உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شہریت ترمیمی قانون ، دہلی فساد ات ، این آرسی جیسے موضوعات سے دہلی میں مجلس اتحاد المسلمین کو آس

    شہریت ترمیمی قانون ، دہلی فساد ات ، این آرسی جیسے موضوعات سے دہلی میں مجلس اتحاد المسلمین کو آس

    AIMIM Meeting In Delhi : خاص بات یہ ہے کہ دہلی انچارج اور رکن پارلیمنٹ امتیاز جلیل کے ذریعہ لی گئی جائزہ میٹنگ میں دہلی فسادات اور این اسی آر ، شہریت ترمیمی قانون جیسے موضوعات میٹنگ میں گونجتے رہے ۔

    • Share this:
    نئی دہلی : دہلی میں آئندہ سال اپریل میں کارپویشن انتخابات متوقع ہیں ۔ انتخابات کو دیکھتے ہوئے مجلس اتحاد المسلمین بھی دہلی میں تیاریوں لگی ہوئی ہے ۔ اس سلسلے میں کارکنان اور بڑے رہنماﺅں کی میٹنگوں کا دور چل رہا ہے ۔ خاص بات یہ ہے کہ دہلی انچارج اور رکن پارلیمنٹ امتیاز جلیل کے ذریعہ لی گئی جائزہ میٹنگ میں دہلی فسادات اور این اسی آر ، شہریت ترمیمی قانون جیسے موضوعات میٹنگ میں گونجتے رہے ۔ اطلاعات کے مطابق ان موضوعات پر مجلس کے لیڈران کافی انحصار کرتے نظرآرہے ہیں ۔ مجلس لیڈران کو امید ہے کہ مسلم اکثریتی علاقوں میں یہ موضوعات مجلس کے لئے سیاسی زمین ہموار کریں گے ۔

    تفصیلات کے مطابق امتیاز جلیل کی رہائش گاہ پر پارٹی لیڈران کے کور گروپ کی میٹنگ ہوئی ہے ، جس میں دہلی انچارج امتیاز جلیل نے پارٹی کارکنان پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ اپنا جائزہ لیتے رہنا اور احتساب کرتے رہنا ہمیشہ فائدے مند ہوتا ہے۔ جو پارٹیاں اپنا جائزہ لیتی رہتی ہیں ، وہ ہمیشہ آگے بڑھتی رہتی ہیں۔ آج کی میٹنگ میں ہم دہلی میں الیکشن کی تیاریوں کے جائزے کے ساتھ ہی شمالی ہند میں مجلس کی توسیع و استحکام پر بھی مشورہ کریں گے۔ انھوں نے کہا کہ الیکشن قریب ہے۔ دہلی میں مجلس کے لیے فضا ہموار ہے ، اگر ہم عقل و شعور سے کام لے آگے بڑھے تو بہتر نتائج بر آمد ہوں گے۔

    صدر مجلس دہلی کلیم الحفیظ نے کارگزاری پیش کرتے ہوئے کہا کہ عام آدمی پارٹی سے مسلمان دہلی فسادات، سی اے اے اور این آر سی پر دوہرے رویہ اور تبلیغی جماعت پر وزیر اعلیٰ کے تبصرے کو لیکر بہت ناراض ہیں ۔ کانگریس اپنا وجود کھوچکی ہے ۔ بی جے پی کی نفرت پر مبنی پالیسی کی وجہ سے مسلمان اس کا نام بھی سننا گوارہ نہیں کرتا۔ اس لیے دہلی میں لوگ کسی متبادل کی تلاش میں ہیں اور مجلس متبادل بنے گی۔ مجلس کے کارکنان کندھے سے کندھا ملا کر کام کررہے ہیں۔ ہمیں امید ہے کہ مجلس دہلی میں اچھا مظاہرہ کرے گی۔ دہلی انچارج نے اب تک کے کاموں پر اطمینان کا اظہار کیا۔ انھوں نے کہا کہ کبھی کبھی ذرا سی غلطی نتیجے کو پلٹ دیتی ہے۔ اپنا جائزہ لیتے رہنا اور احتساب کرتے رہنا ہمیشہ فائدے مند ہوتا ہے۔ جو پارٹیاں اپنا جائزہ لیتی رہتی ہیں وہ اپنی کمزوریوں پر بروقت قابو پالیتی ہیں۔ہمیں ہر قدم سوچ سمجھ کر اٹھاناہے۔ سخت فیصلے بھی لینے پڑیں تو لینا ہیں۔ پارٹی میں ڈسپلن شکنی برداشت نہیں کرنا ہے۔

    امتیاز جلیل نے کہا کہ ہم میں سے ہر شخص مجلس کا سپاہی ہے، ہمیں کسی عہدے اور منصب سے اوپر اٹھ کر کام کرنے کی ضروروت ہے ۔ مہاراشٹر، گجرات اور بہار کے حوصلہ افزا نتائج کے بعد اب ہم شمالی ہند کی دوسری ریاستوں میں بھی مجلس کی شاخوں کو مستحکم کریں گے ، اس کے لیے جلد ہی نیشنل سطح پر ایک ٹیم بنائی جائے گی ۔ میٹنگ سے قبل کلیم الحفیظ کی قیادت میں امتیاز جلیل کو عالمی شہرت یافتہ یونیورسٹی جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی کے کورٹ کا ممبر بننے پر ذمہ داران نے مبارکباد دی اورشال پہناکر نیز گل دستہ پیش کرکے عزت افزائی کی ۔

    میٹنگ میں شاہ عالم (جنرل سیکریٹری) ، بلیغ الزماں نعمانی(جنرل سیکریٹری) ، عبد الغفار صدیقی (آرگنائزیشن سیکریٹری) ، اقبال انور نقوی (سیکریٹری) ، ریحان شیخ (سیکریٹری) ، راجیو ریاض (سیکریٹری) اور جوائنٹ سیکڑیٹریز عارف سیفی، فہمید حسن، اصغر علی انصاری، محمد ساجد عرف بوبی، نیز ایگزیکیٹیو ممبران میں سے فیروز ملک، امیرالدین اور فیروز خان شریک ہوئے۔ اس موقع پر آئی ٹی سیل کے انچارج معروف خان اور مجلس کلچرل ونگ کے کنوینر محمد قاسم عثمانی بھی موجود تھے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: