உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جامعہ ملیہ کے بعد اب دیگر اقلیتی ادارے بھی 10 فیصد ریزرویشن کو نافذ کرنے سے کرسکتے ہیں انکار

    جامعہ ملیہ اسلامیہ نےکیا داخلہ امتحانات کی تاریخ کا اعلان. فائل فوٹو

    جامعہ ملیہ اسلامیہ نےکیا داخلہ امتحانات کی تاریخ کا اعلان. فائل فوٹو

    جامعیہ ملیہ اسلامیہ پہلے ہی یو جی سی کے نوٹیفکیشن کا حوالہ دیتے ہوئے یونیورسٹی میں 10 فیصد ریزرویشن کو نافذ کرنے سے انکار کرچکا ہے اور اب دیگر اقلیتی ادارے بھی خود کو اقلیتی ادارہ بتاکر حکومت کی ریزرویشن پالیسی کو نافذ کرنے سے انکار کرسکتے ہیں ۔

    • Share this:
      مرکزی حکومت کے ذریعہ حال ہی میں اقتصادی طور پر کمزوروں کیلئے نافذ کئے گئے 10 فیصد ریزرویشن پر عمل کرنے سے اقلیتی ادارے منع کرسکتے ہیں ۔ جامعیہ ملیہ اسلامیہ پہلے ہی یو جی سی کے نوٹیفکیشن کا حوالہ دیتے ہوئے یونیورسٹی میں 10 فیصد ریزرویشن کو نافذ کرنے سے انکار کرچکا ہے اور اب دیگر اقلیتی ادارے بھی خود کو اقلیتی ادارہ بتاکر حکومت کی ریزرویشن پالیسی کو نافذ کرنے سے انکار کرسکتے ہیں ۔

      خیال رہے کہ حال ہی میں مرکزی حکومت کے ذریعہ نافذ کئے گئے اس ریزرویشن نظام کے تحت ایس سی ایس ٹی اور او بی سی ریزرویشن کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کئے بغیر الگ سے سیٹیں بڑھا کر اس کو نافذ کیا جانا تھا اور یو جی سی نے اس سلسلہ میں نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا ہے ، لیکن جامعہ ملیہ اسلامیہ نے یو جی سے کے نوٹیفکیشن کا حوالہ دیتے ہوئے 10 فیصد ریزرویشن کو نافذ کرنے سے انکار کردیا ۔

      جامعہ ملیہ اسلامیہ نے فروغ انسانی وسائل کی وزارت اور یو جی سی کو دلیل دی ہے کہ وہ آرٹیکل 30 کے تحت اقلیتی ادارہ ہے اور یو جی سی نوٹیفکیشن میں اقلیتی اداروں کو ریزرویشن سے الگ رکھا گیا ہے ۔ ایسے میں 10 فیصد ریزرویشن یونیورسٹی پر اپلیکیبل نہیں ہے ۔

      اقلیتی اداروں کے معاملات سے واسبتہ ماہرین بھی جامعہ ملیہ اسلامیہ کے اس قدم کو صحیح ٹھہرارہے ہیں ۔ نیشنل کمیشن فار مائناریٹی ایجوکیشن انسٹی ٹیوشن کے سربراہ رہ چکے جسٹس سہیل اعجاز نے بھی جامعیہ ملیہ کے اس قدم کو صحیح ٹھہرایا ہے ۔

      ملک میں ویسے تو ہزاروں کی تعداد میں اقلیتی ادارے ہیں ، لیکن صرف نیشنل کمیشن فار مائناریٹی ایجوکیشن انسٹی ٹیوشن کے ذریعہ اعلان کئے گئے اداروں کی تعداد ہی 13658 ہے ، جن میں 9 یونیورسیٹیاں بھی شامل ہیں ۔ ان یونیورسیٹیوں میں چھ مرکزی و ریاستی اور تین ڈیمڈ یونیورسیٹیاں شامل ہیں ۔
      First published: