உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Malegaon blast case: مالیگاؤں دھماکہ کیس کا گواہ دشمنی میں بدل گیا، کہا ’ATS کو کبھی بیان نہیں دیا‘

    اسپیشل پبلک پراسیکیوٹر اویناش رسل نے عدالت سے انہیں مخالف قرار دینے کی اجازت طلب کی

    اسپیشل پبلک پراسیکیوٹر اویناش رسل نے عدالت سے انہیں مخالف قرار دینے کی اجازت طلب کی

    ہندوستان ٹائمز کی ایک رپورٹ کے مطابق مالیگاؤں میں 29 ستمبر 2008 کو ایک مسجد کے قریب موٹرسائیکل پر نصب دھماکہ خیز مواد پھٹنے سے چھ افراد ہلاک اور 100 سے زائد زخمی ہوئے۔

    • Share this:
      مالیگاؤں 2008 کے دھماکہ کیس (Malegaon 2008 blast case) میں ایک گواہ نے یہ دعویٰ کرتے ہوئے دشمنی اختیار کی کہ اس نے ریاستی اے ٹی ایس (state ATS) کو کبھی بیان نہیں دیا۔ اے ٹی ایس نے ملزم لیفٹیننٹ کرنل پرساد پروہت (Lt Col Prasad Purohit) سے مبینہ طور پر جڑے ابھینو بھارت ٹرسٹ (Abhinav Bharat Trust) کے سلسلے میں ان کا بیان اپنی چارج شیٹ میں شامل کیا تھا۔

      مذکورہ گواہ نے پیر کے روز عدالت کو بتایا کہ اگرچہ وہ پروہت کو جانتا تھا، لیکن اس نے وہ بیان نہیں دیا جو اے ٹی ایس چارج شیٹ کا حصہ ہے۔ اس نے عدالت کو یہ بھی بتایا کہ 2008 میں اسے اے ٹی ایس نے تقریباً ایک ماہ تک غیر قانونی حراست میں رکھا اور انہیں اور ان کے اہل خانہ کو ہراساں کیا گیا۔

      مزید پڑھیں: 

      انہوں نے کہا کہ انہوں نے کسی بھی حکام سے شکایت نہیں کی کیونکہ انہیں ملوث ہونے کی دھمکی دی گئی تھی۔ اسپیشل پبلک پراسیکیوٹر اویناش رسل نے عدالت سے انہیں مخالف قرار دینے کی اجازت طلب کی کیونکہ وہ استغاثہ کی حمایت نہیں کرتے تھے۔

      مزید پڑھیں: 


      ہندوستان ٹائمز کی ایک رپورٹ کے مطابق مالیگاؤں میں 29 ستمبر 2008 کو ایک مسجد کے قریب موٹرسائیکل پر نصب دھماکہ خیز مواد پھٹنے سے چھ افراد ہلاک اور 100 سے زائد زخمی ہوئے۔ بھارتیہ جنتا پارٹی کی رکن پارلیمنٹ پرگیہ سنگھ ٹھاکر ان لوگوں میں شامل ہیں جو نومبر 2018 میں شروع ہونے والے مقدمے کا سامنا کر رہے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: