ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

پاسپورٹ بنوانا ہوا مزید آسان ، جانئے کیا ہیں نئے قوانین

حکومت نے پاسپورٹ کے لئے نئے قوانین جاری کئے ہیں ۔ وزیر مملکت برائے وی کے سنگھ نے نئے قوانین کا اعلان کیا۔ حکومت نے درخواست دہندگان کی سہولت کے پیش نظر کئی فیصلے کئے ہیں۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Dec 25, 2016 07:05 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
پاسپورٹ بنوانا ہوا مزید آسان ، جانئے کیا ہیں نئے قوانین
فائل فوٹو

نئی دہلی : حکومت نے پاسپورٹ کے لئے نئے قوانین جاری کئے ہیں ۔ وزیر مملکت برائے وی کے سنگھ نے نئے قوانین کا اعلان کیا۔ حکومت نے درخواست دہندگان کی سہولت کے پیش نظر کئی فیصلے کئے ہیں۔ پاسپورٹ کے لئے انیکچرس کی تعداد بھی 15 سے کم کرکے 9 کر دی گئی ہے۔

آئیے ہم آپ کو بتاتے ہیں کیا ہیں پاسپورٹ کے نئے قوانین

پاسپورٹ ایکٹ 1980 کے موجودہ دفعات کے مطابق 26 جنوری 1989 کو یا پھر اس کے بعد پیدا ہونے والے درخواست دہندگان کو پیدائش کے ثبوت کے طور پر پیدائش کا سرٹیفکیٹ دینا لازمی ہوتا تھا، اب تاریخ پیدائش کے لئے اسکول کی ٹی سی ، پین کارڈ پر درج تاریخ پیدائش، آدھار کارڈ پر درج تاریخ پیدائش، ڈرائیونگ لائسنس، ووٹر شناختی کارڈ اور انشورنس پالیسی پر درج تاریخ پیدائش کو قابل قبول مانا جائے گا۔

اب پاسپورٹ کی درخواست میں والدین میں سے کسی ایک کا نام یا قانونا سرپرست کا نام دینا ہی ضروری ہوگا۔ اس نئی ترمیم سے اب سنگل پیرنٹ بھی اپنے بچوں کے لئے پاسپورٹ کیلئے آسانی سے فارم جمع کر سکیں گے۔ وزارت خارجہ اور خواتین اور بہبود اطفال کی وزارت کے ارکان والی بین وزارتی کمیٹی نے اس بات پر زور دیا ہے کہ اکیلی ماں کے معاملہ میں باپ کے نام کا ذکر نہیں کیا جائے اور گود لیے بچے کو بھی منظوری دی جائے۔

شادی شدہ لوگوں کو اب شادی سرٹیفکیٹ یا انیکچر کے دینے کی ضرورت نہیں ہے۔

یتیم بچے ، جن کے پاس پیدائش کا سرٹیفکیٹ یا تاریخ پیدائش والی مارك شيٹ نہیں ہے ، وہ اپنے یتیم خانہ یا انسٹی ٹیوٹ کے لیٹر پیڈ پر سربراہ کے دستخط کے ساتھ تاریخ پیدائش دے سکتے ہیں۔
حکومت نے سادھوؤں اور سنياسيوں کے اس مطالبہ کو بھی قبول کر لیا ہے کہ ان کو ماں باپ کی بجائے اپنے گرو لکا نام لکھنے کا اجازت دی جائے ۔ سادھو اور سنياسيوں کو یہ سہولت فراہم کر دی گئی ہے، لیکن انہیں کم از کم ایک سرکاری کاغذ جمع کرنے ہوں گے۔
First published: Dec 25, 2016 07:05 PM IST