உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    فاروق عبد اللہ کے گھر میں زبردستی گھس رہا تھا نوجوان، سیکورٹی اہلکاروں نے مار گرایا

    تصویر: اے این آئی۔

    تصویر: اے این آئی۔

    جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ فاروق عبد اللہ کے گھر میں کچھ نقاب پوشوں نے زبردستی گھسنے کی کوشش کی۔

    • Share this:
      جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ اور نیشنل کانفرنس کے صدر فاروق عبد اللہ کے جموں واقع گھر میں کار سوار ایک شخص نے زبردستی گھسنے کی کوشش کی جسے سیکورٹی اہلکاروں نے مار گرایا۔ اس شخص کی شناخت پونچھ کے رہنے والے مرفس شاہ کے طور پر ہوئی ہے۔ اس واقعہ کے وقت فاروق یا ان کے بیٹے عمر عبداللہ اس گھر میں موجود نہیں تھے۔

      پولیس کے مطابق، شاہ نے فاروق عبداللہ کے گھر کے باہر لگے بیریکیڈ کو توڑ دیا۔ اس کے بعد وہاں تعینات جوانوں سے لڑتے جھگڑتے وہ گھر کے اندر گھس گیا۔ ایسے میں اسے روکنے کے لئے وہاں تعینات سیکورٹی اہلکاروں نے اس پر فائرنگ کی جس میں شاہ کی موت ہو گئی۔ واقعہ کی اطلاع پا کر جائے حادثہ پر پہنچی پولیس نے پورے گھر کو گھیر لیا ہے اور سیکورٹی بڑھا دی گئی ہے۔

      وہیں، اس واقعہ میں مارے گئے شخص کے والد نے سازش کا اندیشہ ظاہر کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ رات وہ میرے ساتھ تھا۔ وہ ہر روز جم جاتا تھا اور آج بھی اسی کے لئے گیا تھا۔ میں یہ جاننا چاہتا ہوں کہ اسے کیوں مار دیا گیا۔ جب اس نے گیٹ توڑا تو اس وقت سیکورٹی گارڈ کہاں تھے؟ انہوں نے اسے گرفتار کیوں نہیں کیا؟

      سینٹرل ریزرو پولیس فورس (سی آر پی ایف) نے اس واقعے پر ایک بیان جاری کر کے بتایا کہ عبد اللہ کے گھر کی سیکیورٹی پر تعینات سی آر پی ایف کی 38 بٹالین کی ٹکڑی نے اسے خبردار کیا تھا، لیکن وہ نہیں رکا، پھر انہوں نے گاڑی پر فائرنگ شروع کردی۔ ' بیان میں  بتایا گیا ہے کہ اس شخص کی لاش مل گئی ہے اور گاڑی کی جانچ کی جا رہی ہے۔ اس واقعے میں  سی آر پی ایف کے ایک جوان کو معمولی چوٹ آئی ہے۔



      اس واقعہ پر آئی جی جموں زون ایس ڈی سنگھ جاموال کا کہنا ہے کہ فاروق عبداللہ کے گھر میں مرفس شاہ نے زبردستی گھسنے کی کوشش کی۔ وہ وی آئی پی گیٹ سے زبردستی ایس یو وی سے جا رہا تھا۔ اس کے پاس کوئی ہتھیار نہیں تھا۔  



      فاروق عبداللہ جموں کے بھٹنڈی علاقے میں رہتے ہیں۔ صبح کے وقت جب سیکورٹی دستے گشت کر رہے تھے، تبھی کار سوارنقاب پوشوں نے کالونی کے گیٹ پر لگے بیریکیڈ کو توڑتے ہوئے اندر گھسنے کی کوشش کی۔ کار سوار کو دیکھتے ہوئے  سیکورٹی فورسز نے فائرنگ شروع کردی۔ سیکورٹی فورسز کی گولی سے نقاب پوش زخمی ہو گیا۔ زخمی کو اسپتال میں بھرتی کرایا گیا جہاں اس کی موت ہو گئی۔
      First published: