உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کابل میں دھماکے بعد دہلی میں موجود افغانیوں میں بے چینی، اپنے عزیز و اقارب کو لیکر فکر مند

    Youtube Video

    دہلی میں یو این ایچ سی آر کے باہر چار دن سے احتجاج کررہے افغانستان کے لوگوں کے اندر بیچینی دیکھی جارہی ہے ۔کئی لوگ ایسے ہیں جن کے رشتہ دار زخمی ہوئی ہیں تو کئی ایسے ہیں جن کے گھر والے لاپتہ ہیں۔ان لوگوں کا کہنا ہے کہ طالبان ان کے لوگوں کو مار رہا ہے۔

    • Share this:
      ٹی وی کیمرے پر طالبان بدلنے اور بدلاؤ کید بات کررہا ہے۔ لیکن کابل ایئرپورٹ Kabul Attack پر ہوئے دھماکے کے بعد طالبان کا چہرہ بے نقاب ہوگیا ہے کہ کس طریقے سے طالبان کے قول وفعل میں تضاد ہے۔ دہلی میں یو این ایچ سی آر کے باہر چار دن سے احتجاج کررہے افغانستان کے لوگوں کے اندر بیچینی دیکھی جارہی ہے ۔کئی لوگ ایسے ہیں جن کے رشتہ دار زخمی ہوئی ہیں تو کئی ایسے ہیں جن کے گھر والے لاپتہ ہیں۔ان لوگوں کا کہنا ہے کہ طالبان ان کے لوگوں کو مار رہا ہے۔

      طالبان (Taliban) کے آنے کے بعد افغانستان (Afghanistan) میں کہرام مچا ہے۔ جمعرات کو راجدھانی کابل کے حامد کرزئی ایئر پورٹ کے باہر دو فدائین حملوں سمیت تین دھماکے ہوئے۔ ان میں اب تک 103 لوگوں کی موت ہوچکی ہے جبکہ 150 سے زائد زخمی ہوئے ہیں۔ کابل ایئرپورٹ کے حملے کی دل دہلا دینے والی تصویریں سامنے آئی ہیں۔ ان تصویروں کو دکھانے کا مقصد آپ کو ڈرانا نہیں ہے بلکہ صرف یہ بتانا ہے کہ افغانستان میں درد اور خوف کی داستان حقیقت ہے اور طالبان کے وعدے جھوٹے ہیں۔

      دو خودکش حملوں کے بعد ، ہوائی اڈے سے لگے نالے میں لاشیں اور زخمیوں کا ڈھیر لگ گیا۔ جب لوگوں کو نکالا گیا تو نالے کا پانی بھی خون سے لال ہو گیا ۔ کابل کے حامد کرزئی بین الاقوامی ہوائی اڈے کے باہر دھماکے ہوئے اور فضا میں دھول کا غبار اٹھا۔ دھواں ختم ہونے تک کئی لوگوں کی زندگیاں تباہ ہو چکی تھیں۔ ہر طرف خون ہی خون تھا۔

      یہ دھماکہ (Kabul Blast) ایسے وقت میں ہوا ہے، جب افغانستان پر طالبان کے کنٹرول کے بعد سے ہزاروں افغانی ملک سے نکلنے کی کوشش کر رہے ہیں اور گزشتہ کئی دنوں سے ایئرپورٹ پر جمع ہیں۔ کابل ایئر پورٹ سے بڑی سطح پر لوگوں کی نکاسی مہم کے درمیان مغربی ممالک نے حملے کا خدشہ ظاہر کیا تھا۔ اس سے پہلے دن میں کئی ممالک نے لوگوں سے ایئرپورٹ سے دور رہنے کی اپیل کی تھی کیونکہ وہ خودکش حملے کا خدشہ ظاہر کیا گیا تھا۔

      امریکی وزارت دفاع پینٹاگن نے کہا- ’جمعرات کو حامد کرزئی انٹرنیشنل ایئر پورٹ کے ابے گیٹ پر پہلا دھماکہ ہوا۔ کچھ ہی دیر بعد ایئرپورٹ کے نزدیک بیرن ہوٹل کے پاس دوسرا دھماکہ ہوا۔ یہاں برطانیہ کے فوجی ٹھہرے ہوئے تھے۔ ایئر پورٹ کے باہر تین مشتبہ افراد کو دیکھا گیا تھا۔ اس میں دو خودکش حملہ آور تھے، جبکہ تیسرا بندوق لے کر آیا تھا۔ مرنے والوں کی تعداد بڑھنے کا امکان ہے‘۔

      وہیں دنیا کے الگ الگ ممالک سے امن معاہدہ کرنے اور اب طالبان نے اقتدار میں آنے کے بعد اپنا فرمان جاری کرنا شروع کردیا ہے۔ ایک طرف لوگ ملک چھوڑ کر جارہے ہیں تو وہیں طالبان (Taliban) انہیں جانے سے روک رہا ہے اور ملک میں تحفظ اور امن وامان قائم کرنے کی یقین دہانی کرا رہا ہے۔ گزشتہ دنوں خبریں آئی تھیں کہ طالبان افغانستانی (Afghanistan) شہریوں کو باہر جانے سے روک رہا ہے۔ وہیں اب نیوز ایجنسی رائٹرس کے مطابق، طالبان نے ائمہ کرام سے گزارش کی ہے کہ وہ جمعہ کے دن یعنی خطبہ جمعہ میں خاص پیغام دیں۔ اس پیغام میں حکومت کے احکامات پرعمل کرنے کی باتیں کہی جائیں۔ رائٹرس کے مطابق، طالبان نے ائمہ کرام سے گزارش کی ہے کہ وہ لوگوں کو حکومت کی باتیں ماننے‘ یعنی احکامات ماننے کے بارے میں پیغام دیں‘۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: