உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں و کشمیر : نصف شب میں نظر بند کئے گئے عمر عبد اللہ اور محبوبہ مفتی ، پوری وادی میں چھائی خاموشی

    محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ ۔ فائل فوٹو

    جموں و کشمیر میں ممکنہ کسی بڑے فیصلہ کو لے کر قیاس آرائی کے درمیان کشمیر میں موبائل اور انٹرنیٹ خدمات بند کردی گئی ہیں ۔ سری نگر میں پانچ اگست سے دفعہ 144 بھی لگادی گئی ہے ، جو تا حکم ثانی نافذ رہے گی ۔

    • Share this:
    جموں و کشمیر میں ممکنہ کسی بڑے فیصلہ کو لے کر قیاس آرائی کے درمیان کشمیر میں موبائل اور انٹرنیٹ خدمات بند کردی گئی ہیں ۔ سری نگر میں پانچ اگست سے دفعہ 144 بھی لگادی گئی ہے ، جو تا حکم ثانی نافذ رہے گی ۔ وہیں جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلی اور نیشنل کانفرنس کے لیڈر عمر عبد اللہ نے نظر بند کئے جانے کا دعوی کیا ہے ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق عمر عبد اللہ کے علاوہ محبوبہ مفتی اور پیپلز کانفرنس کے لیڈر سجاد لون کو بھی نظر بند کردیا گیا ہے ۔

    عمر عبد اللہ نے ٹویٹ کرکے کہا کہ مجھے لگتا ہے کہ آج آدھی رات سے مجھے نظر بند کیا گیا ہے اور مین اسٹریم کے دیگر لیڈروں کیلئے بھی یہ کارروائی شروع ہوگئی ہے ۔

    وہیں جموں و کشمیر کی سابق وزیر اعلی اور پی ڈی پی لیڈر محبوبہ مفتی نے ٹویٹ کرکے کہا کہ یہ کیسا المیہ ہے کہ ہمارے جیسے منتخب نمائندے جو امن کیلئے لڑے تھے ، گھر میں نظر بند ہیں ۔ دنیا دیکھ رہی ہے کہ جموں و کشمیر میں لوگوں اور ان کی آواز کو دبایا جارہا ہے ۔ وہ کشمیر جس نے ایک سیکولر جمہوریت ہندوستان کا انتخاب کیا تھا ، ناقابل تصور استحصال کا سامنا کررہا ہے ۔ جاگو ہندوستان جاگو ۔





    دوسری طرف سیکورٹی اہلکاروں کا کہنا ہے کہ دہشت گردانہ حملوں کی دھمکی کے پیش نظر گزشتہ دو دنوں میں جموں کے الگ الگ اضلاع میں آر اے ایف ، سی آر پی ایف ، آئی ٹی بی پی اور بی ایس ایف سمیت مختلف سیکورٹی فورسیز کی کئی کمپنیوں کو تعینات کیا گیا ہے ۔ افسران کے مطابق سرحدی علاقہ راجوری اور پونچھ میں تعینات آر اے ایف کی ٹکڑیوں نے سیکورٹی مشق کے تحت مقامی پولیس اور سی آر پی ایف کے ساتھ ایک علاقہ میں گشت کیا ۔
    First published: