உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دہشت گردی ایک عالمی مسئلہ ہے، ہندستانی مسلمانوں کو دنیا بھرمیں عزت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے: محبوبہ مفتی

    جموں و کشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی: فائل فوٹو۔

    جموں و کشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی: فائل فوٹو۔

    جموں۔ جموں وکشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے دہشت گردی کو عالمی مسئلہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ کسی ایک خطے یا ملک تک محدود نہیں ہے اور بین الاقوامی سطح پر مختلف ممالک متحد ہو کر اس دہشت گردی کے خطرے سے نمٹ رہے ہیں۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      جموں۔  جموں وکشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے دہشت گردی کو عالمی مسئلہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ کسی ایک خطے یا ملک تک محدود نہیں ہے اور بین الاقوامی سطح پر مختلف ممالک متحد ہو کر اس دہشت گردی کے خطرے سے نمٹ رہے ہیں۔انہوں نے امریکہ و ایران کی مصالحت کا ذکر کرتے ہوئے کہا ’ دہشت گردی ایک عالمی مسئلہ ہے جو دنیا کے طو ل و عرض ،یہاں تک کہ یورپ تک اپنے پنجے پھیلا رہا ہے۔میرا خیا ل ہے کہ امیر وغریب میں بڑھتی تفاوت اور روزگار کی عدم دستیابی سے غیر یقینیت پیدا ہو رہی ہے جس کادور حاضر میں مشاہدہ کر رہے ہیں‘۔ محبوبہ مفتی نے ان خیالات کا اظہار جمعہ کے روز جموں خطہ کے ضلع ادھم پور میں ایک عوا می اجتماع اور راحت پروجیکٹ کے تحت 56 چھوٹے پلوں کا ای افتتاح کرنے کے موقع پر نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے اسلام کو امن اور صبر و برداشت کا مذہب قرار دیتے ہوئے کہاکہ مسلمانوں کی اکثریت بشمول بھارتی مسلمان پُر امن بقاء باہمی میں یقین رکھتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ یہی وجہ ہے کہ عالمی سطح پر مسلمانوں پر شک و شبہ کے بادل منڈلانے کے باوجود بھارتی مسلمانوں کو دنیا بھرمیں عزت و توقیرکی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔انہوں نے کہا ’ شام ، لیبیااور پاکستان کے لاچار لوگوں کو بغیر کسی غلطی کے تشدد کے گرد آب میں پھنسادیکھ کر مجھے کافی تکلیف ہوتی ہے‘۔


      وزیر اعلیٰ نے ہند و پاک کے مابین حالیہ خارجہ سیکرٹری سطح کی بات چیت کا خیر مقدم کیا۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ہمسایہ ملکوں کا قریب آکر بامعنی مذاکرات شروع کرنا جموں کشمیر کے لئے سود مند ثابت ہوگا۔انہوں نے کہا ’ مجھے امید ہے دونوں ہمسایہ ملکوں کے مابین یخ پگھلے گی تاکہ خطے میں پائیدار امن کا قیام ممکن ہوسکے ‘۔ محبوبہ مفتی نے کہا کہ پٹھان کوٹ حادثے کے باوجود جب دونوں ملکوں نے بات چیت بڑھانے کی کوشش سے مجھے کافی خوشی ہوئی ، اس سے ثابت ہوتا ہے کہ دونوں ہمسایہ ملک خطے میں پائیدار امن کے قیام کے لئے پرعزم ہیں۔ پلوں کو دیہی بنیادی ڈھانچے کا کلیدی عنصر قرار دیتے ہوئے محترمہ محبوبہ نے اس موقع پر ریاست کے دور دراز اور دشوار گزار علاقوں میں رہنے والے لوگوں کی حالت زندگی بہتر بنانے اور مسافتیں کم کرنے کے لئے ایک نئی شروعات کا وعدہ کیا۔


      انہوں نے محکمہ دیہی ترقی اور ضلع ترقیاتی کمشنر اودھم پور کو کنورجنس ماڈل اختیار کر کے ایک نئی روایت قائم کرنے کے لئے مبارکباد دی ۔ انہوں نے کہا ’ آج ہم اس خواب کی تعبیر دیکھ رہے ہیں جو ضلع ترقیاتی بورڈ میٹنگوں میں مفتی صاحب نے دیکھا تھا جو پائیدار بنیادی ڈھانچے کے قیام کیلئے کنورجنس ماڈل اختیار کرنے پر زور دیتے تھے‘۔  زیرا علیٰ نے کہا کہ ادھم پور ضلع نے کنورجنس سکیم کی عمل آوری کا ایک نمونہ پیش کیا ہے جس سے کروڑوں روپے کی املاک قائم کی جاسکتی ہیں۔

      First published: