ہوم » نیوز » No Category

جے این یو تنازع : کنہیا کو آج بھی نہیں ملی ضمانت ، پولیس نے دوبارہ مانگی ریمانڈ

نئی دہلی : جے این یو کیمپس میں مبینہ طور پر ملک مخالف نعرے بازی کے ملزم طلبہ لیڈر کنہیا کمار کی ضمانت کی درخواست پر آج دہلی ہائی کورٹ میں سماعت ہوگی۔ اس سے قبل منگل کو عدالت نے دہلی پولیس کو اسٹیٹس رپورٹ داخل کرنے کی بات کہتے ہوئے سماعت کو ایک دن کے لئے ٹال دی تھی۔ وہیں دہلی پولیس کمشنر بی ایس بسی نے کہا کہ پولیس کنہیا کی ضمانت کی مخالفت کرے گی۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Feb 24, 2016 11:25 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
جے این یو تنازع : کنہیا کو آج بھی نہیں ملی ضمانت ، پولیس نے دوبارہ مانگی ریمانڈ
نئی دہلی : جے این یو کیمپس میں مبینہ طور پر ملک مخالف نعرے بازی کے ملزم طلبہ لیڈر کنہیا کمار کی ضمانت کی درخواست پر آج دہلی ہائی کورٹ میں سماعت ہوگی۔ اس سے قبل منگل کو عدالت نے دہلی پولیس کو اسٹیٹس رپورٹ داخل کرنے کی بات کہتے ہوئے سماعت کو ایک دن کے لئے ٹال دی تھی۔ وہیں دہلی پولیس کمشنر بی ایس بسی نے کہا کہ پولیس کنہیا کی ضمانت کی مخالفت کرے گی۔

نئی دہلی : جے این یو کیمپس میں مبینہ طور پر ملک مخالف نعرے بازی کے ملزم طلبہ یونین کے صدر کنہیا کمار کی ضمانت کی درخواست پر دہلی ہائی کورٹ میں آج پھر سماعت ٹل گئی۔ اب 29 فروری کو عرضی پر سماعت ہوگی۔ کنہیا کو 12 فروری کو گرفتار کیا گیا تھا۔


آج سماعت محض 25 منٹ تک جاری رہی۔ اس دوران دہلی پولیس نے اسٹیٹس رپورٹ داخل کی۔ تاہم یہ رپورٹ کورٹ میں نہیں پڑھی گئی۔ دہلی پولیس نے کہا کہ وہ کنہیا کی دوبارہ پولیس ریمانڈ چاہتی ہے ۔ تاکہ عمر خالد کے سامنے بٹھاکر پوچھ گچھ کر سکے۔


اس سے قبل منگل کو عدالت نے دہلی پولیس کو اسٹیٹس رپورٹ داخل کرنے کی بات کہتے ہوئے سماعت کو ایک دن کے لئے ٹال دی تھی۔ وہیں دہلی پولیس کمشنر بی ایس بسی نے کہا کہ پولیس کنہیا کی ضمانت کی مخالفت کرے گی۔


گزشتہ روز دہلی پولیس کے وکیل تشار مہتا کے یہ کہنے پر کہ رپورٹ سیل بند لفافے میں دی جائے گی، عدالت نے کنہیا کے وکیل کو رپورٹ مہیا کرانے کو کہا۔ اس کے علاوہ دہلی پولیس کے ہی وکیل شیلیندر ببر نے کہا کہ پولیس کنہیا کی ضمانت کی مخالفت کرے گی۔ بتا دیں کہ اس سے پہلے پولیس کمشنر بی ایس بسی کہہ چکے ہیں کہ کنہیا کی ضمانت کی مخالفت نہیں کی جائے گی۔


اپنی ضمانت عرضی میں کنہیا نے دعوی کیا ہے کہ انہیں ثبوتوں کو درکنار کر ایک ایف آئی آر کی بنیاد پر غلط طریقے سے گرفتار کیا گیا۔ کنہیا کو 12 فروری کو گرفتار کیا گیا تھا۔ اس درمیان دہلی پولیس اور دہلی ہائی کورٹ کے رجسٹرار جنرل پٹیالہ ہاؤس عدالت کے احاطے میں 17 فروری کو ہوئے تشدد پر سپریم کورٹ کی مقرر کردہ کمیٹی سے اپنی رپورٹوں میں مختلف رائے رکھتے نظر آ رہے ہیں۔ یہ رپورٹ سپریم کورٹ کو سونپی گئی ہے۔


ذرائع نے بتایا کہ سینئر وکلاء کی چھ رکنی کمیٹی نے کہا ہے کہ غداری کے الزام میں گرفتار کئے گئے جے این یو طالب علم یونین کے صدر کنہیا کمار پر عدالت کے اندر اور باہر دونوں جگہوں پر حملہ ہوا۔ وکلاء کی اس رپورٹ پر کمیٹی کے ایک رکن نے دستخط نہیں کیا ہے جو اس معاملے میں دہلی پولیس کی نمائندگی کر رہے ہیں۔

First published: Feb 24, 2016 09:21 AM IST