உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جے این یو تنازع : طلبہ کے خلاف بغاوت کیس کی دہلی پولیس کی اسپیشل کرے گی جانچ

    نئی دہلی: دہلی پولس نے آج مبینہ طورپر جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے پانچ طلبہ کےخلاف بغاوت کے مقدمے کو انسداد دہشت گردی سیل کے حوالے کردیا ہے۔ پولس ذرائع نے بتایا کہ اس مقدمے کی تفتیش دہشت گردانہ واقعات کی جانچ کرنے والی اسپیشل سیل کرے گي۔ ذرائع نے بتایا کہ جے این یو کے طلبہ کے خلاف مقدمے کو اینٹی ٹیرر سیل کے سپرد کردیا گیا ہے، جو دہشت گردانہ واقعات اور قومی سلامتی سے متعلق سرگرمیوں کی تحقیقات میں خصوصی مہارت کی حامل ہے۔

    نئی دہلی: دہلی پولس نے آج مبینہ طورپر جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے پانچ طلبہ کےخلاف بغاوت کے مقدمے کو انسداد دہشت گردی سیل کے حوالے کردیا ہے۔ پولس ذرائع نے بتایا کہ اس مقدمے کی تفتیش دہشت گردانہ واقعات کی جانچ کرنے والی اسپیشل سیل کرے گي۔ ذرائع نے بتایا کہ جے این یو کے طلبہ کے خلاف مقدمے کو اینٹی ٹیرر سیل کے سپرد کردیا گیا ہے، جو دہشت گردانہ واقعات اور قومی سلامتی سے متعلق سرگرمیوں کی تحقیقات میں خصوصی مہارت کی حامل ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی: دہلی پولس نے آج مبینہ طورپر جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے پانچ طلبہ کےخلاف بغاوت کے مقدمے کو انسداد دہشت گردی سیل کے حوالے کردیا ہے۔ پولس ذرائع نے بتایا کہ اس مقدمے کی تفتیش دہشت گردانہ واقعات کی جانچ کرنے والی اسپیشل سیل کرے گي۔  ذرائع نے بتایا کہ جے این یو کے طلبہ کے خلاف مقدمے کو اینٹی ٹیرر سیل کے سپرد کردیا گیا ہے، جو دہشت گردانہ واقعات اور قومی سلامتی سے متعلق سرگرمیوں کی تحقیقات میں خصوصی مہارت کی حامل ہے۔


      انہوں نے بتایا کہ اسپیشل سیل کے اہلکاروں نے تینوں طلبہ سے مشترکہ پوچھ گچھ کی ہے، جن کی رپورٹ میں کہا گيا ہے کہ ملزمان تفتیش میں تعاون نہيں کررہے ہیں۔ ایک سینئر پولس آفیسر نے کہا کہ اس پورے معاملے میں دیگر ریاستوں کے لوگ بھی ملوث ہيں۔  جے این یو کے طلبہ کے خلاف معاملے میں یہ پیش رفت تینوں ملزمان طلبہ کنہیا کمار، عمر خالد اور انربن بھٹاچاریہ سے دہلی پولس کی ایک ساتھ پوچھ گچھ کے بعد ہوئي ہے۔


      واضح رہے کہ جے این یو طلبہ یونین کے صد ر کنہیا کمار کو دہلی پولس نے 12 فروری کو یونیورسٹی کیمپس سے گرفتار کیا تھا، جبکہ جمعرات کی شب عمر خالد اور انربن بھٹاچاریہ کی خودسپردگی کے بعد انہيں زیر حراست لے لیا گیا تھا۔ جمعہ کے روز عمر خالد اور انربن بھٹاچاریہ کو آر کے پور م تھانے میں لایا گيا اور کنہیا کمار کو ایک دن کی پولس تحویل میں لے کر انہیں ایک ساتھ بیٹھ کر جے این یو کیمپس میں 9 فروری کو پیش آنے والے واقعہ کے بارے میں تعاون کرنے کو کہا گيا۔ دہلی پولس نے اب تک جے این یو کے پانچ طلبہ کو حراست میں لے لیا ہے، جن سے ملک مخالف سرگرمیوں میں ملوث ہونے کے بارے میں پوچھ گچھ کی جارہی ہے۔  


      گزشتہ 9 فروری کو یونیورسٹی کیمپس میں ایک مارچ کے دوران ملک مخالف نعرے بازی کے سلسلے میں نامعلوم طلبہ کے خلاف بسنت کنج تھانہ میں 11 فروری کو پروگرام کی ویڈیو فوٹیج اور چند عینی گواہوں کی بنیاد پر کیس درج کیا گيا تھا۔جبکہ اس سے ایک روز قبل ڈی سی پی (جنوب) پریم ناتھ نے دہلی پولس کمشنر بی ایس بسی کو معاملے کی جانچ قومی تفتیشی ایجنسی (این آئي اے) یا اسپیشل سیل کو سونپنے کے لئے لکھا تھا۔

      First published: