویکسین کے دس لاکھ ڈوز ایران کیلئے فائنل کردئے گئے ہیں ۔

      دراصل گزشتہ ماہ صحت کے مرکزی وزیر منسکھ مانڈویہ نے کہا تھا کہ ویکسین میتری کے تحت ہندوستان پوری دنیا کی مدد کرے گا اور چوتھی سہ ماہی میں کوویکس میں حصہ دے گا ۔ انہوں ںے کہا کہ ہمیں اگلے مہینے کورونا ویکسین کی 30 کروڑ سے زیادہ ڈوز ملنے کی امید ہے ۔ ویکسین کا پروڈکشن بڑھے گا کیونکہ بایولاجیکل ای اور دیگر کمپنیاں اپنے ٹیکے بازار میں لا رہی ہیں ۔

      اس کے بعد مانا جارہا تھا کہ اکتوبر مہینے سے ویکسین ایکسپورٹ کی شروعات کی جاسکتی ہے ۔ اپریل مہینے میں دوسری شدید لہر کے قہر کے بعد ویکسین کا ایکسپورٹ بند کردیا گیا تھا ۔ اس کے بعد سے لگاتار ہندوستان اپنی ضرورتوں پر دھیان دے رہا ہے ۔

      گزشتہ ماہ سیرم انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا کے سی ای او ادار پونہ والا نے بھی کہا تھا کہ وہ مرکزی حکومت سے ویکسین ایکسپورٹ کیلئے ہری جھنڈی کا انتظار کررہے ہیں ۔ انہوں نے کہا تھا کہ ایس آئی آئی کے پاس پہلے سے بلین ڈالر سے زیادہ قیمت کے ڈوز کا آرڈر بیک لاگ میں پڑا ہوا ہے ۔

      ویکسین ایکسپورٹ شروع کرنے کے ہندوستان کے فیصلہ کی عالمی صحت تنظیم نے بھی سراہنا کی تھی ۔ ڈبلیو ایچ او کے سربراہ نے کہا تھا کہ ہندوستان کے اس فیصلہ سے سال کے آخر تک سبھی ممالک میں کم سے کم 40 فیصد آبادی کے ٹیکہ کاری کے ہدف کو حاصل کیا جاسکتا ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: