உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    معروف عالم دین مولانا عبدالعلیم بستوی کے انتقال پر مولانا محمد رحمانی کا اظہار تعزیت

    نئی دہلی۔ عربی اور اردو زبان میں بے شمار کتابوں کے مؤلف اور عالمی اسلامی ادارہ’’ رابطہ عالم اسلامی مکہ مکرمہ‘‘ کے  پلیٹ فارم سے تحقیق کا بے شمار کام کرنے والے معروف عالم دین مولانا عبدالعلیم بستوی رحمہ اللہ کل بروز سنیچر ہندوستانی وقت کے لحاظ سے تقریبا ڈھائی بجے دوپہرمکہ مکرمہ میں اپنی رہائش گاہ پر اس دار فانی سے کوچ کرگئے۔

    نئی دہلی۔ عربی اور اردو زبان میں بے شمار کتابوں کے مؤلف اور عالمی اسلامی ادارہ’’ رابطہ عالم اسلامی مکہ مکرمہ‘‘ کے پلیٹ فارم سے تحقیق کا بے شمار کام کرنے والے معروف عالم دین مولانا عبدالعلیم بستوی رحمہ اللہ کل بروز سنیچر ہندوستانی وقت کے لحاظ سے تقریبا ڈھائی بجے دوپہرمکہ مکرمہ میں اپنی رہائش گاہ پر اس دار فانی سے کوچ کرگئے۔

    نئی دہلی۔ عربی اور اردو زبان میں بے شمار کتابوں کے مؤلف اور عالمی اسلامی ادارہ’’ رابطہ عالم اسلامی مکہ مکرمہ‘‘ کے پلیٹ فارم سے تحقیق کا بے شمار کام کرنے والے معروف عالم دین مولانا عبدالعلیم بستوی رحمہ اللہ کل بروز سنیچر ہندوستانی وقت کے لحاظ سے تقریبا ڈھائی بجے دوپہرمکہ مکرمہ میں اپنی رہائش گاہ پر اس دار فانی سے کوچ کرگئے۔

    • Pradesh18
    • Last Updated :
    • Share this:

      نئی دہلی۔ عربی اور اردو زبان میں بے شمار کتابوں کے مؤلف اور عالمی اسلامی ادارہ’’ رابطہ عالم اسلامی مکہ مکرمہ‘‘ کے  پلیٹ فارم سے تحقیق کا بے شمار کام کرنے والے معروف عالم دین مولانا عبدالعلیم بستوی رحمہ اللہ کل بروز سنیچر ہندوستانی وقت کے لحاظ سے تقریبا ڈھائی بجے دوپہرمکہ مکرمہ میں اپنی رہائش گاہ پر اس دار فانی سے کوچ کرگئے۔انا للہ وانا الیہ راجعون۔  مولانا رحمہ اللہ علم دوست انسان تھے اور انہوں نے علم حدیث اور محدثین کی خدمات پر مایہ ناز کتابیں تحریر کی ہیں، ان کی اکثر تالیفات عربی زبان میں ہیں۔ مولانا نے دار العلوم ندوۃ العلماء لکھنؤ سے عا لمیت کی سند حاصل کی، پھر جامعہ سلفیہ بنارس تشریف لے گئے اور وہاں سے فضیلت کی سند حاصل کی، اس کے بعد اعلی تعلیم کے لئے جامعہ اسلامیہ مدینہ طیبہ کا رخ کیا اور وہاں سے لیسانس کی ڈگری لینے کے بعد جامعہ ام القری مکہ مکرمہ سے ایم، اے کیا اور جامعہ ازہر مصر سے پی،ایچ، ڈی کی ڈگری حاصل کی۔انہوں نے دسیوں کتابیں لکھیں اور دسیوں کانفرنسوں میں شرکت بھی کی۔


                  مولانا ایک طویل مدت سے مکہ مکرمہ میں رہائش پذیر تھے اور رابطہ عالم اسلامی سے منسلک تھے۔ والد محترم مولانا عبدالحمید رحمانی رحمہ اللہ سے ان کے گہرے اور دوستانہ تعلقات تھے، پانچ چھ سال قبل جب وہ ایک طویل مدت کے بعد ہندوستان تشریف لائے تو مولانا رحمانی رحمہ اللہ سے بالخصوص ملاقات کے لئے دہلی تشریف لائے تھے۔


                  ابوالکلام آزاد اسلامک اویکننگ سنٹر، نئی دہلی کے تمام متعلقین وذمہ داران ان کی وفات پر اپنے گہرے رنج وغم کا اظہار کرتے ہیں اور دعا گو ہیں کہ اللہ تعالی موصوف کے بچوں کی کفالت فرمائے اور پسماندگان کو صبر جمیل کی توفیق سے نوازے۔ پسماندگان میں دو لڑکے چھ لڑکیاں،پوتے پوتیاں،نواسے نواسیاں اور اہلیہ ہیں۔وفات کے وقت موصوف کی عمر تقریبا ستر سال تھی۔

      First published: