உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Mukesh Ambani: مکیش امبانی کو دھمکی آمیز کال! ملزم 4 دن کی پولیس حراست میں!

    آخر کار مبینہ ملزم کو ڈھونڈ نکالا اور اسے حراست میں لے لیا۔

    آخر کار مبینہ ملزم کو ڈھونڈ نکالا اور اسے حراست میں لے لیا۔

    خوف کے بعد امبانی کے پوش گھر اینٹیلیا (Antilia) کے ارد گرد سیکورٹی بڑھا دی گئی، جو جنوبی ممبئی کے کمبلا ہل علاقے میں الٹاماؤنٹ روڈ پر واقع ہے۔ علاقے میں پرائیویٹ سیکیورٹی کے ساتھ پولیس کی نفری بڑھا دی گئی۔

    • Share this:
      ریلائنس (Reliance) کے چیئرمین مکیش امبانی (Mukesh Ambani) کو متعدد دھمکی آمیز کال موصول ہونے کے بعد کل حراست میں لیے گئے 56 سالہ ملزم کو 20 اگست تک پولیس کی تحویل میں بھیج دیا گیا ہے۔ پولیس کے مطابق ملزم جنوبی ممبئی میں زیورات کی دکان چلاتا ہے۔ اس شخص کی شناخت وشنو بھومک (Vishnu Bhowmik) کے نام سے کی گئی ہے جسے کل ممبئی کے مضافاتی دہیسر سے حراست میں لیا گیا تھا اور مبینہ طور پر اسے ڈی بی مارگ پولیس اسٹیشن منتقل کردیا گیا تھا۔ پولیس کے مطابق ملزم نے صنعتکار مکیش امبانی اور ان کے اہل خانہ کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دیتے ہوئے کئی کالز کی تھیں۔

      عہدیداروں نے بتایا کہ یوم آزادی پر صبح 10:45 بجے شروع ہونے والے ایک نمبر سے مبینہ طور پر کم از کم آٹھ کالیں موصول ہوئیں۔ ریلائنس فاؤنڈیشن اسپتال (Reliance Hospital) میں کالیں کی گئیں جس کے بعد حکام نے ڈی بی مارگ پولیس اسٹیشن میں شکایت درج کی۔ اس کے بعد پولیس نے کال کرنے والے کی لوکیشن کا پتہ لگایا اور آخر کار مبینہ ملزم کو ڈھونڈ نکالا اور اسے حراست میں لے لیا۔

      ایک بیان میں ایچ این ریلائنس ہسپتال کے سی ای او ڈاکٹر ترنگ گیان چندانی (Dr Tarang Gianchandani) نے کہا کہ ہسپتال میں پرچم کشائی کی تقریب کے فوراً بعد کالیں موصول ہوئیں۔ ابتدائی تحقیقات کے مطابق بھومک دوبارہ مجرم ہے جس نے ماضی میں بھی اسی طرح کی کالیں موصول ہوئی تھیں۔ عہدیدار نے یہ بھی کہا کہ پولیس ابھی تک یہ معلوم نہیں کرسکی ہے کہ بھومک ذہنی طور پر غیر مستحکم تھا یا وہ کوئی مرض میں متبلا تھا۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      خوف کے بعد امبانی کے پوش گھر اینٹیلیا (Antilia) کے ارد گرد سیکورٹی بڑھا دی گئی، جو جنوبی ممبئی کے کمبلا ہل علاقے میں الٹاماؤنٹ روڈ پر واقع ہے۔ علاقے میں پرائیویٹ سیکیورٹی کے ساتھ پولیس کی نفری بڑھا دی گئی۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: