ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

غیر ملکی سفارتکاروں کا سخت سکیورٹی میں کشمیر کا دورہ

بتادیں کہ مرکزی حکومت کی طرف سے جموں کشمیر کو دفعہ 370 اور دفعہ 35 اے کے تحت حاصل خصوصی اختیارات کی تنسیخ اور ریاست کو دو وفاقی حصوں میں منقسم کرنے کے پانچ اگست کے فیصلوں کے بعد یہ کسی غیر ملکی وفد کا دوسرا دورہ کشمیر ہے۔

  • Share this:
غیر ملکی سفارتکاروں کا سخت سکیورٹی میں کشمیر کا دورہ
بتادیں کہ مرکزی حکومت کی طرف سے جموں کشمیر کو دفعہ 370 اور دفعہ 35 اے کے تحت حاصل خصوصی اختیارات کی تنسیخ اور ریاست کو دو وفاقی حصوں میں منقسم کرنے کے پانچ اگست کے فیصلوں کے بعد یہ کسی غیر ملکی وفد کا دوسرا دورہ کشمیر ہے۔

مختلف ممالک سے تعلق رکھنے والے 15 سفارتکاروں پر مشتمل ایک وفد سخت سکیورٹی بندوبست کے درمیان وادی میں پانچ اگست کے بعد پیدا شدہ صورتحال کا جائزہ لینے کی غرض سے جمعرات کو وارد سری نگر ہوکر سیدھے بادامی باغ علاقے میں واقع فوج کی 15 ویں کور کے ہیڈ کوارٹر پہنچا جہاں سینئر سکیورٹی افسروں نے انہیں کشمیر کی تازہ سکیورٹی صورتحال پر بریفنگ دی۔

بتادیں کہ مرکزی حکومت کی طرف سے جموں کشمیر کو دفعہ 370 اور دفعہ 35 اے کے تحت حاصل خصوصی اختیارات کی تنسیخ اور ریاست کو دو وفاقی حصوں میں منقسم کرنے کے پانچ اگست کے فیصلوں کے بعد یہ کسی غیر ملکی وفد کا دوسرا دورہ کشمیر ہے۔

اس سے قبل 23 ارکان پر مشتمل ایک یورپی وفد 29 اکتوبر 2019 کو حالات کا جائزہ لینے کے لئے وارد وادی ہوا تھا۔ انتہائی دائیں بازو کی سوچ کے حامل یورپی اراکین پارلیمان پر مشتمل اس وفد نے دفعہ 370 کی منسوخی کو ہندوستان کا اندرونی معاملے قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ وہ یورپی یونین کو کوئی رپورٹ پیش نہیں کریں گے۔

First published: Jan 09, 2020 03:53 PM IST