உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہم جنس پرستی تمام مذاہب اورملکی تہذیب کے خلاف قبیح عمل، حکومت نظرثانی کرے: محمد رحمانی مدنی

    مولانا محمد رحمانی مدنی ۔ فائل فوٹو

    مولانا محمد رحمانی مدنی ۔ فائل فوٹو

    مولانا محمد رحمانی نے کہا کہ ہم جنس پرستی عام ہونے سے ہماری اخلاقی سطح مجروح ہوگی اور اس سے بے حیائی اور بے شرمی عام ہوتی جائے گی۔

    • Share this:
      نئی دہلی: ابوالکلام آزاد اسلامک اویکننگ سنٹر کے صدرعمومی مولانا محمد رحمانی سنابلی مدنی نے سنٹر کی جامع مسجد ابوبکر صدیق، جوگابائی میں خطبۂ جمعہ کے دوران سپریم کورٹ کے حالیہ فیصلہ پر بھی تبصرہ کرتے ہوئے ہم جنس پرستی کو غیر انسانی اور ہندوستانی تہذیب نیز تمام مذاہب کے خلاف قرار دیتے ہوئے حکومت اور عدلیہ سے اس پر نظر ثانی کی اپیل کی۔

      انہوں نے کہا کہ اس سے ہماری اخلاقی سطح مجروح ہوگی اور اس سے بے حیائی اور بے شرمی عام ہوتی جائے گی۔ اس وجہ سے ایسے قبیح عمل پر ہمارے ذمہ داران کو نظر ثانی کرنی چاہئے۔

      مولانا محمد رحمانی مدنی نے کہا کہ دین اسلام کی ترویج، اس کی حفاظت اور اس کی بقا کے لئے صحابۂ کرام کا کردار سب سے عظیم تھا ، امت اسلامیہ کے وہ سب سے بڑے محسن تھے، ان لوگوں نے جنت کی بشارت مل جانے کے بعدبھی نیکی اور بھلائی کے کاموں میں بھر پور حصہ لیا اور اپنی جان ومال سب کچھ قربان کرڈالا۔ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم امت پران کے احسانات کویاد رکھیں اور ان کا احترام کریں نیز ان کے حقوق کی ادائیگی اور ان کے دفاع میں ہر قسم کی قربانی پیش کرنے کے لئے تیار رہیں۔

      انہوں  نے خلفائے راشدین کے فضل کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ غار حرا میں دو میں سے دوسرے تھے جبکہ ان دونوں کا تیسرا رب کائنات تھا، جس کا ذکر اللہ رب العالمین نے قرآن مجید میں کیا ہے۔ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ اللہ رب العالمین نے ایک شخص کو دین اور دنیا میں سے کسی ایک کو اختیار کرنے کا حکم دیا تو انہوں نے دین کو اختیار کیاتو ابوبکر یہ سن کر رو پڑے تو رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ اگر میں دنیا میں کسی کو اپنا خلیل بناتا تو ابوبکر کو بناتا۔

       یہ بھی پڑھیں: فارغین مدارس شرعی واجبات اوراخلاقی عظمت پرخصوصی توجہ دیں: محمد رحمانی مدنی

      انہوں  نے خلفائے راشدین کے فضائل کے تناظر میں محرم کے مہینہ میں کی جانے والے بدعات وخرافات کا تذکرہ کرتے ہوئے مسلمانوں سے دردمندانہ اپیل کی کہ صحابۂ کرام کی توہین سے توبہ کی جائے اور تعزیہ اور اس سے متعلق تمام رسوم ورواج کا بائیکاٹ کیا جائے کیونکہ ان چیزوں کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: کامیاب اور منظم زندگی کی ضمانت کے لئے وقت کی پابندی ضروری : مولانا محمد رحمانی مدنی

       
      First published: