ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ہندوستانی فوج کے سرجیکل اسٹرائیک سے لشکر طیبہ کو ہوا سب سے زیادہ نقصان : رپورٹ

ہندوستانی فوج کی طرف سے لائن آف کنٹرول کے پار دہشت گردوں کے ٹھکانوں پر کئے گئے محدود حملوں میں دہشت گرد تنظیم لشکر طیبہ کو سب سے زیادہ سے زیادہ نقصان پہنچا ہے ۔

  • Agencies
  • Last Updated: Oct 09, 2016 06:14 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
ہندوستانی فوج کے سرجیکل اسٹرائیک سے لشکر طیبہ کو ہوا سب سے زیادہ نقصان : رپورٹ
علامتی تصویر

نئی دہلی : ہندوستانی فوج کی طرف سے لائن آف کنٹرول کے پار دہشت گردوں کے ٹھکانوں پر کئے گئے محدود حملوں میں دہشت گرد تنظیم لشکر طیبہ کو سب سے زیادہ سے زیادہ نقصان پہنچا ہے ۔ انٹیلی جنس ایجنسیوں کی طرف سے ریکارڈ کی گئی بات چیت سے سے پتہ چلا ہے کہ لشکر کے تقریبا 20 دہشت گرد مارے گئے ہیں۔

حالیہ سرجیکل اسٹرائیک کی معلومات رکھنے والے ذرائع کے مطابق ہندوستانی فوج کی فیلڈ یونٹوں سے دستیاب رپورٹ میں مختلف پاکستانی تنصیبات کے درمیان ہوئی ریڈیو بات چیت شامل ہے۔ اس بات چیت سے پتہ چلتا ہے کہ شمالی کشمیر کے کپوارہ سیکٹر کے سامنے پاکستان کے مقبوضہ کشمیر میں واقع ددنيال دہشت گرد کیمپ میں لشکر طیبہ کو سب سے زیادہ سے زیادہ نقصان ہوا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ 28 اور 29 ستمبر کی درمیانی رات کو ہندوستانی فوج نے سرجیکل اسٹرائیک کرکے 700 میٹر کے فاصلے پر ایک پاکستانی چوکی کی پناہ میں واقع دہشت گرد وں کے چار ٹھکانوں کو تباہ کر دیا۔ ذرائع نے بتایا کہ دہشت گردوں کو ہندوستانی فوج کی جانب سے کارروائی کی توقع نہیں تھی اور اس وجہ سے وہ حیران رہ گئے۔

رپورٹ کے مطابق جب ہندوستانی فوجیوں نے ان دہشت گردوں کو مارنا شروع کیا ، تو وہ پاکستانی چوکی کی جانب بھاگتے نظر آئے۔ ذرائع نے بتایا کہ پاکستان کے مقبوضہ کشمیر میں کامیاب اسٹرائیک کے بعد ایک مؤثر ریڈیو نگرانی اور سخت چوکسی قائم کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی فوج کے ریڈیو نیٹ ورک سے حاصل پیغامات سے اشارہ ملتا ہے کہ چار دہشت گرد ٹھکانوں پر تقریبا ایک ہی وقت میں سرجیکل اسٹرائیک میں لشکر طیبہ کے کم از کم 10 دہشت گرد مارے گئے۔ انہوں نے کہا کہ صبح نمودار ہونے تک وہاں پاکستانی فوج کی گاڑیوں کی کافی ہلچل نظر آئی اور تمام لاشوں کو وہاں سے ہٹا کر دوسری جگہوں لے جایا گیا۔ ذرائع نے کہا کہ ریڈیو بات چیت سے پتہ چلتا ہے کہ مارے گئے دہشت گردوں کو نیلم وادی میں اجتماعی طور پر دفن کیا گیا۔

First published: Oct 09, 2016 06:14 PM IST