உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Modi@8: نوٹ بندی سے دفعہ 370 تک، وزیر اعظم نریندر مودی کے آٹھ قابل ذکر اقتباسات

    وزیر اعظم نریندر مودی

    وزیر اعظم نریندر مودی

    ’’جموں و کشمیر اور لداخ کے لوگوں کو ان کے حقوق سے محروم رکھا گیا۔ دفعہ 370 کی منسوخی کے ساتھ ہی سردار ولبھ بھائی پٹیل، بی آر کے خواب چکنا چور ہو گئے۔ امبیڈکر اور سیاما پرساد مکھرجی کی تکمیل ہوچکی ہے۔ جموں و کشمیر میں اب ایک نئے دور کا آغاز ہوا ہے‘‘۔

    • Share this:
      جمعرات 26 مئی 2022 نریندر مودی حکومت (Narendra Modi government ) کے آٹھ سال مکمل کر ہوچکے ہیں۔ اس تقریب کو منانے کے لیے ایک وسیع منصوبے پر کام کیا جا رہا ہے۔ ملک بھر میں تقریبات منعقد کی جائیں گی جس میں حکومت کی کامیابیوں کو پیش کیا جائے گا، جس میں غریبوں کے لیے فلاحی اسکیمیں اور 80 کروڑ لوگوں میں اناج کی مفت تقسیم شامل ہے۔

      اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ 2014 کے بعد حکومت کے ڈیلیوری میکانزم پر لوگوں کا اعتماد بحال ہوا ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے اپنی پارٹی کے کارکنوں سے ایک خطاب میں کہا کہ بی جے پی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کے آٹھ سال ملک کی متوازن ترقی، سماجی انصاف اور سماجی تحفظ کے لیے وقف ہیں۔

      اگر ایک چیز ہے جو مودی کے بطور وزیر اعظم دور میں مستقل رہی ہے، تو وہ ان کی تقریری مہارت ہے، جس نے ملک بھر میں ان کے حامیوں کو جیت لیا ہے۔

      نریندر مودی کے آٹھ سال پر نیوز 18 آپ کے لیے نوٹ بندی سے لے کر زرعی قوانین تک کے مسائل پر وزیر اعظم کے آٹھ اقتباسات پیش کرتا ہے:

      ہندوستان کو کچھ اور بننے کی ضرورت نہیں: ہندوستان کو صرف ہندوستان بننا چاہئے۔ یہ وہ ملک ہے جسے کسی زمانے میں سونے کی چڑیا کہا جاتا تھا۔

      نوٹ بندی: ملک کی تاریخ میں ایسے لمحات آتے ہیں جب ہر شخص کو لگتا ہے کہ اسے بھی اس لمحے کا حصہ بننا چاہیے، کہ اسے بھی ملک کی ترقی میں اپنا حصہ ڈالنا چاہیے۔ اب ہمارے پاس ایک بار پھر ایک موقع ہے جہاں ہر شہری بدعنوانی، کالے دھن اور جعلی نوٹوں کی برائیوں کے خلاف اس مہایجنا میں شامل ہو سکتا ہے۔

      کانگریس: بدقسمتی سے کچھ لوگوں کے ذہن 2014 میں اب بھی اٹکے ہوئے ہیں۔ اتنے نقصانات کے بعد بھی آپ کا غرور برقرار ہے اور آپ کا ماحولیاتی نظام اسے جانے نہیں دیتا۔ سوال انتخابی نتائج کا نہیں ان لوگوں کی نیت کا ہے جو اتنے عرصے تک اقتدار میں رہے۔ جہاں بھی لوگوں کو راستہ ملا، انہوں نے آپ کو دوبارہ داخل نہیں ہونے دیا۔ انہیں آئینہ نہ دکھاؤ وہ بھی آئینہ توڑ دیں گے۔ تنقید جمہوریت کا زیور ہے۔ لیکن جمہوریت کی توہین میں اندھی مخالفت نہ کی جائے۔

      دفعہ 370 : جموں و کشمیر اور لداخ کے لوگوں کو ان کے حقوق سے محروم رکھا گیا۔ دفعہ 370 کی منسوخی کے ساتھ ہی سردار ولبھ بھائی پٹیل، بی آر کے خواب چکنا چور ہو گئے۔ امبیڈکر اور سیاما پرساد مکھرجی کی تکمیل ہوچکی ہے۔ جموں و کشمیر میں اب ایک نئے دور کا آغاز ہوا ہے۔

      زرعی قوانین کی منسوخی: ہم وطن کے لوگوں سے معافی مانگتے ہوئے آج میں صدق دل سے کہنا چاہتا ہوں کہ شاید ہماری کوشش میں کوئی ایسی کمی رہ گئی ہو گی کہ ہم کسان بھائیوں کو چراغ کی روشنی کی طرح سچ نہیں بتا سکے (میں آج دیش واسیوں) سے معافی مانگتے ہوئے سچے من اور دل سے کہنا چاہتا ہوں کہ شاہد ہماری تپسیا میں ہی کوئی کامی رہ گئی ہوگی۔

      CoVID-19 ویکسین: 1 بلین ویکسین صرف ایک عدد نہیں ہے۔ یہ اس ملک کی صلاحیت کا عکاس ہے، یہ ملک کا ایک نیا باب ہے، ایک ایسا ملک جو بڑے اہداف کو حاصل کرنا جانتا ہے۔

      مزید پڑھیں: اسرائیل کے دورہ سے پاکستان میں سیاسی ہنگامہ، پاکستان کے کسی بھی وفد کا دورہ اسرائیل کی تردید

      کاشی وشوناتھ راہداری: حملہ آوروں نے اس شہر [وارنسی] پر حملہ کیا، اسے تباہ کرنے کی کوشش کی۔ تاریخ گواہ ہے اورنگ زیب کے دور میں مظالم کیے گئے تھے۔ اس نے تلوار کے ذریعے تہذیب کو بدلنے کی کوشش کی۔ اس نے جنونیت سے ثقافت کو کچلنے کی کوشش کی۔ لیکن اس ملک کی مٹی باقی دنیا سے مختلف ہے۔ یہاں اگر کوئی (مغل بادشاہ) اورنگ زیب آتا ہے تو ایک (مراٹھا جنگجو) شیواجی بھی اٹھتا ہے۔

      مزید پڑھیں: PICS:۔ 19 سال کے جوان بیٹے کے ساتھ صرف شرٹ پہن کر نکلی 48 سالہ ملائیکہ اروڑہ، یوزرس نے سنا ڈالی کھری کھوٹی، کہا : پینٹ پہننا بھول گئی کیا

      زبان کی صف: پچھلے کچھ دنوں میں ہم نے دیکھا ہے کہ زبانوں پر تنازعات کو ہوا دینے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ ہمیں لوگوں کو اس سے آگاہ کرنے کی ضرورت ہے۔ بی جے پی ہر علاقائی زبان میں ہندوستانی ثقافت کی عکاسی اور ملک کے بہتر مستقبل کی ایک کڑی دیکھتی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: