ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

Mission Paani: اگر ہندستان میں صاف پانی ختم ہو گیا تو کیا ہوگا؟

اگر ہم پانی کی قلت کو کم کرنے اور صفائی ستھرائی کو فروغ دینے کے لئے کام نہیں کرتے ہیں تو پھر بہت سارے منفی اثرات مرتب ہوسکتے ہیں جو ہمارے شہریوں کی زندگیوں میں ڈے زیرو کی آمد سے پہلے دکھائی دیں گے۔

  • Share this:
Mission Paani: اگر ہندستان میں صاف پانی ختم ہو گیا تو کیا ہوگا؟
اگر ہم پانی کی قلت کو کم کرنے اور صفائی ستھرائی کو فروغ دینے کے لئے کام نہیں کرتے ہیں تو پھر بہت سارے منفی اثرات مرتب ہوسکتے ہیں

جب کسی ملک یا علاقے میں پانی ختم ہو جاتا ہے تو یہ ایک تاریخی تباہی ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ ہمارے ملک ہندوستان میں ہمیں کبھی بھی ایسی صورتحال کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا۔ اگر ایسا ہوا تو اس کا ہندوستان کو آپریٹ کرنے والے شہری اور سماجی ڈھانچے پر بھیانک اور خطرناک اثر اہوگا۔ خطرناک نتائج جو انتباہ کی طرف اشارہ کرنے کا کام کرتے ہیں۔ اور اس طرح کی آفت کو روکنے میں مدد کرتے ہیں۔ لیکن اس کے باوجود پانی کا بحران جیسے بڑھتا ہے اور ملک کے ایک بڑے حصے میں صفائی ستھرائی کا فقدان ہوتا ہے تو یہ ہمیں آگاہ کرتی ہے کہ وقت ہے سدھار کرلو۔ اگر ہم حالات کو بہتر بنانے میں ناکام رہے تو اس کے سنگین نتائج ہو ں گے۔


شہری۔دیہی کے درمیان تفریق پیدا ہونا۔۔


ہمارے آبی وسائل اور صفائی تک پہنچنے میں کمی کا ہمارے دیہی شہریوں پر منفی اثر پڑتا ہے۔ ان میں سے بیشتر اپنی روزی روٹی کے لئے زراعت پر انحصار کرتے ہیں۔ زراعت ایک ایسی صنعت ہے جو ڈے زیرو آنے پر ختم ہوجائے گا۔ اگر دیہی زندگی ختم ہوجاتی ہے تو اس سے پہلے ہی بھیڑ۔بھاڑ والے شہروں کی جانب بڑے پیمانے پر نقل مکانی ہوگی اور لاکھوں لوگ غریب ہوجائیں گے۔ اس سے عوام میں عدم اطمینان پیدا ہوگا۔


جیسا کہ ہر تباہ حال ملک کی کہانی میں یہ بتایا جاتا ہے کہ اس کے گھٹتے وسائل کی وجہ سے معاشرے میں بکھراؤ آ جاتا ہے۔ ایسا خاص طور پر ہندوستان میں ہوسکتا ہے۔ اگر ہندوستان میں مختلف گروہ کو پانی اور صفائی کے محدود وسائل کے لئے مقابلہ کرنے پر مجبور کیا جاتا ہے۔ ہندوستان کی Diversity جس پر ہمیں فخر ہے ایسی صورتحال میں تنازعات اور جدو جہد کا ذریعہ بن جائے گا۔ اس کے ساتھ اندرونی اختلافات پانی اور حفظان صحت کے موجودہ بحران کو حل کرنا مشکل بنا دے گا جس سے صورتحال مزید خراب ہوجائے گی۔

ہندوستان کی ترقی کا دارومدار عوام کی ترقی پسندی اور آسان امنگوں پر ہے۔ نوجوانوں کے ان خوابوں کو پورا کرنے کے لئے جو ان کی اور مجموعی طور پر ملک کی مدد کرتے ہیں ، نوجوانوں کو صاف پانی اور صفائی ستھرائی تک بلا روک ٹوک رسائی کی ضرورت ہے۔ اگر ڈی زیرو اس ملک کے نوجوانوں کو صحت مند ، زندگی کے مواقع پورے کرنے سے محروم رکھے تو ، اس سے ہندوستان کے معاشی مستقبل میں ناقابل واپسی کمی واقع ہوگی۔ اس کی وجہ سے صحت کی پریشانیوں کی وجہ سے ، وہاں پیسوں کا نقصان ہوگا اور اس سے ہندوستانیوں کی ایک بڑی تعداد سے امید یا امید ختم ہوجائے گی۔

بھارت کی ترقی پذیر لوگوں کی ترقی اور سادہ اندازوں پر بہت زیادہ تقاضا کیا جاتا ہے۔ نوجوانوں کی ان صافیوں کی تکمیل کے سلسلے میں جو ان کی اور پوری ملک کی مدد کرتا ہے ، نوجوانوں کو صاف پانی اور جاویدکچھ تک پہنچنے کی ضرورت ہے۔ اگر یہ جیرو اس ملک کے نوجوانوں کی خودمختاری ، پوری زندگی کے مواقع سے ونٹی کرنا چاہتے ہیں ، تو اس سے ہندوستان کے معاشی واقعات میں ایک غیر متوقع خطہ ہوگا۔ صحت سے متعلق پریشانیوں کی وجہ سے دھننی ہو گی اور اس سے بڑی تعداد میں ہندوستانیوں کو امید یا امید کی جاتی ہے۔

ہندستان کی ترقی لوگوں کی (Progressiveness) اور آسان امنگوں پر بہت زیادہ منحصر ہے۔ نوجوان کے اس خوابوں کو مکمل کرنے کیلئے جو ان کی اور پورے ملک کی ترقی میں مدد کرتے ہیں۔ نوجوانوں کو صاف پانی اور صفائی تک لامحدود پہنچ کی ضرورت ہوتی ہے۔ اگر ڈے زیرو کو اس ملک کے نوجوانوں کے صحت مند زندگی کے مواقع سے محروم کرنا تھا تو یہ ہندستان کے معاشی مستقبل میں ایک نا قابل تلافی گراوٹ کا سبب ہوگا۔ اس سے ہونے والی صحت سے جڑی مشکلات کے سبب پیسوں کا نقصان ہوگا اور یہ بڑی تعداد میں ہندستانیوں سے امید چھین لے گی۔

اگر ہم پانی کی قلت کو کم کرنے اور صفائی ستھرائی کو فروغ دینے کے لئے کام نہیں کرتے ہیں تو پھر بہت سارے منفی اثرات مرتب ہوسکتے ہیں جو ہمارے شہریوں کی زندگیوں میں ڈے زیرو کی آمد سے پہلے دکھائی دیں گے۔ یہاں تک کہ پانی اور صفائی ستھرائی کے لئے ہماری فراہمی میں اضافہ بھی لوگوں کی زندگیوں پر بڑا اثر ڈال سکتا ہے۔ ہمیں یہ فیصلہ کرنا چاہئے کہ ان تبدیلیوں کو ہمیشہ کے لئے کس طرح یقینی بنایا جائے۔

مشن پانی ، سی این این۔ نیوز 18 اور ہارپک انڈیا کی پہل ہے جو پانی کی قلت اور صفائی ستھرائی کے مسئلے کو حل کرنے کے لئے کام کر رہا ہے ، تاکہ ہر ہندوستانی شہری کو دونوں تک یکساں رسائی حاصل ہو۔ اس تاریخی تبدیلی کا حصہ بنیں ، اور پانی کی بچت اور حفظان صحت کو فروغ دینے کے لئے ایک جل پریگیہ لیں۔ www.news18.com/mission-pani ملاحظہ کریں۔
Published by: Sana Naeem
First published: Jan 23, 2021 10:28 PM IST