உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جیش محمد کے تین مشتبہ جنگجو جموں کے پاس سکیورٹی فورسز پر فائرنگ کر کے جنگل سے فرار ، آپریشن جاری

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    فائرنگ کے بعد تین مشتبہ جنگجو فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔ جن کے خلاف پولیس، آرمی اور سی آر پی ایف نے مشترکہ طور آپریشن شروع کر رکھا ہے

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      فدائین دستے کا حصہ مانے جا رہے جیش محمد کے تین مشتبہ دہشت گردوں نے بدھ کو جموں ۔کشمیر کے اہم راستے پر سکیورٹی پورسز پر گالی باری کی۔ اس کے بعد وہ شہر کے پاس کے ایک جنگل میں فرار ہو گئے۔ جموں وکشمیر کے سرمائی دارالحکومت جموں کے مضافاتی علاقہ جھجر کوٹلی میں بدھ کی صبح مشتبہ جنگجوؤں کی فائرنگ کے نتیجے میں ایک شخص زخمی ہوگیا۔ فائرنگ کے بعد تین مشتبہ جنگجو فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔ جن کے خلاف پولیس، آرمی اور سی آر پی ایف نے مشترکہ طور آپریشن شروع کر رکھا ہے لیکن دس گھنٹے گزر جانے کے بعد بھی کوئی کامیابی نہ ملی ہے۔

      پولیس کے مطابق جموں سری نگر قومی شاہراہ پر جھجرکوٹلی میں قائم چیکنگ پوائنٹ پر بدھ کی صبح قریب آٹھ بجے پولیس نے ایک ایل پی ٹرک زیر نمبر1476-JK03Fجس میں ’جے کے وال پوٹی‘سیمنٹ کے بیگ لاؤڈ تھے،کو رکنے کا اشارہ کیا گیا لیکن گاڑی نہ رکی اور اندر سے فائرنگ کی گئی ۔
      اس کے بعد پولیس کی ایک پارٹی نے مذکورہ گاڑی کا پیچھا کیا۔ گاڑی کو ایک مخصوص جگہ پر رکنے کے لئے مجبور کیا گیا جس میں سے تین مشتبہ مسلح افراد فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے‘۔ فائرنگ کے واقع کے بعد پورے علاقہ میں ہائی الرٹ جاری کردیاگیا جس کے بعد پولیس ، آرمی اور فوج نے علاقہ کا محاصرے کر کے آپریشن شروع کیا۔
      انہوں نے بتایا کہ فائرنگ کے واقعہ میں ایک شخص جس کے بارے میں بتایا جارہا ہے کہ وہ محکمہ سریکلچر میں بحیثیت سکیورٹی گارڈ کام کرتا ہے، زخمی ہوا ہے۔ اسے علاج ومعالجہ کے لئے اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔ عینی شاہدین نے بتایا کہ طرفین کے مابین دس سے پندرہ گولیاں کا تبادلہ ہوا۔ جھجرکوٹلی علاقہ میں گھنا جنگل ہے جس کا فائدہ اٹھاکر مشتبہ افراد وہاں سے بھاگنے میں کامیاب رہے البتہ پورے علاقہ کو سیکورٹی فورسز نے کارڈن میں لے رکھا ہے۔
      First published: