உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں کشمیر پولیس نے جاری کی شجاعت بخاری کے قتل میں شامل مشتبہ کی تصویر

    شجاعت بخاری ۔ فائل فوٹو

    شجاعت بخاری ۔ فائل فوٹو

    جموں کشمیر پولیس نے رات کچھ تصویریں جاری کیں ۔یہ تصویریں ان لوگوں کی ہیں جن پر کشمیر کے ایک مقامی نیوز پیپر رائزنگ کشمیر کے ایڈیٹر شجاعت بخاری کے قتل کرنے کا شک ہے۔

    • Share this:
      جموں کشمیر پولیس نے رات کچھ تصویریں جاری کیں ۔یہ تصویریں ان لوگوں کی ہیں جن پر کشمیر کے ایک مقامی نیوز پیپر رائزنگ کشمیر کے ایڈیٹر شجاعت بخاری کے قتل کرنے کا شک ہے۔یہ لوگ بائک پر سوار نظر آ رہے ہیں۔پولیس نے سی سی ٹی وی کی بنیاد پر ان تصویروں کو جاری کیا ہے ۔پولیس کو شک ہے کہ انہیں بائک سواروں نے سینئر صحافی شجاعت بخاری کا قتل کیا ہے۔پولیس نے صوبے کے  عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ ان مشتبہ کی پہچان کرنے میں مدد کریں۔

      پولیس کو ان لوگوں پر شک اس لئے ہے کہ کیونکہ انہوں نے اپنے چہرے نقاب سے چھپا رکھے ہیں۔

      سی سی ٹی وی قید میں مشتبہ قیدیوں کی تصویر

      جمعرات کو نا معلوم بائک سواروں نے کیا قتل

      جموں و کشمیر کے سری نگر میں پریس کالونی میں جمعرات کو سینئر صحافی شجاعت بخاری کا  نامعلوم حملہ آوروں نے گولی مار کر قتل کردیا ہے۔ نا معلوم بائک سواروں نے شجاعت بخاری  پر اس وقت گولیاں چلائیں جب وہ لال چوک پریس انکلیو میں واقع اپنے آفس سے کار میں سوار ہو کر افطار پارٹی کیلئے نکل رہے تھے۔ مسلح حملہ آوروں نے انہیں ان کے دفتر کے باہر گولی ماری۔

      ذرائع کے مطابق ، جموں کشمیر کے ڈی جی پی ایس پی وید نے کہا ہے  کہ بائک سوار چار حملہ آوروں نے شام قریب 7۔15 بجے فائرنگ کی۔اس کے بعد موقع سے فرار ہو گئے۔بتایا جا رہا ہے ایک سال پہلے شجاعت بخاری کو پاکستانی دہشت گردوں سے جان کی دھمکی ملی تھی۔اس کے بعد انہیں ایکس کٹیگری کی سکیورٹی دی گئی تھی۔
      First published: