ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ایکسکلوزیو: ڈوبتی ہوئی کشتی ہیں مایاوتی، بچنے کے لئے ڈھونڈ رہی ہیں مسلمانوں کا سہارا: نریندر مودی

نیوز 18 کو دئیے گئے ایکسکلوزیو انٹرویو میں وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ مایاوتی کی مجبوری ہے، اگر انہیں کیسے بھی بچنا ہے تو ادھر ادھر کر کے ووٹ مانگتی رہیں گی۔

  • Share this:
ایکسکلوزیو: ڈوبتی ہوئی کشتی ہیں مایاوتی، بچنے کے لئے ڈھونڈ رہی ہیں مسلمانوں کا سہارا: نریندر مودی
وزیر اعظم نریندر مودی


ایس پی۔ بی ایس پی اتحاد کے ذریعہ اترپردیش میں سیاسی زمین مضبوط کرنے میں مصروف بہوجن سماج پارٹی کی صدر مایاوتی پر وزیر اعظم نریندر مودی نے بڑا حملہ بولا ہے۔ نیوز 18 کو دئیے گئے ایکسکلوزیو انٹرویو میں وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ مسلسل شکست کے بعد مایاوتی مایوس ہو گئی ہیں۔ مایاوتی ڈوبتی ہوئی کشتی ہیں اور اب بچنے کے لئے مسلمانوں کا سہارا ڈھونڈ رہی ہیں۔


وزیر اعظم مودی نے کہا کہ مسلسل ہار کے بعد اسی طرح کی باتیں ہوتی ہیں۔ مایاوتی کی مجبوری ہے، اگر انہیں کیسے بھی بچنا ہے تو ادھر ادھر کر کے ووٹ مانگتی رہیں گی۔


کہاں چھپ گئے سیکولر جھنڈا لے کر گھومنے والے

نیوز 18  کو دئیے خصوصی انٹرویو میں وزیر اعظم نے مبینہ سیکولر لوگوں پر اپنا غصہ خوب نکالا۔ انہوں نے کہا کہ ’’ میری فکرمندی ملک میں 24 گھنٹے سیکولر جھنڈا لے کر گھومنے والوں سے ہے۔ ان کے منھ پر تالا کیوں لگ گیا ہے؟ اگر ایسی ہی بات کسی نے ہندو سماج کے لئے بول دی ہوتی تو نہ جانے ملک میں کتنی اٹھا پٹخ ہو جاتی۔ کتنے ایوارڈ واپسی والے نکل آتے؟ کتنی دستخطی مہم شروع ہو جاتی؟

پی ایم مودی نے سوال کیا کہ اب یہ جماعت خاموش کیوں ہے؟ اس کے ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ یہ جماعت ملک کے لئے تشویش کا موضوع ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسی جماعت کو ایکسپوز کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ جماعت اس طرح کی سلیکٹیو کیوں ہے؟ کیا اس سے ان کے سیکولرزم کو کوئی چوٹ نہیں پہنچتی؟ کیا یہ ان کے سیکولرزم کو بڑھاوا دینے والی چیز تھی؟

مایاوتی نے مسلمانوں سے کی تھی اپیل

اتوار کو سہارنپور کے دیوبند میں ایس پی۔ بی ایس پی اور آر ایل ڈی کی گٹھ بندھن ریلی سے خطاب کرتے ہوئے بی ایس پی صدر مایاوتی نے بی جے پی کے ساتھ ساتھ کانگریس پر بھی جم کر حملہ بولا تھا۔ مایاوتی نے کہا تھا کہ کانگریس مان کر یہ چل رہی ہے کہ ہم جیتیں یا نہ جیتیں، گٹھ بندھن نہیں جیتنا چاہئے۔ مایاوتی نے ریلی میں کہا ’’ میں مسلم سماج سے کہنا چاہتی ہوں کہ اگر بی جے پی کو ہرانا ہے تو جذبات میں بہہ کر ووٹ بانٹنا نہیں ہے‘‘۔

الیکشن کمیشن نے لیا نوٹس

بی ایس پی صدر مایاوتی کے اس بیان سے سیاسی گھمسان چھڑ گیا تھا۔ اس کے بعد الیکشن کمیشن نے پیر کے روز سہارنپور کے ڈی ایم سے رپورٹ مانگی تھی۔ اس رپورٹ کی بنیاد پر یہ دیکھا جائے گا کہ مایاوتی کا بیان کہیں ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی تو نہیں ہے؟ آپ کو بتا دیں کہ مثالی ضابطہ اخلاق کے مطابق، ذات اور مذہبی بنیاد پر ووٹ کی اپیل نہیں کی جا سکتی۔

 

 
First published: Apr 09, 2019 08:49 AM IST