ہندوستان میں لیلۃ القدر 2023 کی رات: لیلۃ القدر سے کیا مراد ہے اور اسے کون سی راتوں میں تلاش کرنا چاہیے؟

ہندوستان میں لیلۃ القدر 2023 کی رات

ہندوستان میں لیلۃ القدر 2023 کی رات

شب قدر کی تعیین نہیں کی گئی ہے۔ لہذا ان پانچ طاق راتوں میں ہی شب قدر کو تلاش کرنا چاہئے۔ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو خواب میں دکھا دیا گیا تھا کہ یہ کون سی رات ہے۔ آپ اپنے ساتھیوں کو یہ بتانے کے لیے مسجد نبوی میں آئے۔ یہاں دیکھا کہ دو لوگ آپس میں جھگڑ رہے ہیں۔ آپ ان کا جھگڑا ختم کرانے میں لگ گئے اور اس دوران آپ یہ بھول گئے کہ وہ کون سی رات تھی جس کے بارے میں خواب میں آپ کو بتایا گیا تھا۔

  • News18 Urdu
  • Last Updated :
  • New Delhi, India
  • Share this:
    لیلۃ القدر جسے شب قدر کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، اسلامی کیلنڈر کی اہم ترین راتوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے کیونکہ مسلمان اسے رمضان کی رات مانتے ہیں (Ramazan, Ramzaan or Ramzan) جب قرآن کی پہلی آیت حضرت جبرائیل علیہ السلام کے ذریعے اللہ کی طرف سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پر نازل ہوئیں۔ لیلۃ القدر کی صحیح تاریخ معلوم نہیں ہے لیکن خیال کیا جاتا ہے کہ یہ رمضان المبارک کی آخری دس راتوں میں واقع ہوتی ہے، خاص طور پر طاق راتوں میں، جیسے ماہ مقدس کی 21ویں، 23ویں، 25ویں، 27ویں یا 29ویں رات میں سے کوئی ایک رات ہو سکتی ہے۔

    مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ اس رات میں کی جانے والی عبادت اور نیک اعمال سال کی کسی دوسری رات کی نسبت زیادہ قیمتی ہیں اور اس طرح کے اعمال کا اجر کئی گنا بڑھ جاتا ہے۔ دنیا بھر کے مسلمان اضافی عبادات، تلاوت قرآن اور خیراتی کاموں میں مشغول ہو کر لیلۃ القدر کا مشاہدہ کرتے ہیں جبکہ بہت سے لوگ اللہ سے مغفرت اور برکت کے حصول کے لیے رات میں عبادت اور غور و فکر میں بھی گزارتے ہیں۔

    قرآن میں سورۃ القدر (97:1-5) میں لیلۃ القدر کا حوالہ دیا گیا ہے، جس میں کہا گیا ہے:

    اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے، بیشک ہم نے اس (قرآن) کو شب قدر (لیلۃ القدر) میں نازل کیا ہے اور آپ کو کیا معلوم کہ شب قدر کیا ہے؟ شب قدر ہزار مہینوں سے بہتر ہے، اس میں فرشتے اور روح (جبریل) اللہ کے حکم سے تمام احکام اور سلامتی کے ساتھ طلوع فجر تک اترتے ہیں۔"

    یہ آیات اسلامی عقیدے میں لیلۃ القدر کی اہمیت اور اہمیت کی نشاندہی کرتی ہیں۔ لیلۃ القدر کی اہمیت اور ثواب کا ذکر کرنے والی متعدد احادیث (رسول اللہ ﷺ کے ارشادات) ہیں۔ ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے شب قدر میں ایمان کے ساتھ اور اللہ تعالیٰ سے ثواب کی امید رکھتے ہوئے (نماز کے لیے) قیام کیا تو اس کے پچھلے تمام گناہ معاف کر دیے جائیں گے۔ " (صحیح بخاری)

    'میرے بھائی کی مدد کیلئے کوئی نہیں....'، وائناڈ میں جذباتی ہوئیں پرینکا گاندھی، عوام کو بتایا فیملی

    سنسنی خیز: پارٹنر کو خوش کرنے کیلئے شادی شدہ خاتون نے نابالغ بھتیجی کے ساتھ کیا ایسا خوفناک کام، جان کر اڑجائیں گے ہوش!

    ماہ صیام میں بجلی کی عدم دستیابی سے عوام دوگنا پریشان، تلیل کا کلشے علاقہ بجلی سے محروم

    رمضان 2023: رمضان کے آخری 10 راتوں کی فضیلت اور اہمیت

    ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: لیلۃ القدر کو رمضان کے آخری عشرہ کی طاق راتوں میں تلاش کرو۔ (صحیح بخاری)۔ ان احادیث میں لیلۃ القدر کے موقع پر استغفار اور نیک اعمال کرنے کی اہمیت پر زور دیا گیا ہے اور ایسا کرنے سے حاصل ہونے والے بے پناہ اجر وثواب پر زور دیا گیا ہے۔

    شب قدر کی تعیین نہیں کی گئی ہے۔ لہذا ان پانچ طاق راتوں میں ہی شب قدر کو تلاش کرنا چاہئے۔ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو خواب میں دکھا دیا گیا تھا کہ یہ کون سی رات ہے۔ آپ اپنے ساتھیوں کو یہ بتانے کے لیے مسجد نبوی میں آئے۔ یہاں دیکھا کہ دو لوگ آپس میں جھگڑ رہے ہیں۔ آپ ان کا جھگڑا ختم کرانے میں لگ گئے اور اس دوران آپ یہ بھول گئے کہ وہ کون سی رات تھی جس کے بارے میں خواب میں آپ کو بتایا گیا تھا۔

    ہندوستان میں مسلمان لیلۃ القدر کی تلاش 12 اپریل 2023 بروز بدھ سے شروع کریں گے جو کہ رمضان المبارک کی 21ویں رات ہوگی۔ 14، 16، 18 اور 20 اپریل کو بالترتیب رمضان 2023 کی 23ویں، 25ویں، 27ویں اور 29ویں راتیں ہوں گی۔ شب قدر کی یہ راتیں بھی وہ وقت ہوتی ہیں جب مسلمان اپنی عبادات اور اعمال صالحہ میں اضافہ کرتے ہیں کیونکہ خیال کیا جاتا ہے کہ رمضان المبارک میں تمام شیطانوں کو جہنم کی زنجیروں میں جکڑ دیا جاتا ہے، اللہ سے دعاؤں میں مصروف رہنے والوں کو کوئی تنگ نہیں کر سکتا۔ جس طرح جنت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں اور جہنم کے دروازے شیطانوں کے ساتھ بند کر دیے جاتے ہیں۔

    اسے شب قدر کہا جاتا ہے کیونکہ بعض اسلامی علماء نے 'قدر' کے معنی 'طاقت' کے طور پر بیان کیے ہیں، جو اس رات کی عظمت اور قدرت کی طرف اشارہ کرتے ہیں جہاں اس رات میں کیے گئے نیک اعمال ان سے کہیں زیادہ طاقتور ہوتے ہیں۔ کسی اور رات کو؟ اسے شب قدر بھی کہا جاتا ہے کیونکہ بعض اسلامی علماء نے 'قدر' کو 'تقدیر/حکم' سے تعبیر کیا ہے کیونکہ یہ وہ رات ہے جس میں ہر شخص کی تقدیر کا فیصلہ کیا جاتا تھا یعنی کسی شخص کی روزی، عمر اور اس کے دیگر اہم معاملات۔ نیکی اور بدی اور یہاں تک کہ حاجی کے حج پر آنے والے سال کے لیے مہر لگا دی جائے گی کیونکہ اللہ تعالیٰ فیصلہ کرے گا کہ فلاں فلاں حج کرے گا۔

    لہٰذا شب قدر عمر، اعمال، تخلیق اور رزق کے تمام امور کی نشان دہی کرتی ہے جو رمضان کے مہینے میں لیلۃ القدر پر فرض کی گئی ہیں اور آنے والے سال میں پوری ہوں گی۔
    Published by:sibghatullah
    First published: