உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    J & K News: پلوامہ میں سب انسپکٹرکاقتل کیس، ’دہشت گردوں کےکہنےپرقتل‘ تین لوگ گرفتار

    جائے وقوعہ سے اشتعال انگیز مواد، اسلحہ اور گولہ بارود برآمد ہوا۔

    جائے وقوعہ سے اشتعال انگیز مواد، اسلحہ اور گولہ بارود برآمد ہوا۔

    ترجمان نے بتایا کہ ملزمان کی شناخت ارسلان بشیر عرف فیصل، توقیر منظور اور اویس مشتاق کے طور پر کی گئی ہے، جو تمام سمبورہ پامپور کے رہائشی ہیں۔ ملزمان سب انسپکٹر کے پڑوسی ہیں۔ درحقیقت منظور ان کا بھتیجا ہے۔

    • Share this:
      سری نگر: جموں اور کشمیر کے پلوامہ ضلع میں اس ماہ کے شروع میں ایک سب انسپکٹر کے قتل کے سلسلے میں تین لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے، ایک پولیس ترجمان نے کہا کہ ان میں سے ایک متوفی افسر کا رشتہ دار ہے۔

      پولیس نے کہا کہ سب انسپکٹر فاروق احمد کی گولیوں سے چھلنی لاش 16 اور 17 جون کی درمیانی شب پلوامہ ضلع میں ان کے گھر کے قریب دھان کے کھیت سے ملی تھی۔ وہ مارا گیا۔

      جموں و کشمیر پولیس کے ایک ترجمان نے اتوار کے روز کہا کہ پولیس نے جرائم کے کمیشن میں ملوث تین ملزمان کو گرفتار کرکے ایس آئی فاروق احمد کے قتل کا معاملہ حل کیا ہے۔ ان کے قبضے سے ایک پستول سمیت مجرمانہ مواد برآمد کیا گیا ہے۔

      ترجمان نے بتایا کہ ملزمان کی شناخت ارسلان بشیر عرف فیصل، توقیر منظور اور اویس مشتاق کے طور پر کی گئی ہے، جو تمام سمبورہ پامپور کے رہائشی ہیں۔ ملزمان سب انسپکٹر کے پڑوسی ہیں۔ درحقیقت منظور ان کا بھتیجا ہے۔

      مزید پڑھیں: Amarnath Yatra 2022: پہلگام میں روٹ پلان مرتب، ڈی سی اننت ناگ نے جاری کئے احکامات

      پولیس نے بتایا کہ ملزموں نے لدھو کے دہشت گرد ماجد نذیر وانی کے کہنے پر احمد کو قتل کیا، جو 21 جون کو تججن پلوامہ انکاؤنٹر میں مارا گیا تھا۔

      مزید پڑھیں: Amarnath Yatra 2022:نجی گاڑیوں سے امرناتھ یاترا جانے والوں کے لئے گائیڈلائنس جاری، راجستھان کے مسافر توجہ دیں

      ترجمان نے کہا کہ تفتیش کے دوران کئی مشتبہ افراد کو پوچھ گچھ کے لیے بلایا گیا اور تینوں مشتبہ افراد کو زیرو کر دیا گیا۔ قتل میں ان کا کردار ثابت ہو گیا۔ اس معاملے کی مزید تفتیش جاری ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: