உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جموں وکشمیر: پلوامہ ہلاکتیں، گورنر نے تحقیقات کے احکامات جاری کردیے

    جموں وکشمیر کے گورنرستیہ پال ملک: فائل فوٹو۔

    جموں وکشمیر کے گورنرستیہ پال ملک: فائل فوٹو۔

    جموں وکشمیر کے گورنر ستیہ پال ملک نے جنوبی کشمیر کے ضلع پلوامہ میں شہری ہلاکتوں پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے صوبائی کمشنر کشمیر بصیر احمد خان کو واقعے کی تحقیقات کرنے کی ہدایت دے دی ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      جموں وکشمیر کے گورنر ستیہ پال ملک نے جنوبی کشمیر کے ضلع پلوامہ میں شہری ہلاکتوں پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے صوبائی کمشنر کشمیر بصیر احمد خان کو واقعے کی تحقیقات کرنے کی ہدایت دے دی ہے۔ ایک سرکاری ترجمان نے ہفتہ کی رات یہاں بتایا 'ریاست کے سول اور سینٹرل پولیس فورسز کے اعلیٰ افسران کی ایک میٹنگ کی صدارت ہفتہ کو جموں میں گورنر ستیہ پال ملک نے کی جس میں امن و قانون و دیگر سیکورٹی معاملات کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔ گورنر نے آج ضلع پلوامہ کے سرنو علاقے میں جنگجو مخالف آپریشن کے دوران قیمتی جانوں کے نقصان پر گہرے رنج و غم کا اظہار کیا جس میں سات شہری جاں بحق ہوئے'۔
      میٹنگ میں گورنر کے مشیر کے وجے کمار ، چیف سیکرٹر ی بی و ی آر سبھرامنیم ، ڈی جی پی دلباغ سنگھ ، گورنر کے پرنسپل سیکرٹر ی امنگ نرولہ ،پرنسپل سیکرٹری داخلہ آر کے گوئیل ، آئی جی پی جموں ایس ڈی ایس جموال ،ریاستی و سینٹرل پولیس فورسز کے افسران موجود تھے جبکہ ڈویژنل کمشنر کشمیر بصیر احمد خان ، اے ڈی جی پی امن و قانون منیر احمد خان ، آئی جی پی کشمیر ایس پی پانی ، آئی سی سی آر پی ایف رو ی دیپ سنگھ سہائی نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے میٹنگ میں شرکت کی۔
      سرکاری ترجمان کے مطابق گورنر نے کشمیر میں موجودہ سیکورٹی صورتحال کا جائزہ لیا اور ایسے آپریشنوں کے دوران عوام دوست اقدامات اٹھانے کے لئے کہا۔ آج کے آپریشن کے دوران شہری ہلاکتوں پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے گورنر نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ ان علاقوں سے اپنے آپ کو دور رکھیں جہاں ملی ٹنسی مخالف آپریشن جاری ہوں۔
      گورنر نے ڈویژنل کمشنر کشمیر کو ہدایت د ی کہ وہ آج کے پلوامہ واقعہ کی تحقیقات عمل میں لائیں۔
      دریں اثنا گورنر کے مشیر کے وجے کمار نے ضلع پلوامہ کے سرنو علاقے میں شہری ہلاکتوں پر اپنے رنج و غم کا اظہار کیا ہے ۔ کے وجے کمار نے غمزدہ کنبوں کے ساتھ دلی ہمدردی کا اظہا رکرتے ہوئے کہا کہ وہ سیکورٹی فورسز اور سول سوسائٹی کے ساتھ ان حالات کا پتہ لگانے کے لئے جڑے ہوئے ہیںجن کی وجہ سے چند قیمتیں جانیں تلف ہوئیں۔
      First published: