ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

مودی حکومت "ماسوکا" کے ذریعہ موب لنچنگ سے نمٹنے کی کررہی ہے تیاری

ملک میں موب لنچنگ پرقابو پانے کے لئے مرکزی کومت قانون میں تبدیلی پرغورکررہی ہے۔ اس کے لئے وزارت داخلہ آئی پی سی اورمجرمانہ سزا قانون میں تبدیلی کرکے تشدد اورمجرمین پرنکیل کسنے کی تیاری میں ہے۔

  • Share this:
مودی حکومت
علامتی تصویر

ملک میں بڑھتے ہوئے بھیڑکے تشدد (موب لنچنگ) پرقابو پانے کے لئے مرکزکی مودی حکومت قانونی تبدیلی پرغورکررہی ہے۔ اس کے لئے تعزیرات ہند (آئی پی سی) اورمجرمانہ سزا قانون میں تبدیلی کرکے تشدد اورمجرمین پرنکیل کسنے کی تیاری ہے۔


اس سمت میں آگے بڑھتے ہوئے مرکزی داخلہ سکریٹری راجیوگابا نے ایک مسودہ رپورٹ تیارکی ہے۔ گابا فی الحال اس کمیٹی کےغیررسمی صدر ہیں، جواس مدعے پرغورکررہی ہے۔ مسودہ رپورٹ میں اس بات کی سفارش کی گئی ہے کہ بھیڑکی تشدد کا جرم غیرضمانتی ہو، اس سے متعلق معاملہ کسی فاسٹ ٹریک عدالت میں چلایا جائے اورمتاثرشخص کو مرکزی فنڈ سے مالی مدد فراہم کی جائے۔


مرکزی وزارت داخلہ  کی یہ کمیٹی 23 جولائی کو بنائی گئی ہے، جس کی تشکیل کے لئے سپریم کورٹ نے احکامات جاری کیا تھا۔ انڈین ایکسپریس کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ گابا کی قیادت والی یہ کمیٹی 21 اگست کو بھیڑ کے تشدد سے متعلق رپورٹ وزرا گروپ کو سونپے گی۔


تین رکنی کمیٹی یوپی، جھارکھنڈ، بنگال، آسام، مدھیہ پردیش اور مہاراشٹر حکومت سے مسلسل رابطہ میں ہے اور ردعمل لے رہی ہے۔ انہیں ریاستوں میں تشدد کے زیادہ ترواقعات سامنے آئے ہیں۔ اس کمیٹی نے قانون اور نظم ونسق سے متعلق دیگر کئی حکام سے بھی رابطہ کیا ہے۔ تین رکنی کمیٹی الگ الگ ریاستی حکومتیں اس سوال پرغورکررہی ہیں کہ کیا انسانی سلامتی قانون (ماسوکا، ایم اے ایس یو کے اے) لاکربھیڑ کے تشدد سے نمٹا جاسکتا ہے۔

انڈین ایکسپریس کی رپورٹ کے مطابق اس کمیٹی میں مرکزی وزارت داخلہ کے جوائنٹ سکریٹری ایس سی ایل داس، پروین وششٹھ اور نارکوٹکس کنٹرول بیورو کے ڈائریکٹر جنرل ابھے شامل ہیں۔ مسودہ رپورٹ پڑھنے کے بعد مرکزی وزارت داخلہ کی کمیٹی قانونی تبدیلیوں اورضروری کارروائی پر فیصلہ کرے گی۔

حتمی رپورٹ تیار ہونے کے بعد اسے وزرا گروپ کو بھیجا جائے گا، جس کی قیادت مرکزی وزیرداخلہ راجناتھ سنگھ کررہے ہیں۔ وزرا گروپ کے دیگر ارکان میں وزیرخارجہ سشما سوراج، وزیرٹرانسپورٹ نتن گڈکری، وزیرقانون روی شنکرپرساد اورسماجی وسرکاری وزیر تھاور چند گہلوت شامل ہیں۔ اخیر میں یہ رپورٹ وزیراعظم نریندر مودی کوسونپی جائے گی۔

گزشتہ 17 جولائی کو موب لنچنگ کے واقعات کے خلاف سختی دکھاتے ہوئے سپریم کورٹ نے مرکزاورریاستی حکومت کواس کے لئے جوابدہ مانا تھا اوراس پرکنٹرول کرنے کے لئے سوشل میڈیا جیسے پلیٹ فارم پرنگرانی رکھنے کا حکم دیا تھا۔
First published: Aug 20, 2018 07:31 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading