உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    لوک سبھا انتخابات 2019: کانگریس کی حیثیت صرف دو سیٹوں کی ہے: ملائم سنگھ یادو

     لوک سبھا انتخابات 2019 کے لئے اترپردیش میں اتحاد کو لے کر سماجوادی پارٹی کے سابق قومی صدر ملائم سنگھ یادو نے ایک بڑا بیان دیا ہے۔  ملائم سنگھ یادو کے مطابق کانگریس کی حیثیت صرف دو سیٹوں کی ہے۔

    لوک سبھا انتخابات 2019 کے لئے اترپردیش میں اتحاد کو لے کر سماجوادی پارٹی کے سابق قومی صدر ملائم سنگھ یادو نے ایک بڑا بیان دیا ہے۔ ملائم سنگھ یادو کے مطابق کانگریس کی حیثیت صرف دو سیٹوں کی ہے۔

    لوک سبھا انتخابات 2019 کے لئے اترپردیش میں اتحاد کو لے کر سماجوادی پارٹی کے سابق قومی صدر ملائم سنگھ یادو نے ایک بڑا بیان دیا ہے۔ ملائم سنگھ یادو کے مطابق کانگریس کی حیثیت صرف دو سیٹوں کی ہے۔

    • Share this:
      لکھنو: 2019 کے لوک سبھا انتخابات میں اترپردیش میں اتحاد کو لے کر سماجوادی پارٹی کے سابق قومی صدر ملائم سنگھ یادو نے ایک بڑا بیان دیا ہے۔  ملائم سنگھ یادو کے مطابق کانگریس کی حیثیت صرف دو سیٹوں کی ہے۔ ملائم سنگھ 2019 کے لوک سبھا انتخابات میں کانگریس کے ساتھ اتحاد کرنے کے حق میں بھی نہیں ہیں۔

      ملائم سنگھ یادو نے دو ٹوک الفاظ میں کہا کہ سماجوادی اور بی ایس پی اتحاد میں کانگریس کونہیں شامل کیاجانا چاہئے۔ ان کے مطابق کانگریس کی حیثیت صرف دو سیٹوں کی ہے۔ حالانکہ ملائم سنگھ یادو نے سماجوادی پارٹی اور بہوجن سماج پارٹی کے اتحاد کی حمایت کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگر دونوں پارٹیاں ایماندار رہیں تو دہلی کی راہ آسان نہیں ہے۔

      غور طلب ہے کہ ریاست کی سیاست میں سماجوادی پارٹی اور  بی ایس پی کا اتحاد طے سمجھا جارہا ہے۔ گورکھپور اور پھولپور کے لوک سبھا کے ضمنی انتخابات میں دونوں ہی پارٹیوں نے اسے کامیابی کے ساتھ آزمایا بھی ہے۔ حالانکہ ابھی یہ طے نہیں ہے کہ  ایس پی اور بی ایس پی اتحاد میں کانگریس شامل ہوگی یا نہیں، لیکن ملائم سنگھ یادو نے واضح کردیا ہے کہ کانگریس کو اتحاد میں نہیں لیاجانا چاہئے۔

      قابل ذکر ہے کہ سال 2017 کے اسمبلی انتخابات میں بھی ملائم سنگھ یادو کانگریس سے اتحاد کے حق میں نہیں تھے، لیکن اکھلیش یادو نے کانگریس سے اتھاد کرکے الیکشن لڑا اور  نتائج مایوس کن ہی رہے۔

      دراصل سماجوادی پارٹی اور بی ایس پی رنر اپ فارمولے کے تحت سیٹوں کی تقسیم کرنا چاہتی ہیں، جس کے مطابق 2014 کے لوک سبھا الیکشن اور 2017 کے اسمبلی انتخابات میں جس پارٹی کے امیدوار نے جیت درج کی یا دوسرے نمبر پر رہے، اس سیٹ سے اسی پارٹی کا امیدوار میدان میں ہوگا، اس لحاظ سے کانگریس کو سات سے زیادہ سیٹیں نہیں ملیں گی، لیکن مہا گٹھ بندھن کی صورت میں قومی پارٹی ہونے کی وجہ سے کانگریس 20 سیٹوں کی مانگ کرسکتی ہے۔

       

       

       

       
      First published: