ہوم » نیوز » No Category

آخر کیوں کروڑوں خرچ کے باوجود مانس اسکیم گری اوندھے منہ

دہلی : وزارت اقلیتی امور کی مولانا آزاد نیشنل اکیڈمی فاراسکل اسکیم (مانس ) جس کا کبھی زور شور سےآغاز ہوا تھا اوندھے منہ گر رہی ہے۔

  • ETV
  • Last Updated: Apr 21, 2016 11:42 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
آخر کیوں کروڑوں خرچ کے باوجود مانس اسکیم گری اوندھے منہ
دہلی : وزارت اقلیتی امور کی مولانا آزاد نیشنل اکیڈمی فاراسکل اسکیم (مانس ) جس کا کبھی زور شور سےآغاز ہوا تھا اوندھے منہ گر رہی ہے۔

دہلی : وزارت اقلیتی امور کی مولانا آزاد نیشنل اکیڈمی فاراسکل اسکیم (مانس ) جس کا کبھی زور شور سےآغاز ہوا تھا اوندھے منہ گر رہی ہے۔ سلطانہ اور ستارہ یہ دو نام ہیں ان لڑکیوں کے جو ان طالب علموں میں شامل رہی ہیں، جنہوں نے مانس کے تحت ٹریننگ لی ، لیکن نہ تو ان کو سرٹیفکیٹ ہی ملا اور نہ ہی نوکری۔ انکی بتائی باتیں اقلیتی امورکی وزارت کے اس دعوے کو جھوٹا ثابت کر رہی ہیں ، جس میں محکمہ دعویٰ کرتا ہے کہ وہ اقلیتوں کی ترقی کے لئے نہ صرف اسکیمیں چلا رہا ہے ، بلکہ ان کی مانیٹرنگ بھی کی جا رہی ہے۔

صرف یہی دو طالبات نہیں ہیں ، جنہوں نے وزارت کی مانس اسکیم کے تحت ٹریننگ حاصل کی تھی ، بلکہ اس سینٹر میں سینکڑوں طلبہ نے ایک سال پہلے 3 ماہ کی ٹریننگ لی تھی۔ اس وقت وزارت کا دعوی تھا کہ ان کو سرٹیفکیٹ بھی ملے گا اور کام بھی دیا جائے گا ، لیکن سال بھر گزرنے کے باوجود نہ تو ان کو سرٹیفکیٹ ہی مل پایا ہے اور نہ ہی کوئی کام ۔

مانس کے تحت مدرسوں، مکتبوں اور اقلیتوں کے اداروں کو اقلیتی امور کی وزارت کے ذریعے ترقیاتی پروگرام سے جوڑنے کی بات کی جاتی ہے۔ اس کا مقصد 'اسکل انڈیا کے پروگرام کو کامیاب بنانا ہے۔ لیکن وزیر اعظم کے خواب کو بھی یہ وزارت چکناچور کرنے میں پیچھے نہیں ہے۔

ناگلوئی میں اس کا ایک سینٹر واقع ہے ، جس کو عبدالواحد چلاتے تھے۔ عبدالواحد کا کہنا ہے کہ یہ سینٹر وزارت کی طرف سے انہیں نہیں دیا گیا تھا، بلکہ ان کو اسکل ٹری كنسلٹنگ نام کی کمپنی نے دیا تھا، جس کو اقلیتی وزارت نے سینٹر کھولنے کیلئے کہا تھا۔ عبدالواحد کا یہ بھی کہنا ہے کہ دیکھا جائے تو یہ بھی وزارت کی ہی ناکامی ہے کہ وہ اپنی ایجنسیوں کے کام پر بھی نظر نہیں رکھ رہی ۔

First published: Apr 21, 2016 11:41 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading