உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نمازکو طاقت کامظاہرہ نہیں بنناچاہیے، پٹودی میں کرسمس میں خلل افسوسناک: Manohar Lal Khattar

    اگر کسی کو کسی تقریب پر کوئی مسئلہ ہو تو وہ یا تو تقریب سے پہلے بتائے یا تقریب کے بعد احتجاج درج کرائے ۔

    اگر کسی کو کسی تقریب پر کوئی مسئلہ ہو تو وہ یا تو تقریب سے پہلے بتائے یا تقریب کے بعد احتجاج درج کرائے ۔

    پٹودی کے ایک پرائیویٹ اسکول میں جہاں کرسمس کی تقریبات روک دی گئی اس واقعے کے بارے میں بات کرتے ہوئے ہریانہ کے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ اس طرح کے واقعات افسوسناک ہیں۔

    • Share this:
      ہریانہ کے وزیر اعلیٰ منوہر لال کھٹر (Manohar Lal Khattar) نے جمعرات کو کہا کہ نماز کو طاقت کا مظاہرہ نہیں بننا چاہیے۔ انہوں نے اس واقعہ کو بدقسمتی قرار دیا جب پٹودی کے ایک اسکول میں کرسمس کی تقریبات میں خلل پڑا تھا۔ اس سے قبل کہا گیا تھا کہ کھلے میں نماز پڑھنا ان کی انتظامیہ برداشت نہیں کرے گی۔

      قومی دارالحکومت میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے بھارتیہ جنتا پارٹی کے رہنما نے کہا کہ ان کی انتظامیہ مسلم اور ہندو دونوں برادریوں سے بات کر کے نماز کے تنازع کو حل کر رہی ہے۔ گروگرام میں مسلمانوں کی جانب سے کھلے میں نماز ادا کرنے کے دوران کشیدگی کے حالیہ واقعات کا جواب دیتے ہوئے کھٹر نے کہا کہ انتظامیہ اس بات پر کام کر رہی ہے کہ نماز کہاں ادا کی جائے۔ نماز کو صرف نماز تک محدود رکھنا چاہیے۔ اسے طاقت کا مظاہرہ نہ بنایا جائے۔ نماز پڑھنا ایک نجی اور مذہبی مسئلہ ہے۔ گھر، مسجد یا عیدگاہ میں کیا جا سکتا ہے۔ اگر وہ کھلے عام کرنا چاہتے ہیں تو انتظامیہ کی اجازت سے کرنا چاہیے۔ یہ سب پر لاگو ہوتا ہے، چاہے وہ سکھ، ہندو، عیسائی یا مسلمان ہو‘‘۔

      پٹودی کے ایک پرائیویٹ اسکول میں جہاں کرسمس کی تقریبات روک دی گئی اس واقعے کے بارے میں بات کرتے ہوئے ہریانہ کے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ اس طرح کے واقعات افسوسناک ہیں۔

      انھوں نے کہا کہ اس طرح کے اقدامات کی حمایت کرنے کی کوئی وجہ نہیں ہے۔ اگر کسی کو کسی تقریب پر کوئی مسئلہ ہو تو وہ یا تو تقریب سے پہلے بتائے یا تقریب کے بعد احتجاج درج کرائے ۔ لوگوں کو مل بیٹھ کر بحث کرنی چاہیے۔ اسی وجہ سے امن کمیٹیاں ہیں۔ اس طرح کے واقعات ماضی میں بھی ہوتے رہے ہیں لیکن ہمیں یہ یقینی بنانا چاہیے کہ وہ مستقبل میں رونما نہ ہوں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: