உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اب مسلم راشٹریہ منچ دہشت گردی کے خلاف مسلم نوجوانوں کی کرے گی ذہن سازی

    مسلم منچ کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کا بڑھتا رحجان ملک کے لئے خطرہ ہے ، جس سے نمٹنے کےلئے سماج میں بیداری پیدا کرنا ضروری ہے۔

    مسلم منچ کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کا بڑھتا رحجان ملک کے لئے خطرہ ہے ، جس سے نمٹنے کےلئے سماج میں بیداری پیدا کرنا ضروری ہے۔

    مسلم منچ کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کا بڑھتا رحجان ملک کے لئے خطرہ ہے ، جس سے نمٹنے کےلئے سماج میں بیداری پیدا کرنا ضروری ہے۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:
      لکھنؤ : مسلم نوجوانوں کودہشت گردی سے دور رکھنے کےلئے آرایس ایس کی سرپرستی میں مسلم راشٹریہ منچ ایک خصوصی مہم چلانے جا رہا ہے۔ مسلم منچ کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کا بڑھتا رحجان ملک کے لئے خطرہ ہے ، جس سے نمٹنے کےلئے سماج میں بیداری پیدا کرنا ضروری ہے۔ منچ کا دعویٰ ہے کہ مسلم نوجوانوں کی ذہن سازی کرکے انہیں دہشت گردی سے دوررکھا جاسکتا ہے لیکن سوال یہ اٹھتا ہے کہ جب دہشت گردی کسی ایک خاص مذہب کا مسئلہ نہیں ہے ، تو صرف مسلم نوجوانوں کی ہی ذہن سازی کی ضرورت کیوں ؟۔
      آرایس ایس سے وابستہ تنظیم مسلم راشٹریہ منچ یوں تو کافی وقت سے مسلمانوں کو اپنے قریب لانے کی کوشش کر رہی ہے۔ لیکن اس کو عام مسلمانوں کو بی جےپی یا آر ایس ایس سے نزدیک کرنے میں کامیابی نہیں ملی ہے۔ مگراب اس کی مہم میں مسلم نوجونوں کا دہشت گردی سے نمٹنے اور اس سے دور رہنے کیلئے ذہنی تربیت بھی شامل ہو گیا ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ داعش جیسی تنظیموں کےجال میں پھنس کرمسلم نوجوان گمراہ ہورہے ہیں ، جنھیں روکنا اس کی ذمہ داری ہے۔
      ادھر اترپردیش کے کابینی وزیر محمد اعظم خاں کا کہنا ہے کہ آرایس ایس کےقول وفعل پربھروسہ نہیں کیا جاسکتا۔ ان کا ماننا ہے کہ دہشت گردی سے نمٹنے کے لئے غیر سرکاری سطح پرکوئی بھی کوشش ہوگی ، توسماج میں خلفشار پیدا ہوگا۔
      First published: