உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    لیفٹیننٹ گورنر کے خط کے بعداروند کیجریوال کا دھرنا ختم، افسران اوروزیراعلیٰ کے مابین ہوگی میٹنگ

    ایل جی انل بیجل کی فائل فوٹو

    ایل جی انل بیجل کی فائل فوٹو

    دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر انل بیجل نے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال سے اپیل کی ہے کہ وہ سکریٹریٹ میں آئی اے ایس افسران سے ملاقات کریں، جس سے دونوں فریق دہلی کی عوام کی بھلائی کے لئے کسی فیصلے پر پہنچ سکیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر انل بیجل نے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال سے اپیل کی ہے کہ وہ سکریٹریٹ میں آئی اے ایس افسران سے ملاقات کریں، جس سے دونوں فریق دہلی کی عوام کی بھلائی کے لئے کسی فیصلے پر پہنچ سکیں۔

      لیفٹیننٹ گورنر کے خط کے بعد وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے اپنا دھرنا ختم کردیا ہے۔ وہ گزشتہ 9 دنوں سے ایل جی ہاوس کے ویٹنگ روم میں ڈٹے ہوئے تھے۔ واضح رہے کہ اسپتال سے ڈسچارج ہونے کے بعد نائب وزیراعلیٰ منیش سسودیا نے منگل سے ہی اپنا کام سنبھال لیا ہے۔

      راج نواس کی طرف سے پریس ریلیز جاری کرکے اس سے متعلق جانکاری دی گئی۔ لیفٹیننٹ گورنر نے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال سے کہا ہے کہ وہ افسران اور اپنی حکومت کے درمیان اعتماد برقرار رکھنے کی سمت میں کام کریں۔

      انہوں نے لکھا کہ انہیں اس بات کی خوشی ہے کہ وزیراعلیٰ نے ٹوئٹر کے ذریعہ افسران سے کام پر لوٹنے کی اپیل کی ہے اور ساتھ ہی ساتھ ان کی سیکورٹی کو یقینی بنانے کی یقین دہانی بھی کرائی ہے۔

      لیفٹیننٹ گورنر نے لکھا کہ اروند کیجریوال کی اپیل کا افسران نے خیر مقدم کیا ہے اور وہ سکریٹریٹ میں ان کی موجودگی کا انتظار کررہے ہیں تاکہ وہ ان سے بات چیت کرسکیں۔ ایل جی نے وزیراعلیٰ سے اپیل کی ہے کہ وہ جلد از جلد سکریٹریٹ میں افسران سے ملاقات کریں تاکہ دونوں فریق ایک دوسرے کے سامنے اپنی اپنی بات رکھ سکیں اور اس حالات کا حل نکالا جاسکے۔ ایل جی نے لکھا کہ اسی میں دہلی کی عوام کی بھلائی ہے۔

      اروند کیجریوال نے منگل کو ٹوئٹر کے ذریعہ وزیراعظم مودی کی خاموشی پر سوال اٹھایا تھا۔ انہوں نے ٹوئٹ میں لکھا ’’ہم نے عزت مآب لیفٹیننٹ گورنر کو خط لکھا اور میٹنگ کی درخواست کی۔ ہم لیفٹیننٹ گورنر کے جواب کا انتظار کررہے ہیں۔ عزت مآب لیفٹیننٹ گورنر وزیراعظم کے گرین سگنل کاانتظار کررہے ہیں، جنہیں فیصلہ لینا ہے۔ پوری دہلی وزیراعظم کے فیصلے کا انتظار کررہی ہے‘‘۔
      First published: