உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Kanpur Clash: کانپور میں تصادم کے بعد چوکسی، نماز جمعہ سے قبل انسداد فسادات کی مشقیں

    کسی بھی ہنگامی صورتحال کی صورت میں فوری طور پر پولیس حکام سے رابطہ کریں

    کسی بھی ہنگامی صورتحال کی صورت میں فوری طور پر پولیس حکام سے رابطہ کریں

    پولیس ذرائع نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ ہفتہ تک پولیس اہلکاروں کی چھٹیاں بھی منسوخ کر دی گئی ہیں۔ اتر پردیش کے کانپور میں 3 جون کو ایک فرقہ وارانہ تنازعہ کے نتیجے میں فسادات پھوٹ پڑے تھے جو اب برطرف بی جے پی عہدیداروں کے مبینہ طور پر توہین آمیز تبصروں سے پیدا ہوا تھا۔

    • Share this:
      گوتم بدھ نگر پولیس نے بدھ کے روز کانپور میں فرقہ وارانہ تصادم (Kanpur Clash Effect) کے پیش نظر جمعہ کی نماز سے قبل انسداد فسادات کی مشقیں کیں۔ انہوں نے بتایا کہ انسداد فسادات میں پولیس اہلکاروں نے خصوصی پیناکا کمانڈوز کے ساتھ نوئیڈا اور گریٹر نوئیڈا کے مختلف فرقہ وارانہ حساس مقامات پر منعقد ہونے والی مشقوں میں حصہ لیا ہے۔

      پولیس ذرائع نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ ہفتہ تک پولیس اہلکاروں کی چھٹیاں بھی منسوخ کر دی گئی ہیں۔ اتر پردیش کے کانپور میں 3 جون کو ایک فرقہ وارانہ تنازعہ کے نتیجے میں فسادات پھوٹ پڑے تھے جو اب برطرف بی جے پی عہدیداروں کے مبینہ طور پر توہین آمیز تبصروں سے پیدا ہوا تھا۔

      پولیس کے ایک ترجمان نے کہا کہ نوئیڈا، سنٹرل نوئیڈا اور گریٹر نوئیڈا کے تین زونوں کے پولیس اہلکاروں نے پنکا کمانڈوز کے ساتھ انسداد فسادات کی مشقوں میں حصہ لیا ہے۔ ایک سینئر اہلکار کے مطابق کئی پولیس اہلکاروں کی چھٹیاں بھی منسوخ کر دی گئی ہیں۔ صورتحال کے پیش نظر ہفتہ تک سخت چوکسی ہوگی۔ پولیس حکام نے بدھ کو نماز جمعہ سے قبل ضلع بھر کے مذہبی رہنماؤں اور مبلغین کے ساتھ امن میٹنگیں بھی کیں۔

      مزید پڑھیں: امرناتھ یاترا 2022: سیکورٹی امور کا جائزہ لینے کی غرض سے پولیس کے اعلیٰ افسران خود کر رہے ہیں نگرانی

      مزید پڑھیں: UPI-Credit Card لنکنگ کا آر بی آئی نے آج کیا اعلان، کتنے ہونگے چارجز؟ جانیے تفصیلات

      ایک اہلکار نے کہا کہ مذہبی رہنماؤں اور برادریوں کے سربراہان اور نامور شخصیتوں سے کہا گیا ہے کہ وہ احتیاط برتیں اور کسی بھی قسم کی افواہوں سے گریز کریں تاکہ شرپسندوں کی طرف سے کسی بھی ناخوشگوار واقعے کو روکا جا سکے۔ ان سے کہا گیا ہے کہ وہ کسی بھی ہنگامی صورتحال میں فوری طور پر پولیس حکام سے رابطہ کریں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: