ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مولانا محمود مدنی کا وزیر اعلی کیجریوال کو خط ، دہلی فساد متاثرین کے معاوضہ میں اضافہ کا مطالبہ

خط میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ سکھ فساد 1984کے متاثرین کے معاوضہ سے متعلق دہلی ہائی کورٹ کے فیصلے کو اس سلسلہ میں بنیاد بنایا جائے اور معاوضہ میں معقول اضافہ کیا جائے ۔

  • Share this:
مولانا محمود مدنی کا وزیر اعلی کیجریوال کو خط ، دہلی فساد متاثرین کے معاوضہ میں اضافہ کا مطالبہ
مولانا محمود مدنی کا کیجریوال کو خط ، دہلی فساد متاثرین کے معاوضہ میں اضافہ کا مطالبہ

دہلی اقلیتی کمیشن کے ذریعہ چند روز قبل جاری کی گئی فیکٹ فائنڈنگ رپورٹ میں شمال مشرقی دہلی فساد متاثرین کو معاوضہ ملنے کو لے کر عدم اطمینان کا اظہار کیا گیا تھا تو وہیں اب جمعیت علما نے بھی متاثرین کو دیے جانے والے معاوضے کو ناکافی بتایا ہے ۔ جمعیت کی جانب سے سے دہلی حکومت کو خط بھیجا گیا ہے ۔ مولانا محمود مدنی کے ذریعہ بھیجے گئے خط میں لکھا گیا ہے کہ دہلی فساد متاثرین کو جو معاوضہ دیا جارہا ہے وہ ان کے نقصانات کے تناسب میں کم ہے، اس سلسلے میں سکھ فساد 1984 کے متاثرین کے معاوضہ سے متعلق دہلی ہائی کورٹ کے فیصلہ کو بنیاد بنایا جائے اور معاوضہ میں معقول اضافہ کیا جائے ۔


جمعیۃ علما ہند نے ریلیف و راحت کے دوران کیے گئے اپنے سرو ے کی روشنی میں معاوضے کی رقم کم ہونے کو لے کر نتیجہ اخذ کیا ہے ۔ جمعیۃ علما ہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی نے وزیر اعلی صوبہ دہلی اروند کیجریوال کو خط لکھ کر کہا ہے کہ آپ کی سرکار نے فساد متاثرین کی مدد کے سلسلہ میں جو جذبہ دکھلا یا ہے ، وہ قابل قدر ہے ۔ مگر ان کی باز آباد کاری کے لیے اعلا ن کیا گیا معاوضہ ناکافی ہے ۔ جمعیۃ علما ہند نے دہلی فساد متاثرین کی راحت رسانی وباز آباد کاری میں خاطرہ خواہ کردار ادا کیا ہے، اس کی ٹیم لگاتار پانچ ماہ سے وہاں کام کررہی ہے، اس کی یہ فائنڈنگ ہے کہ دہلی جیسے بڑے شہر میں اس معاوضہ سے لوگوں کے نقصانات کا تدار ک نہیں ہوسکتا ۔


واضح ہو کہ دہلی سرکار نے فساد میں جاں بحق ہونے والوں کے اہل خانہ کو دس لاکھ روپے دینے کا اعلان کیا ہے ۔ اسی طرح جن کے مکان فساد میں تباہ ہوگئے ہیں ، ان کو ہر رہائشی یونٹ کے لئے پانچ لاکھ دیا جائے گا ، جن کے مکان میں کافی نقصان ہوا ہے ، ان کو محض دو لاکھ روپے دیے جائیں گے اور ہلکے پھلکے نقصانات کے لیے پندرہ سے پچیس ہزار روپے طے کئے گئے ہیں ۔


ظاہر سی بات ہے کہ دہلی جیسے مہنگے شہر میں تباہ شدہ رہائشی یونٹ کے لئے پانچ لاکھ روپے اور مکانوں کے مرمت کے لیے پندرہ ہزار روپے ناکافی ہیں ۔ جب کہ آج سے سات سال قبل مظفرنگر فساد میں مرنے والوں کے اہل خانہ کو تیرہ لاکھ روپے دیے گئے تھے ، وہاں معاوضہ پانے والے گاؤں کے رہنے والے تھے ۔ ایسے میں دہلی فساد متاثرین کے لیے دیا جانے والا معاوضہ فی الواقع ناکافی ہے ۔ اس سلسلے میں وزیر اعلی دہلی کو فوری قدم اٹھاتے ہوئے معاوضہ کی رقم میں معقول اضافہ کرنا چاہئے ۔ ساتھ ہی سرکار کو معاوضہ کی ادائیگی میں تیزی لانی چاہئے ۔

اس سلسلے میں جمعیۃ علما ہند کا ایک وفد مولانا حکیم الدین قاسمی سکریٹری جمعیۃ علما ہند کی قیادت میں فساد زدہ علاقہ شمال مشرقی دہلی کے اے ڈی ایم سے بھی مل چکا ہے ۔ وفد میں مولانا داؤد امینی نائب صدر جمعیۃ علما صوبہ دہلی ، مولانا غیور قاسمی ، راشد پردھان اور جناب رمض الدین بھی شامل تھے۔ غور طلب ہے کہ دہلی حکومت کی طرف سے جو معاوضہ دینے کا اعلان کیا گیا ہے وہ اقلیتی کمیشن کے ذریعہ معاوضہ بڑھائے جانے کی سفارش کے بعد اضافہ شدہ معاوضہ ہے ورنہ یہ پہلے اور بھی کم تھا ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jul 20, 2020 10:57 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading