ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

بیٹے کو پارٹی سے نکالتے وقت ملائم کے ہر لفظ میں دکھا درد ، پڑھیں ، کیا کیا کہا؟

ملائم سنگھ نے کہا کہ ہم نے پارٹی کو بچانے کے لئے دونوں کو 6 سال کے لئے باہر نکال دیا ہے۔ جب امیدوار کا اعلان کیا جاچکا ہے ، تو وزیر اعلی الگ سے امیدوار کیوں اعلان کر رہے ہیں۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Dec 30, 2016 07:36 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
بیٹے کو پارٹی سے نکالتے وقت ملائم کے ہر لفظ میں دکھا درد ، پڑھیں ، کیا کیا کہا؟
ملائم سنگھ نے کہا کہ ہم نے پارٹی کو بچانے کے لئے دونوں کو 6 سال کے لئے باہر نکال دیا ہے۔ جب امیدوار کا اعلان کیا جاچکا ہے ، تو وزیر اعلی الگ سے امیدوار کیوں اعلان کر رہے ہیں۔

نئی دہلی : سماجوادی پارٹی میں اس وقت هاهاكار مچی ہوئی ہے۔ سربراہ ملائم سنگھ نے آخر کار باغی تیور اختیار کرنے والے اپنے بیٹے اور یوپی کے وزیر اعلی اکھلیش یادو کو پارٹی سے 6 سال کے باہر نکال ہی دیا۔ ملائم نے پارٹی جنرل سکریٹری رام گوپال یادو کو بھی پارٹی سے بے دخل کر دیا ہے۔ دونوں کو نوٹس جاری کرنے کے کچھ ہی دیر بعد پریس کانفرنس کر کے ملائم نے اپنے سخت تیور دکھاتے ہوئے دونوں کو باہر کرنے کا اعلان کیا۔

پریس کانفرنس میں ملائم سنگھ نے کہا کہ ہم نے پارٹی کو بچانے کے لئے دونوں کو 6 سال کے لئے باہر نکال دیا ہے۔ جب امیدوار کا اعلان کیا جاچکا ہے ، تو وزیر اعلی الگ سے امیدوار کیوں اعلان کر رہے ہیں۔ ان دونوں کے خلاف کارروائی کے علاوہ میرے پاس کوئی اور راستہ نہیں بچا تھا۔ وزیر اعلی اگر پارٹی مخالف کام کرے گا ، تو کس طرح چلے گا،پارٹی ہماری ترجیح ہے، ہمارے لئے سماج وادی پارٹی ترجیح ہے، ہمیں سماج وادی پارٹی بچانا ہے۔

اس سے بڑی ڈسپلن شکنی نہیں ہو سکتی۔ رام گوپال اکھلیش کا مستقبل برباد کر رہے ہیں، وزیر اعلی سمجھ نہیں پا رہے ہیں، ہم نے ان کو وزیر اعلی بنایا، تاریخ میں کسی نے ایسا کیا کہ اپنے بیٹے کو وزیر اعلی بنا دیا، میری صحت خراب ہے کیا، ان لوگوں سے زیادہ دورہ کرتا ہوں۔

خصوصی اجلاس کے سوال پر انہوں نے کہا کہ ایک دن میں کیا اجلاس بلایا جا سکتا ہے؟ کم از کم 10 دن کا وقت دیا جاتا ہے، ہم سے پوچھا بھی نہیں، بتایا بھی نہیں، ایسا کیسے ہو گا، کس طرح ایک دن میں سب آ جائیں گے۔ شیو پال بھی رکن اسمبلی ہیں، انہیں بھی پتہ نہیں، تمام کارکنوں اور رہنماؤں سے اپیل ہے کہ اجلاس میں شامل نہ ہوں۔

خصوصی اجلاس ہم بھی بلاتے تو قومی مجلس عاملہ کی میٹنگ کرتے، نہ تو پارلیمنٹری بورڈ کی میٹنگ ہوئی اور نہ ہی مجلس عاملہ کی میٹنگ بلائی، ہم سے پوچھ لیتے کہ ہم پارلیمانی پارٹی کی میٹنگ بلانا چاہتے ہیں، انہوں نے انتخابات سے پہلے جان بوجھ کر ایسا کیا۔

First published: Dec 30, 2016 07:36 PM IST