உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مرسڈیزکار حادثہ کیس: باپ نے نہیں کی تھی ملزم بیٹے کو روکنے کی کوشش

    نئی دہلی۔ دہلی کے سول لائن میں ہوئے مرسڈیز کار حادثہ کیس میں پولیس آج نابالغ کار ڈرائیور کے والد کو تیس ہزاری کورٹ میں پیش کرے گی۔

    نئی دہلی۔ دہلی کے سول لائن میں ہوئے مرسڈیز کار حادثہ کیس میں پولیس آج نابالغ کار ڈرائیور کے والد کو تیس ہزاری کورٹ میں پیش کرے گی۔

    • IBN Khabar
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی۔ دہلی کے سول لائن میں ہوئے مرسڈیز کار حادثہ کیس میں پولیس آج نابالغ کار ڈرائیور کے والد کو تیس ہزاری کورٹ میں پیش کرے گی۔ کل پولیس نے نابالغ کار ڈرائیور کے والد منوج اگروال کو گرفتار کر لیا تھا۔

      پانچ اپریل کی رات ہوئے اس حادثے کی تحقیقات میں پولیس نے پایا کہ ملزم نابالغ لڑکے کے باپ نے اسے گاڑی چلانے سے روکنے کی کوئی کوشش نہیں کی تھی۔ پولیس نے منوج اگروال پر غیر ارادتا قتل اور غیر ارادتا قتل میں ملزم کا ساتھ دینے کی دفعات میں مقدمہ درج کیا ہے۔

      آج ملزم لڑکا 18 سال اور 1 دن کا ہو گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق پولیس آج اسے دوبارہ حراست میں لے گی اور پھر اسے جے جے بورڈ کے سامنے پیش کرے گی۔

      ملزم نابالغ 16 فروری کو بھی دہلی کے آئی پی کالج کے قریب ایک کار کو ہٹ کر بھاگ چکا ہے۔ ایک کار نے اس کا پیچھا کیا اور مورس نگر پر نابالغ کو پکڑا تھا۔ اس وقت بھی وہ اپنے والد کی ایک دوسری 3000 نمبر لکھی مرسڈيز کار چلا رہا تھا۔ وہیں جس کار نے اس بار حادثہ کیا ہے وہ 2015 میں ایکسیڈنٹ کر چکی ہے، اس کا چالان بھی ہو چکا ہے۔ (پولیس کے مطابق یہ نابالغ بہت شرارتی ہے)۔اس کیس میں باپ کی پوری جوابدہی ہے کہ اس نے اس نابالغ کو اتنی تیز رفتار سے چلنے والی کار چلانے کو کیوں دی۔

      بتا دیں کہ پیشے سے کنسلٹینٹ سدھارتھ شرما کی مرسڈیز حادثے میں موت ہو گئی تھی۔ حادثے کی سی سی ٹی وی فوٹیج میں صاف نظر آیا کہ تیز رفتار مرسڈیز نے کس طرح سے سدھارتھ کو ٹکر ماری جس کے بعد ان کی موت ہو گئی۔
      First published: