உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اب مسجدوں میں نماز پڑھنے کی اجازت کے لئے سپریم کورٹ جانے کی تیاری میں مسلم خواتین

    مسجد : فائل فوٹو

    مسجد : فائل فوٹو

    نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے زہرہ نے کہا کہ عدالت میں جانے کے فیصلے کی اہم وجہ ہے مسجدوں میں " لنگ بھید" ( جینڈر بھید بھاؤ ) ۔ بتادیں سنی مسجدوں میں خواتین کو نماز پڑھنے کی اجازت نہیں دی جاتی ہے۔

    • Share this:
      کیرالہ کی سبریمالا مندر میں خواتین کے داخلہ کو لیکر سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اب مسلم خواتین  نے سنی مسجدوں میں داخلہ کا مطالبہ کیا ہے۔ کیرالہ میں واقع مسلم خواتین کی تنظیم اسے لیکر سپریم کورٹ جانے کی تیاری میں ہے۔ مسلم خواتین فارم این آئی ایس اے نے فیصلہ کیا ہے کہ سنی مسجد میں خواتین کے داخلے کو لیکر سپریم کورٹ جائے گا۔ نیسا صدر وی پی زہرہ نے کہا ہے کہ ان کی تنظیم اگلے ہفتے سپریم کورٹ میں عرضی دائر کرے گی۔

      نیوز 18 سے بات کرتے ہوئے زہرہ نے کہا کہ عدالت میں جانے کے فیصلے کی اہم وجہ ہے مسجدوں میں " لنگ بھید" یعنی ( جینڈر بھید بھاؤ )  ۔ بتادیں سنی مسجدوں میں خواتین کو نماز پڑھنے کی اجازت نہیں دی جاتی ہے۔

      زہرہ نے کہا ، " میں برابری کے حق کے تحت یہ کر رہی ہوں ۔  سنی مسجدوں کے اندر خواتین کو نماز پڑھنے کی اجازت نہیں دی گئی  جبکہ انہیں بھی حق ہے۔ پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے وقت پر بھی خواتین مسجدوں میں نماز کے لئے جایا کرتی تھیں'۔

      واضح ہو کہ سپریم کورٹ نے 28 ستمبر کو سبھی عمر کی خواتین کیلئے سبریمالا مندر کے دروازے کھول دئے تھے۔ عدالت نے اسے بھید بھاؤ کا ایک طور طریقہ بتایا تھا۔

      این آئی ایس اے چیف نے بدھ کو کہا کہ وکیل وینکتا سبرا منیم اس ہفتے یا اگلے ہفتے مسلم خواتین کی عرضی سپریم کورٹ میں دائر کریں گی۔
      First published: