உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    لیفٹیننٹ جنرل ڈی ایس ہڈا کا دعویٰ- وزیراعظم مودی سے قبل بھی ہوئی تھیں سرجیکل اسٹرائیک

    لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) ڈی ایس ہڈا (فائل فوٹو)۔

    لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) ڈی ایس ہڈا (فائل فوٹو)۔

    گزشتہ دنوں کانگریس نے دعویٰ کیا تھا کہ منموہن سنگھ کی حکومت کے دوران 6 سرجیکل اسٹرائیک کی گئی تھیں۔

    • Share this:
      لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) ڈی ایس ہڈا نے دعویٰ کیا ہے کہ ہندوستانی فوج مودی حکومت کے آنے سے قبل بھی سرجیکل اسٹرائیک کرتی رہی ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہندوستانی فوج کا نام انتخابی تشہیرمیں استعمال کیا جانا اچھی بات نہیں ہے۔ واضح رہے کہ سال 2016 میں اڑی حملے کے بعد پاکستان میں ہوئی سرجیکل اسٹرائیک میں ہڈا نے کافی اہم کردارادا کیا تھا۔

      گزشتہ سال فروری میں انہوں نے یہ دعوی کرکے تہلکہ مچا دیا تھا کہ اڑی حملے کے بعد ہوئی سرجیکل اسٹرائیک کو سیاسی رنگ دینے کی کوشش کی جارہی ہے۔ واضح رہے کہ ڈی ایس ہڈا اس سال کانگریس کی اس ٹاسک فورس میں شامل ہوگئے تھے، جو ملک کی سیکورٹی پروژن ڈاکیومنٹ تیارکررہی تھی۔

      ڈی ایس ہڈا سے جب کانگریس کے اس دعوے کے بارے میں پوچھا گیا کہ یوپی اے حکومت کے دوراقتدارمیں بھی کیا 6 سرجیکل اسٹرائیک ہوئی تھیں تو انہوں نے کہا 'فوج نے ایسا پہلے بھی کیا ہے، لیکن مجھے اس کی تاریخ اوریہ کن علاقوں میں ہوئی اس کے بارے میں ٹھیک ٹھیک معلوم نہیں ہے'۔

      واضح رہے کہ ان دنوں ملک میں سرجیکل اسٹرائیک کولے کرمسلسل بیان بازی چل رہی ہے۔ گزشتہ دنوں کانگریس نے دعویٰ کیا تھا کہ منموہن سنگھ کی حکومت کے دوران 6 سرجیکل اسٹرائیک کی گئی تھیں۔ سابق وزیراعظم منموہن سنگھ نے الزام لگایا تھا کہ بی جے پی انتخابی فائدے کےلئے ملٹری آپریشن کی بات کررہی ہے جو کہ شرمناک ہے۔

       جھوٹ بول رہی ہے کانگریس

      فوج کےسابق سربراہ جنرل وی کے سنگھ نے دعویٰ کیا ہے کہ کانگریس سرجیکل اسٹرائیک کے موضوع پرجھوٹ بول رہی ہے۔ جنرل وی کے سنگھ کے مطابق ان کی مدت کارمیں کبھی بھی کوئی سرجیکل اسٹرائیک نہیں ہوئی۔ انہوں نے کہا تھا 'کانگریس کوجھوٹ بولنے کی عادت ہے، کیا آپ مجھے بتا سکتے ہیں کہ میری مدت کارمیں کس سرجیکل اسٹرائیک کی آپ بات کررہے ہیں۔ مجھے ایسا لگ رہا ہے کہ آپ نے کوئی نئی کہانی بنا دی ہے'۔

      وزیراعظم مودی نے دعوں پربھی اٹھائے سوال

      وزیراعظم نریندرمودی نے جمعہ کو ایک ریلی میں کہا 'اے سی کمروں میں بیٹھ کرکاغذ پرسرجیکل اسٹرائیک کانگریس ہی کرسکتی ہے۔ پہلے انہوں نے کہا کہ اہم نے تین بارسرجیکل اسٹرائیک کی، کل کہا کہ ہم نے 6 بارکی۔ اب کچھ دن میں کہہ دیں گے کہ ہم نے ہرروز اسٹرائیک کی۔ الیکشن ختم ہوتے ہوتے یہ تعداد 600 تک پہنچ جائے گی۔ مجھے لگتا ہے کہ یہ لیڈرویڈیو گیم کھیلتے ہیں اورشاید سرجیکل اسٹرائیک کوگیم مان کرآنند لیتے ہیں'۔
      First published: