உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    استعفی کے بعد سدھو نے کہا : مزید نہیں ڈھو سکتا تھا بوجھ ، عام آدمی پارٹی میں ملے گا بڑا رول ، کانگریس نے لی چٹکی

    میں نے وزیر اعظم کے کہنے پر پنجاب کی ترقی کے لئے راجیہ سبھا کی سیٹ قبول کی تھی ۔ مگر پنجاب کی ترقی کے سارے راستے بند ہونے کے بعد یہ میرے لئے اب بوجھ بن گیا تھا ، جس کے بعد میں نے اس بوجھ کو مزید نہیں ڈھونے کا فیصلہ کیا ۔

    میں نے وزیر اعظم کے کہنے پر پنجاب کی ترقی کے لئے راجیہ سبھا کی سیٹ قبول کی تھی ۔ مگر پنجاب کی ترقی کے سارے راستے بند ہونے کے بعد یہ میرے لئے اب بوجھ بن گیا تھا ، جس کے بعد میں نے اس بوجھ کو مزید نہیں ڈھونے کا فیصلہ کیا ۔

    میں نے وزیر اعظم کے کہنے پر پنجاب کی ترقی کے لئے راجیہ سبھا کی سیٹ قبول کی تھی ۔ مگر پنجاب کی ترقی کے سارے راستے بند ہونے کے بعد یہ میرے لئے اب بوجھ بن گیا تھا ، جس کے بعد میں نے اس بوجھ کو مزید نہیں ڈھونے کا فیصلہ کیا ۔

    • Pradesh18
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی : بی جے پی کے لیڈر نوجوت سنگھ سدھو نے راجیہ سبھا کی رکنیت سے استعفی دے دیا ہے۔ استعفی کے بعد سدھو عام آدمی پارٹی میں شامل ہوسکتے ہیں۔ عام آدمی پارٹی نے جہاں سدھو کو خیر مقدم کہا ہے وہیں کانگریس نے بی جے پی کے داخلی رسہ کشی پر چٹکی لی ہے۔
      استعفی دینے کے بعد نوجوت سنگھ سدھو نے کہا کہ میں نے وزیر اعظم کے کہنے پر پنجاب کی ترقی کے لئے راجیہ سبھا کی سیٹ قبول کی تھی ۔ مگر پنجاب کی ترقی کے سارے راستے بند ہونے کے بعد یہ میرے لئے اب بوجھ بن گیا تھا ، جس کے بعد میں نے اس بوجھ کو مزید نہیں ڈھونے کا فیصلہ کیا ۔ ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ صحیح اور غلط کی جنگ میں آپ غیر جانبدار نہیں رہ سکتے۔ میرے لئے پنجاب کا مفاد بہت اوپر ہے۔
      استعفی کے بعد نوجوت سنگھ سدھو اپنی ممبر اسمبلی اہلیہ کے ساتھ عام آدمی پارٹی میں شامل ہو سکتے ہیں۔ پارٹی کے سینئر لیڈر سنجے سنگھ تقریبا اس بات کی تصدیق کردی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نوجوت سنگھ سدھو نے بی جے پی کی ریاستی اسمبلی رکنیت سے استعفی دے کر جرات مندانہ قدم اٹھایا ہے، ان کے فیصلے کا خیر مقدم کرتا ہوں۔سنجے نے کہا کہ سدھو ایک بڑا چہرہ ہیں اور انہیں پارٹی میں بڑا رول دیا جائے گا۔
      ادھر سدھو کے استعفی کے بعد بی جے پی میں افراتفری مچ گئی ہے۔ بی جے پی کے پنجاب انچار ج پربھات جھا نے ریاستی صدر وجے سمپلا سے ہنگامی میٹنگ کی۔ تاہم ذرائع کا کہنا ہے کہ ریاستی بی جے پی کو فی الحال سدھو کے استعفی دینے کی اطلاع نہیں ہے۔
      دوسری طرف کانگریس سدھو کے استعفی کے بعد بی جے پی کی اندرونی جنگ پر اب چٹکی لینی شروع کردی ہے۔ کرکٹر سے سیاستداں بنے سدھو پنجاب میں بی جے پی کا بڑا چہرہ تھے اور حال ہی میں بی جے پی نے انہیں راجیہ سبھا میں نامزد کیا تھا۔پنجاب اسمبلی انتخابات سے پہلے سدھو کے اس قدم کو بی جے پی کے لئے بڑا جھٹکا مانا جا رہا ہے۔
      First published: