ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

جمعیۃ علماء ہند کی ووٹرلسٹ میں ناموں کے اندراج کی تحریک جاری رہے گی 

جمعیۃ علماء ہند کی مجلس عاملہ کے دوران سیمیناروں کی تاریخیں طے کی گئیں۔

  • UNI
  • Last Updated: Oct 23, 2018 09:25 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
جمعیۃ علماء ہند کی ووٹرلسٹ میں ناموں کے اندراج کی تحریک جاری رہے گی 
جمعیۃ علما ہند کی مجلس عاملہ کی میٹنگ کے دوران ممبران تبادلہ خیال کرتے ہوئے۔

نئی دہلی:  جمعیۃ علماء ہند کی قومی مجلس عاملہ کا اہم اجلا س، اس کے صدردفترمیں مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری صدرجمعیۃ علماء ہند کے زیرصدارت منعقد ہوا، جس میں ووٹرلسٹ میں نام شامل کرانے کی تحریک، اتراکھنڈ ہائی کورٹ کے ذریعہ فتاوی پرعائدہ کردہ پابندی، عالم اسلام خصوصا سعودی عرب میں رونما موجودہ صورتحال اورجمعیۃ  علماء ہند کی تقریبات صدسالہ اوراکابرجمعیۃ پرہونے والے سیمینارسمیت متعدد مسائل کا جائزہ لیا گیا۔

جمعیۃ علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی نے اراکین کے سامنے ایجنڈوں پر بالترتیب تفصیل سے روشنی ڈالی۔ ریسرچ ادارے بالخصوص سی آرڈی ڈی پی کی جانب سے حال میں اس بات کا انکشاف ہوا تھا کہ ملک کی مختلف ریاستوں میں لاکھوں مسلمانوں کے نام ووٹرلسٹ میں درج نہیں ہیں جس کی وجہ سے انفرادی اورملی بنیادیں اثرہورہی ہیں۔


جمعیۃ علماء ہند نے اس کے تدارک کے لئے ناموں کے اندراج کی ملک گیرسطح پرمہم چلا رکھی ہے۔ تاہم اسے مزید اہتمام سے انجام دینے کی ضرورت محسوس کی جارہی ہے۔ بریں بنا مجلس عاملہ نے جمعیۃ کی تمام ضلعی وعلاقائی یونٹوں کوپابند کیا ہے کہ ووٹرلسٹ میں ناموں کے اندراج کی مہم کوزوروشو رکے ساتھ جاری رکھیں اورلوگوں میں اس کے حوالے سے برابربیداری لانے کی کوشش کریں۔

مجلس عاملہ نے اتراکھنڈ ہائی کورٹ کی جانب سے فتاوی پرعائد کرہ پابندی پرتشویش کا اظہارکیا اوراس سلسلے میں جمعیۃ علماء ہند کی اپیل پرسپریم کورٹ میں اسٹے ملنے پر اطمینان کا اظہارکیا۔ ایڈوکیٹ شکیل احمد سید نے سپریم کورٹ میں جاری قانونی جدوجہد سے متعلق مجلس عاملہ میں ایک رپورٹ پیش کی۔

مجلس عاملہ نے سعودی عرب میں جاری جدید اصلاحات سے متعلق اپنی قائم کردہ کمیٹی کی رپورٹ کا بھی جائزہ لیا اوراس سلسلے میں مذکورہ کمیٹی کو پابند کیا کہ وہ آئندہ اجلاس مجلس عاملہ میں کوئی جامع تجویز پیش کرے۔ تنظیم کے 100 سال مکمل ہونے پرمنعقد ہونے والی تقریب صد سالہ اوراکابرجمعیۃ پرسیمیناروں سے متعلق رپورٹ کا جائزہ لینے کے بعد مجلس نے فیصلہ کیا کہ اگلے سال فروری میں ہونے والا صد سالہ پروگرام اب دیوبند میں نومبر 2019 میں منعقد ہوگا۔ سیمینارکے سلسلے میں رکن مجلس عاملہ مولانا معزالدین احمد نے ایک رپورٹ پیش کی، جس میں بتایا کہ مولانا عبدالباری فرنگی محلی ؒ، مفتی اعظم مفتی کفایت اللہ ؒ ، مولانا احمد سعید دہلوی ؒ ، مولانا ابوالمحاسن سجاد بہاری ؒ ، مولانا حفظ الرحمن سیورہارویؒ ، مولانا محمد میاںؒ ،ابوالماثر مولانا حبیب الرحمن اعظمی ؒ جیسے اکابر پر سیمینار کی تاریخیں طے ہوگئی ہیں جو ماہ دسمبر سے شروع ہو کرمارچ  2019 الگ الگ تاریخوں میں منعقد ہوگا۔
First published: Oct 23, 2018 09:25 PM IST